مجھے چرچ لے جاؤ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

آج ساؤتھ ایشین ومن فزیشن کے گروپ میں ‌ ایک لیڈی ڈاکٹر نے افسوسناک خبر بتائی کہ ان کے 31 سالہ بھتیجے نے خود کشی کرلی۔ وہ انڈیا کے ایک مالدار گھرانے کا اکلوتا بیٹا تھا جس کو انہوں ‌ نے اپنی اقدار کے ساتھ پالا تھا۔ اس کو انہوں ‌ نے پڑھنے کے لیے امریکہ بھیجا جہاں اس نے بزنس میں ‌ ماسٹرز کی ڈگری لی۔ 20 سال کی عمر کے بعد اس نے اپنے ماں باپ کو بتایا کہ وہ ہم جنس پسند ہے لیکن انہوں ‌ نے اس کو خاموش رہنے کی تاکید کی اور ”نارمل“ رہنے کا مشورہ دیا۔ انہوں ‌ نے انڈیا میں ‌ ایک لڑکی سے اس کی شادی کی۔ جب وہ لڑکی اپنے شوہر کے ساتھ رہنے کے لیے امریکہ منتقل ہوگئی تو اس کے آنے کے ایک سال کے بعد اس لڑکے نے اس دہری زندگی سے تنگ آکر خودکشی کرلی۔ ماں باپ کی اولاد چھن گئی اور اس لڑکی کا شوہر۔

ان لیڈی ڈاکٹر نے گروپ سے یہ سوال کیا کہ کیا ان کے دل میں ‌ اپنے بچوں ‌ کو قبول کرنے کی جگہ اور محبت ہے جو اس طرح اقلیتی نارمل ہیں؟

ہم سب میگزین نے میرا ہم جنس پرستوں سے متعلق ایک پرانا مضمون دوبارہ سے شایع کیا تو اس سے متعلق مجھے کچھ پیغامات موصول ہوئے۔ کچھ لعنت ملامت والے اور کچھ میرے کاندھے پر سر رکھ کر رونے والے ان لوگوں ‌ کی طرف سے جن کی زندگی پدرانہ معاشرے کی مصنوعی صنفی اور جنسی تقسیم نے تباہ کی ہے۔ سب سے بحث یا گفت وشنید مشکل ہے، اس لیے سب کو انفرادی جواب دینے کے بجائے ہوزیر کا 2013 میں ‌ گایا ہوا ٹیک می ٹو چرچ ان سب لوگوں ‌ کے لیے ترجمہ کررہی ہوں جو کہ مندرجہ ذیل ہے۔

اس گانے کی آفیشل وڈیو ایک نوجوان ہم جنس پسند روسی جوڑے کی زندگی کے گرد گھومتی ہے جسے ایک ہجوم نے تشدد کا نشانہ بنایا۔ طاقت ور شاعری سے انسانی المیے پر روشنی پڑتی ہے۔

میری محبوبہ میں ‌حس مزاح ہے
وہ میت میں ‌ایک دبی دبی سی ہنسی ہے
اس کو سب کی ملامت کی خبر ہے
مجھے اس کی بہت پہلے سے ہی عبادت کرنی چاہیے تھی

اگر جنتیں ‌ کبھی بات کرتیں
تو وہ آخری سچی زبان ہے
ہر اتوار مزید تاریک ہوتا جارہا ہے
ہر ہفتے ایک نیا زہر
”تم بیمار پیدا ہوئے تھے“ تم نے انہیں کہتے سنا ہوگا

میرا چرچ کچھ بھی یقینی پیش نہیں کرتا
وہ کہتی ہے کہ خواب گاہ میں ‌عبادت کرو
جس واحد جنت میں میں ‌بھیجا جاؤں گا
وہ تب ہے جب میں ‌ تمہارے ساتھ تنہا ہوں

میں بیمار پیدا ہوا تھا لیکن مجھے اس سے لگاؤ ہے
حکم دو کہ میں ‌ اچھا ہوجاؤں
آمین آمین آمین
مجھے چرچ لے جاؤ

میں ‌ ایک کتے کی طرح‌ تمہارے جھوٹ کے مینار کی عبادت کروں گا
میں ‌ تمہیں اپنے گناہ بتاؤں گا اور تم اپنے خنجر تیز کرسکتے ہو
مجھے بے موت ہی موت دے دو
اچھے خدا! مجھے اپنی زندگی تمہیں ‌ دے دینے دو
مجھے چرچ لے جاؤ

میں ‌ ایک کتے کی طرح‌ تمہارے جھوٹ کے مینار کی عبادت کروں گا
میں ‌ تمہیں اپنے گناہ بتاؤں گا اور تم اپنے خنجر تیز کرسکتے ہو
مجھے بے موت ہی موت دے دو
اچھے خدا! مجھے اپنی زندگی تمہیں ‌ دے دینے دو
اگر میں ‌ اچھے وقتوں کا پجاری ہوں
میری محبوبہ سورج کی روشنی ہے

دیوی کو میری طرف دار رکھنے کے لیے
وہ قربانی مانگتی ہے
سمندر کو خالی کردینے کی
کچھ چمکتا لانے کی
طعام کے لیے کچھ گوشت

وہ کافی اچھا دکھائی دینے والا گھوڑا ہے
تمہارے اصطبل میں ‌ کیا ہے؟
ہمارے یہاں بہت سارے بھوکے ایمان والے ہیں
وہ بہت مزیدار لگ رہا ہے
وہ کافی مقدار میں بھی ہے
یہ بھوک کا کام ہے
مجھے چرچ لے جاؤ

میں ‌ ایک کتے کی طرح‌ تمہارے جھوٹ کے مینار کی عبادت کروں گا
میں ‌ تمہیں اپنے گناہ بتاؤں گا اور تم اپنے خنجر تیز کرسکتے ہو
مجھے بے موت ہی موت دے دو
اچھے خدا! مجھے اپنی زندگی تمہیں ‌ دے دینے دو
مجھے چرچ لے جاؤ

جب رسم شروع ہوجائے تو نہ کوئی مالک ہوتا ہے نہ ہی بادشاہ
ہمارے نرم گناہوں سے زیادہ میٹھی کوئی معصومیت نہیں
اس اداس دھرتی کے منظر کے پاگل پن میں
تبھی میں ‌ ایک انسان ہوں
اور تبھی میں ‌ پاک ہوں
آمین آمین آمین
مجھے چرچ لے جاؤ

میں ‌ ایک کتے کی طرح‌ تمہارے جھوٹ کے مینار کی عبادت کروں گا
میں ‌ تمہیں اپنے گناہ بتاؤں گا اور تم اپنے خنجر تیز کرسکتے ہو
مجھے بے موت ہی موت دے دو
اچھے خدا! مجھے اپنی زندگی تمہیں ‌ دے دینے دو
مجھے چرچ لے جاؤ

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •