چار سال پہلے ویلنشیا (لاہور) سے ملنے والی ماڈل گرل امبر کی لاش میں بھی ایس ایس پی مفخر عدیل ملوث تھے

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

صحافی رانا عظیم نے انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ مفخر عدیل ایک ہی گھر میں محافل نہیں سجایا کرتے تھے بلکہ بہت سے گھروں میں محفلیں سجتی تھیں۔ انہوں نے بتایا کہ چار سال پہلے ویلنشیا کے علاقے سے امبر نامی ماڈل گرل کی لاش ملی تھی۔ اس کیس میں بھی ایس ایس پی مفخر عدیل نے لڑکی کے گھر والوں پر پریشر ڈالا تھا جس کے بعد لڑکی کے گھر والوں نے صلح کرلی تھی۔

رانا عظیم نے مزید بتایا کہ مفخر عدیل نے ایسی میڈیسن اور کاسمیٹکس کا کاروبار بھی شروع کررکھا تھا جو باقاعدہ ان لڑکیوں کو دیتے تھے۔ یہ ادویات نشہ آور ہوتی تھیں۔

مفخرعدیل کی اکیڈمی سے متعلق رانا عظیم نے انکشاف کیا کہ شہباز تتلا اور مفخر عدیل نے ایک اکیڈمی بنا رکھی تھی جس میں سی ایس ایس کی تیاری کروائی جاتی تھی اور وہاں ایسے ایسے گھناونے کام ہوتے تھے کہ اداروں نے شواہد جمع کر کے اپنے پاس رکھ لئے کہ وہاں 21 لڑکیوں کے ساتھ کیا گھناونا کھیل ہوتا تھا۔ ان کے ہاتھ ایسی ویڈیوز بھی لگ چکی ہیں۔

شہباز تتلا کے قتل کا انکشاف کرتے ہوئے رانا عظیم نے بتایا کہ گرفتار ملزم اسد بھٹی نے انکشاف کیا ہے کہ پہلے شہباز تتلہ کو نشہ آور ادویات کھلائی گئیں، بعد میں اسکے منہ پر تکیہ رکھ کر اسے مارا گیا اور پھر اس کی لاش کو تیزاب کے ڈرم میں پھینک دیا گیا۔

 

 

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *