جہانگیر ترین نے مجھے پارٹی آئین میں تبدیلی پر مجبور کیا: پی ٹی آئی کے ایڈیشنل سیکرٹری جنرل ابو حسن مستعفی

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

پاکستان تحریک انصاف کے مرکزی ایڈشنل سیکرٹری جنرل ابو حسن انصاری نے پارٹی عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ ابو حسن انصاری نے یہ فیصلہ پارٹی کے سابق سیکرٹری جنرل جہانگیر ترین کے ساتھ پارٹی آئین کے معاملے پر اختلافات کے بعد کیا۔ اطلاعات کے مطابق ابو حسن انصاری پاکستان تحریک انصاف کے 2019ء کے آئین کے مصنف ہیں۔

جہانگیر ترین، جو پارٹی میں کوئی عہدہ نہیں رکھتے، ابو حسن انصاری کو اپنی ہدایات کے مطابق کی جانب سے پارٹی آئین میں تبدیلی کرنے پر مجبور کیا رہے تھے۔ جہانگیر ترین اور ابو حسن انصاری کے درمیان حال ہی میں کئی پارٹی میٹنگز میں تلخ کلامی بھی ہوئی۔ ذرائع کا دعویٰ ہے کہ ابو حسن انصاری کا کہنا ہے کہ جہانگیر ترین نے پاکستان تحریک انصاف کو ٹیک اوور کر لیا ہے۔

ابو حسن انصاری کا کہنا ہے کہ اگرچہ جہانگیر ترین نے پارٹی پر بہت سارا پیسہ لگایا ہے لیکن ہم نے بھی پارٹی کو وقت اور پیسہ دیا ہے۔ ابو حسن انصاری نے جہانگیر ترین سے اختلافات کے بعد اپنا استعفیٰ پارٹی کے چیف آرگنائزر سیف اللہ نیازی کو پیش کر دیا۔ تاہم اس استعفے پر تاحال کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا۔ ذرائع نے بتایا کہ وزیراعظم عمران خان نے دورہ چین سے واپسی تک پارٹی ممبران کو اس معاملے پر کوئی فیصلہ کرنے سے روک دیا ہے۔

جہانگیر ترین پاکستان تحریک انصاف میں بہت زیادہ اثر و رسوخ رکھتے ہیں۔ جہانگیر ترین کو پارٹی عہدہ نہ ہونے کے باوجود پارٹی میٹنگز میں شرکت کے لیے مدعو کئے جانا بھی کئی پارٹی رہنماؤں کے لیے قابل اعتراض ہے لیکن سب لوگ عمران خان کی وجہ سے چُپ سادھ لیتے ہیں اور اس حوالے سے کھلم کھلا اعتراض نہیں کرتے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •