عمران خان اور ٹرمپ میں دوسری ملاقات کیوں نہیں ہو سکی؟ سلیم صافی کا انکشاف

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

سینئر تجزیہ کار سلیم صافی نے وزیراعظم عمران خان اور امریکی صدر کی دوسری ملاقات منسوخ ہونے سے متعلق انکشاف کیا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کی امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے دو ملاقاتیں ہونا تھیں، لیکن پھر دوسری ملاقات کیوں نہ ہوسکی؟ دراصل ٹرمپ نے ہمارے لوگوں کو بتا دیا تھا کہ میں نے مودی سے بات کر لی ہے۔ مودی غصے میں ہے، وہ کچھ بھی واپس نہیں کرنا چاہتا۔

سلیم صافی نے نجی ٹی وی کے پروگرام میں میزبان محمد مالک سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ میں اندر کی خبر دے رہا ہوں جو مجھے میرے ذرائع نے دی ہے۔ پہلے تو کہا جا رہا تھا کہ وزیراعظم عمران خان کی صدر ٹرمپ سے دو ملاقاتیں ہوں گی لیکن پھر دوسری ملاقات کیوں نہ ہو سکی؟ سلیم صافی نے کہا کہ ٹرمپ نے ہمارے لوگوں کو بتا دیا تھا کہ میں نے مودی سے بات کر لی ہے۔ مودی غصے میں ہے، وہ کچھ بھی واپس نہیں کرنا چاہتا۔

اب چین، ترکی اور ملائیشیا کا تو پہلے بھی کشمیر کے بارے یہی موقف تھا۔ سلیم صافی نے بتایا کہ ٹرمپ نے اپنی 34 منٹ کی تقریر میں پاکستان اور انڈیا کا ذکر تک نہیں کیا۔ انہوں نے کہا کہ دوسرا ہمارے ایجنڈے میں تھا کہ ہم ٹرمپ کو افغان طالبان سے مذاکرات پر دوبارہ امادہ کر لیں گے لیکن میری معلومات کے مطابق ٹرمپ طالبان پر بڑے غصے میں تھے۔ انہوں نے اس پر کوئی آمادگی ظاہر نہیں کی۔

لہذا ہمارے دو بڑے مطالبات پر تو ابھی تک کچھ بھی نہیں ہوا ہے۔ وزیراعظم نے اندرون ملک رائے عامہ کے پیش نظر جارحانہ تقریر بھی اسی لیے کی تھی۔ انہوں نے اپنے وفد کے ارکان کو بتایا ہے کہ ان کو اپنی ملاقاتوں میں کوئی اچھا رسپانس نہیں ملا۔ لیکن اس سب کے باوجود وزیراعظم عمران خان نے اچھے طریقے سے کشمیر کا معاملہ پیش کیا۔ بھارت کو خوب سنائی ہیں۔ لیکن اگر نتائج دیکھیں تو ویسے ہی ہیں، جیسے کشمیر میں پہلے کرفیو تھا، آج بھی ہے۔ ٹرمپ نے مودی کے جلسے میں شرکت کی اور وہاں بھارت کے کشمیر کے ساتھ الحاق پر تالیاں بجائی گئیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •