مکار این جی اوز، صالح مذہبی تنظیمیں اور مدرسے میں بچے کا ریپ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

دسمبر کے آخری عشرے میں ایک خبر میڈیا پر چلی کہ مانسہرہ میں ایک مدرسے میں ایک بچے کو مبینہ طور پر سو مرتبہ زیادتی کا نشانہ بنایا گیا ہے، اس کی حالت غیر ہو گئی ہے اور آنکھوں سے بھی خون رس رہا ہے۔ بچے کے لواحقین نے مدرسے کے استاد قاری شمس الدین کو مجرم ٹھہرایا۔ بچہ ہسپتال میں ہوش میں آیا تو اس نے بھی یہی کہا۔

قاری شمس الدین غائب تھے۔ پھر وہ جمعیت علمائے اسلام کے مانسہرہ کے امیر مفتی کفایت اللہ کے پاس سے برآمد ہوئے۔ مفتی صاحب نہایت ناراض تھے۔ انہوں نے بتایا کہ مذکورہ مدرسے میں ایک بچہ شمس الدین بھی ہے، اس کی متاثرہ بچے سے لڑائی ہو گئی تھی اس لئے چوٹ شوٹ لگ گئی ہو گی۔ بچے کے والدین کو قانون کا پتہ نہیں اس لئے ایسی ایف آئی آر درج کروا دی ہے۔ یعنی سزا دینی ہے تو اس دوسرے بچے کو دے دو۔ ظاہر ہے کہ مدرسے کے متعلق منفی خبر آئے تو ذمہ دار ایک ہی ہوتا ہے۔ مفتی کفایت اللہ نے بتا دیا کہ ”یہ سب کچھ این جی اوز کی ایما پر کیا جا رہا ہے“۔

مدرسہ انتظامیہ نے بچے سے زیادتی کے واقعے سے لاعلمی کا اظہار کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ بچے پرتشدد مدرسہ کے طالبعلم شمس الدین نے کیا ہے اور ایک جیسے ناموں کی وجہ سے قاری شمس الدین کو ملزم قرار دے دیا گیا۔

لیکن بچے کے اقارب شرارت پر تلے ہوئے تھے۔ متاثرہ بچے کے چچا محمد جاوید نے میڈیا سے گفتگو میں کہا ”میرے لیے افسوس کی بات یہ ہے کہ ہمارے علما اس کیس کو کمزور بنا کر اسی مدرسے کے ایک چھوٹے بچے پر ریپ کا الزام لگاتے ہوئے ملزم کو بچانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ “ مزید کہا کہ ”ہمیں طعنے دیے جا رہے ہیں کہ آپ لوگ کسی این جی او والوں کے ساتھ ملے ہوئے ہیں اور اسی کی ایما پر یہ سب کچھ کر رہے ہیں حالانکہ میں خود بھی مدرسے میں پڑھا ہوں اور مدرسے کے بالکل خلاف نہیں اورنہ ہماری کسی کے ساتھ کوئی دشمنی ہے۔ “

اسسٹنٹ پبلک پراسیکیوٹر کے مطابق بچے پر تشدد کے واقعے کے تین دن بعد مفتی کفایت اللہ نے ملزم کو ڈی پی او کے حوالے کیا تھا، ملزم کو 3 روز تک پناہ دی گئی جو جرم ہے تاہم مفتی کفایت کے خلاف مقدمہ اس وقت درج کیا جائے گا جب جرم ثابت ہو گا۔

پولیس نے میڈیا کو بتایا کہ جہاں تک ملزمان کی بات ہے تو اس میں ایک ملزم 35 سالہ قاری شمس الدین ہے، جسے ایف آئی آر درج ہونے کے تین دن بعد گرفتار کیا گیا، جب کہ بچے کے ساتھ پڑھنے والے دو اور لڑکوں 15 سالہ شمس الدین اور 18 سالہ شفیع اللہ بھی حراست ہیں۔ ملزم قاری شمس الدین نے دوران تفتیش اپنے جرم کا اعتراف کیا اور بچے کی ابتدائی طبی رپورٹ میں ریپ کی طبی علامات موجود ہیں لیکن مقامی میڈیا میں جو رپورٹ ہوا کہ 100 مرتبہ ریپ کیا گیا تو اس میں کوئی صداقت نہیں۔

اب لبرل سیکولر سائنسدانوں کی ایجاد کردہ ڈی این اے رپورٹ آ گئی ہے جو کہتی ہے کہ قاری شمس الدین نے ہی بچے کا ریپ کیا ہے۔ ہمیں یقین ہے کہ مفتی کفایت اللہ سے پوچھا جائے تو وہ یہی فرمائیں گے کہ وہ اور اسلامی نظریاتی کونسل ڈی این اے کی شہادت تسلیم نہیں کرتے، نابالغ بچے کی شہادت کی بھی کوئی حیثیت نہیں ہے۔ جب بالغ قاری شمس الدین نے انکار کر دیا ہے تو اس بچے کی بات کیسے تسلیم کی جا سکتی ہے؟ نیز انہیں شرعی طور پر ڈی این اے کی بجائے چار عینی شاہدین کی گواہی درکار ہے، جب تک وہ نہ ہو قاری شمس الدین کو مجرم نہیں ٹھہرایا جا سکتا۔ ہاں بچے کو قرار واقعی سزا دے دینی چاہیے کیونکہ اس نے تسلیم کیا ہے کہ اس کے ساتھ جنسی فعل کیا گیا ہے۔

آپ انہیں زیادہ دق کریں گے تو وہ آپ کو جنرل ضیا کے دور کے دو مقدموں کی مثال دیں گے جن میں معززین پر ریپ کا الزام لگانے والی دو مفسد لڑکیوں کو قرار واقعی سزا دی گئی تھی۔ ایک نابینا گھریلو لڑکی صفیہ بی بی نے دعویٰ کیا تھا کہ اس کے آجر اور اس کے لڑکے نے اس کا ریپ کیا تھا اور وہ حاملہ ہو گئی۔ وہ دعوے کے حق میں چار عینی شاہدین پیش نہ کر سکی۔ اس لئے ملزمان کو عدالت نے باعزت بری کر دیا اور صفیہ بی بی کو زنا کے جرم میں تین سال قید بامشقت، پندرہ کوڑوں اور ایک ہزار روپے جرمانے کی سزا سنا دی گئی۔ اس پر کچھ مفسد ملکی اور غیر ملکی این جی اوز نے شور مچایا تو وفاقی شرعی عدالت نے صفیہ بی بی پر رحم کھاتے ہوئے اسے بری کر دیا۔

اسی زمانے کا ایک دوسرا مقدمہ تیرہ برس کی یتیم لڑکی جہان مینا کا تھا۔ اس کے چچا نے پرچہ درج کروایا کہ اس کے بہنوئی اور اس کے لڑکے نے جہان مینا کا ریپ کیا ہے جن کے گھر میں وہ اپنی بیمار پھوپھی کی تیمار داری کے لئے مقیم تھی۔ چچا اور جہان مینا اپنے موقف کے حق میں چار عینی شاہد پیش نہ کر سکے۔ جبکہ حمل بتا رہا تھا کہ سیکس ہوئی ہے۔ اس لئے ٹرائل کورٹ نے ملزمان کو باعزت بری کرتے ہوئے جہان مینا کو زنا کا مجرم ٹھہرایا اور اسے سرعام سو کوڑے لگانے کی سزا دی۔ وفاقی شرعی عدالت نے ایک مرتبہ پھر رحم سے کام لیا اور سزا کو تین سال قید بامشقت اور دس کوڑوں تک گھٹا دیا۔ جہان مینا صدمے سے گونگی ہو گئی کچھ عرصے بعد اس نے ایک مردہ بچے کو جنم دیا۔

مفتی کفایت اللہ اور صالح مذہبی تنظیمیں بھی مدرسے کے قاری شمس الدین پر الزام لگانے اور عینی شاہد پیش نہ کرنے پر اس بچے کو ایسی ہی سزا دینے کا مطالبہ کر سکتے ہیں۔ یہ بھی بتا سکتے ہیں کہ ڈی این اے کفار کی سازش ہے جو قاری شمس الدین کے مدرسے کو بدنام کرنے کے لئے تیار کی گئی ہے۔ اور مدرسے کو بچوں کو ریپ کرنے والے قاری شمس الدین جیسے استاد نہیں بلکہ این جی اوز بدنام کر رہی ہیں جو ایسے واقعات کو بنیاد بنا کر مجرم کو سزا دینے کا مطالبہ کرتی ہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

عدنان خان کاکڑ

عدنان خان کاکڑ سنجیدہ طنز لکھنا پسند کرتے ہیں۔ کبھی کبھار مزاح پر بھی ہاتھ صاف کر جاتے ہیں۔ شاذ و نادر کوئی ایسی تحریر بھی لکھ جاتے ہیں جس میں ان کے الفاظ کا وہی مطلب ہوتا ہے جو پہلی نظر میں دکھائی دے رہا ہوتا ہے۔

adnan-khan-kakar has 1248 posts and counting.See all posts by adnan-khan-kakar

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *