رکن قومی اسمبلی ڈاکٹر عامر لیاقت حسین اور مفرور طالبان ترجمان احسان اللہ احسان میں تلخ پیغامات کا تبادلہ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

رکن قومی اسمبلی ڈاکٹر عامر لیاقت حسین اور مفرور طالبان ترجمان احسان اللہ احسان میں تلخ پیغامات کا تبادلہ دیکھنے میں آیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پاکستان تحریک انصاف کے رہنما ڈاکٹرعامر لیاقت اور تحریک طالبان پاکستان کے سابق ترجمان احسان اللہ احسان کے دومیان شدید تلخ لفظوں کا تبادلہ کیا گیا۔

تحریک طالبان کے سابق ترجمان کا کہنا تھا کہ تم جیسے منحوسوں کو دیکھ پاکستانی یقینی طور پر اکتا چکے ہیں میں اپنا چہرہ دکھاوں گا ان شاءاللہ، مگر اس کے بعد تم اور تم جس کے لیے بھونک رہے وہ اپنا چہرہ چھپائے پھرتے رہیں گے۔

اسکے جواب میں ڈاکٹرعامرلیاقت کا کہنا تھا کہ آرمی پبلک اسکول کے بچوں کے قاتل، ٹوئٹر ٹوئٹر تُو نے بہت کھیل لیا،اب زرا ویڈیو پیغام کے ساتھ سامنے آ، اپنے ہی ایک قولِ آڈیوکے مطابق ترکی میں ہے نا تُو، تو آنا ذرا ، آ ویڈیو پر بات کرتے ہیں۔

جواب میں ٹویٹ کرتے ہوئے احسان اللہ احسان کا کہنا تھا کہ خبیث الخلقت انسان تم جیسے مسخروں کی کیا اوقات ہے میں جو کہتا ہوں وہ الحمدللہ کرکے بھی دیکھاتا ہوں۔

انھوں نے کہا کہ تم جیسا درباری نہیں ہوں کہ لوگوں کی چرنوں میں پڑا رہتا ہوں۔ اپنے آقاوں سے کہہ دینا میں تمھاری نیندیں حرام کرنے والا ہوں ان شاءاللہ

اس کے جواب میں ڈاکٹر عامر لیاقت نے لکھا کہ نکل ہی گیا نہ منہ سے لفظ “چرنوں“، تم تو ساکشار شدھی بھارت واسی نکل آئے، مریادا کی سیما پار نہیں کی نا تم نے، ان کا کہنا تھا کہ تو ایک بھارتی ایجنٹ کے سوا کچھ نہیں، چائے پیے گا چائے، چل پھر آجا ( اگر تو ہے) کیونکہ تو ہے ہی نہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *