وفاقی وزیر علی زیدی مشکوک پس منظر رکھنے والے قریبی دوستوں کو اعلیٰ عہدے دلوا رہے ہیں: رؤف کلاسرا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

سینئر صحافی رؤف کلاسرا نے وفاقی وزیر علی زیدی پر دوستوں کو نوازنے کے سنگین الزامات لگائے ہیں۔ انہوں نے پے در پے ٹویٹس میں بتایا ہے کہ علی زیدی اپنے دوستوں کو وزیراعظم عمران خان سے ملوا رہے ہیں اور انہیں مرضی کی جگہوں پر ایڈجسٹ کروا رہے ہیں۔ رؤف کلاسرا نے بتایا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کو نہیں پتہ کہ وفاقی وزیر علی زیدی انہیں اپنے کن کن دوستوں سے ملا رہے ہیں اور انہیں کہاں ایڈجسٹ کرا رہے ہیں اور ان سب کا بیک گراونڈ کیا ہے؟

رؤف کلاسرا نے ان لوگوں کے نام بھی بتائے ہیں جنہیں مبینہ طور پر علی زیدی نے اہم ذمہ داریاں دلوائیں۔ ان میں علی جیمل، عاطف رئیس اور شہباہت علی شاہ شامل ہے۔ رؤف کلاسرا نے ایک اور ٹویٹ میں بتایا کہ علی زیدی کا ایک دوست علی جیمل ہے جو کچھ عرصہ قبل ایف بی آر کے دو ارب ٹریکر اسکینڈل کا مرکزی کردار تھا۔علی زیدی نے اسے پورٹ قاسم اتھارٹی بورڈ کا ممبر لگایا ہے۔ بورڈ کی سرپرستی میں پانچ ایل این جی ٹرمینل لگائے جا رہے ہیں۔

رؤف کلاسرا نے مزید سوال کیا کہ کیا وفاقی وزیر علی زیدی نے وزیراعظم کو بتایا تھا وہ جس ذاتی دوست عاطف کو ان کے ساتھ چین لے کر جا رہے ہیں اس پر ایف آئی اے نے سکینڈل میں مقدمہ درج کر رکھا ہے؟ کیا عاطف نے پشاور میٹرو کا 84 ملین ڈالرز کنٹریکٹ لیتے وقت متعلقہ اتھارٹی کو بتایا تھا ان پر پہلے سے ایف آئی اے میں فراڈ کا مقدمہ چل رہا تھا؟ سینئر صحافی نے بتایا کہ علی زیدی کے دوست عاطف کی فرم کو پشاور میٹرو کا 84 ملین ڈالر کا کنٹریکٹ مل گیا۔ اسی عاطف پر ایف ائی اے نے سکینڈل فراڈ کی ایف آئی آر کاٹ رکھی ہے۔

رؤف کلاسرا نے سوال کیا کہ وفاقی وزیر علی زیدی نےمشکوک بیک گراونڈ کے لوگوں کو پورٹ قاسم اتھارٹی کے بورڈ کا ممبر کیوں لگوایا ہے خصوصاً جب وہ وہاں پانچ ایل این جی ٹرمینل بھی اسی بورڈ کی مدد سے لگوا رہے ہیں؟ پہلے ٹریکر سکینڈل کے کردار علی جیمل کو لگایا پھر ظفر مسعود کو لگوایا۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •