سپینی انفلوئنزا سے کرونا وائرس تک

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

یہ سو سال پرانی بات ہے :
پوری دنیا میں تباہی پھیلا دینے والی انفلوائنزا کی وبا 1918 کے موسمِ خزاں میں امریکی کی 48 ریاستوں میں نہایت تیزی سے پھیلی۔ امریکی شہروں میں اشتہار لگا دیے گئے کہ کھانسنا یا چھینکنا ایک غیر قانونی عمل ہے اور ایسا کرنے والے افراد کو 500 ڈالر جرمانہ ادا کرنا پڑے گا۔ واشنگٹن ڈی سی کے ڈاکٹر نوبل پی بیرنز نے کہا ”چھینکنے یا کھانسنے والے افراد پر جرمانہ لگانا چاہیے، انہیں قید کر دینا چاہیے اور اس وقت تک ان کے منہ پر نقاب یا ماسک چڑھا دینا چاہیے جب تک وہ صحت یاب نہیں ہو جاتے“۔

ہزاروں لوگوں کو گلیوں اور گھروں میں ہلاک کر دینے والے غیر مرئی حملہ آور سے جنگ لڑنے والے شہری حکام اور محکمہ صحت کے کارکنوں کی مایوسی کا عالم ایسا عجیب و غریب تھا اور ان کا خیال بھی یہ تھا کہ اس وبا سے بچنا مشکل ہی نہیں ناممکن ہے سو وہ اگرچہ اپنی ڈیوٹیاں سر انجام دے رہے تھے لیکن ان کی حالت بھی ایسی ہی تھی جیسی آج کرونا وائرس سے جنگ لڑنے والوں ڈاکٹرز، پیرا میڈیکل سٹاف، پولیس اور ریسیکیو 1122 والوں کی ہے۔ اس زمانے میں ایک پوسٹر جگہ جگہ چسپاں کیا گیا جس کی عبارت کچھ یوں تھی: ”یہ بیماری نہایت تیزی سے پھیلتی ہے، اس سے بچاؤ کی دوا نہیں ہے“۔ اس وقت کے ڈاکٹرز کا یہی کہنا تھا کہ اس کا سب سے بہترین علاج احتیاط اور صرف احتیاط ہے۔

انفلوئنزا کی وبا دو لہروں کی صورت میں پھیلی۔ پہلی لہر 1918 کی ابتدا میں امڈی اور دوسری لہر 1918 کے موسمِ گرما میں وائرس کی قسم میں تبدیلی کے بعد پھیلی اور شدید ترین نقصان پہنچایا۔ اس وبا کا باعث بننے والا وائرس سب سے پہلے فروری 1918 میں اسپین کے ایک چھوٹے سے ساحلی قصبے سان سباسٹیان (یہ قصبہ فرانس کی سرحد سے تقریباً بیس میل دور واقع ہے ) میں پھیلا تھا، اس اتفاق کی بنا پر اس بیماری کوہسپانوی نزلہ یا ہسپانوی لیڈی کا نام دیا گیا۔

انفلوئنزا کے شدت کا اندازہ اس بات سے لگایئے کہ 1919 کے موسمِ بہار تک اس وائرس نے بیشتر یورپ اور پورے امریکہ کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ مارچ 1918 یعنی پہلی جنگ کے آخری برس میں امریکی ریاست کنساس کے علاقے فورٹ ریلے میں کیمپ فنسٹن اور انفلوئنزا کی وبا کے پہنچنے تک وہ یورپ اور ایشیا میں بربادی پھیلا چکی تھی۔ ایسی قوم جسے پہلی جنگِ عظیم نے ویسے ہی برباد کر دیا تھا جب یہاں سے انفلوئنزا کی بیماری رخصت ہوئی تو اس نے ان برباد ہوئی اقوام کو معاشرتی اور معاشی بحران کے ذریعے تباہی سے دوچار کر دیا تھا۔

اس پراسرار بیماری کے بارے مختلف نظریات سامنے آئے۔ نیویارک ٹائمز ( 21 جون 1981 ) کے مطابق جرمن فوج شلجم زیادہ استعمال کرتی تھی جس کی وجہ سے اس بیماری نے جنم لیا، دو ہفتے بعد ٹائمز نے یہ رپورٹ دی کہ فرانس کی طرف سے آنے والی ہواؤں نے اس بیماری کو جنم دیا۔ اس وائرس نے جب ایک بار بحیرۂ اوقیانوس پار کر لیا تو پھر انتہائی تیزی سے امریکہ میں پھیلا۔ ستمبر 1918 میں امریکہ میں انفلوئنزا سے 387 افراد روزانہ کی بنیاد پہ لقمہ اجل بنے اور اس ایک مہینے میں مجموعی طور 12 ہزار افراد اس وائرس سے ہلاک ہوئے اوراسی طرح اکتوبر میں روزانہ کی بنیاد پر ہلاک ہونے والوں کی تعداد 6300 ہو گئی اور ایک ماہِ اکتوبر میں ایک لاکھ پچانوے ہزارنوے ہزار لوگ ہلاک ہو گئے۔

ہلاکتوں کی ہولناکی واضح کرنے کے لیے یہ کافی ہے کہ اس وائرس نے مجموعی طور پر دو کروڑ بیس لاکھ اور ایک اور رپورٹ کے مطابق چار کروڑ لوگوں کو ہلاک کیا۔ اس حوالے سے سابق ہیلتھ کمشنر نیویارک ڈاکٹر گولڈ وائز نے اپنے ایک بیان میں یہاں تک کہا تھا کہ ”جو اموات محکمہ صحت والے بتا رہے ہیں یہ جھوٹ ہے بلکہ اموات اس سے کہیں زیادہ ہوئیں جو عوام سے چھپائی گئیں“۔ اس عالمگیر قاتل نے کیسے کیسے چن چن کر لوگوں کو قتل کیا اور کہاں سے آئی اور کیسے پھیلی اس بارے میں درجنوں تحقیقات ہوئیں مگر ابھی تک کوئی واضح تحقیق سامنے نہیں آئی۔

سٹیفن جے سپگنیس نے اپنی کتاب میں لکھا تھا ”انفلوئنزا کی بیماری آج بھی موجود ہے اور موثر ویکسی نیشن پروگراموں کی بدولت یہ وبا محدود رہی ہے۔ ہمارے پاس انفلوئنزا کے بہت سے جراثیموں کا علاج موجود ہے تاہم فطرت باوسیلہ ہے اور ہمیشہ اس بات کا امکان رہے گا کہ کوئی ایسا وائرس نمودار ہو جائے گا جس سے ہم کوئی بچاؤ نہیں کر سکیں گے اور وہ دوبارہ اسی طرح پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لے گا“۔

قارئین کرونا وائرس بھی نزلہ، زکام، کھانسی اور چھینکنے سے شروع ہوا اور دیکھتے ہی دیکھتے اس نے بیشتر یورپ اور امریکہ سمیت پورے ایشیا کو اپنی لپیٹ میں لے لیا اور دنیا کے دو سو ممالک اس وائرس کے سامنے سرینڈر کرچکے ہیں کیونکہ اس وائرس کی نہ پہلے کوئی ویکسین تھی اور نہ ہی آج کوئی ویکسین ہے۔ آج سے ایک سو دو سال قبل بھی ہمارے ڈاکٹرز اور محکمہ صحت والے یہ سوچتے رہے کہ یہ وائرس کہاں سے آیا، کیسے آیا اور کہاں گیا، کسی کے پاس کوئی جواب نہیں تھا اور جواب ہوتا بھی کیسا کیونکہ ایک انگریز اپنی کتاب میں جاتے جاتے یہ بتا یاتھا کہ ”قدرت باوسیلہ (اس نے چالاک کا لفظ استعمال کیا تھا) ہے“ لہٰذا قدرت کبھی بھی ناراض ہو کر کسی بھی طرح کا امتحان لا سکتی ہے۔

آج اس وائرس پر مبصرین کے مختلف گروہ بن گئے، دائیں بازو والوں کا خیال ہے کہ یہ ایک قدرتی آفت ہے اور اس کا علاج صرف دعا اور صدقہ ہے جبکہ بائیں باوزو والوں کا کہنا ہے کہ یہ سب بائیولاجیکل وار ہے اور اس سے جلد ہی چھٹکارا مل جائے گا۔ اور تیسرا گروہ سائنس دانوں اور ریسرچرز کا ہے جن کے پاس نہ آج سے سو سال قبل انفلوئنزا کی کوئی ویکسین بن سکی اور نہ ہی ان سے کرونا وائرس کی کوئی ویکسین بن پا رہی ہے سو میرا آج بھی یہی خیال ہے کہ اس کا علاج وہی ہے جو آج سے ایک سو دو سال قبل انفلوئنزا کے بچاؤ کے لیے اپنایا گیا تھا اور وہ تھا ”کھانسنا منع ہے“ یا ان پر جرمانہ عائد کر دیں۔

حیرت تو اس بات پر ہے کہ پاکستان میں اس وائرس کے آغاز میں اعلان کیا گیا کہ گھروں سے نہ نکلیں لیکن لوگ باز نہ آئے۔ لاک ڈاؤن کر دیا گیا کہ لوگ شاید گھر بیٹھ جائیں لیکن لوگ تب بھی باز نہ آئے اور اب کرفیو پر غور کیا جا رہا ہے۔ اس قوم کو کرفیو بھی گھر نہیں بٹھا سکتا کیونکہ یہ ایک کنفیوز قوم ہے جو ہمیشہ وہ کام کرتی ہے جس سے اسے روکا جاتا ہے۔ کسی نے کیا خوب کہا کہ اس قوم کو اگر جنت بھی بھیج دیا جائے تو یہ ایک دفعہ جہنم کا چکر لازمی لگائے گی، صرف یہ دیکھنے کہ وہاں ہو کیا رہا ہے۔

اس قوم کوامریکہ کی طرح جرمانے کریں، ماسک دیں یا پھر سینٹیائزر گھر گھر تقسیم کریں، یہ قوم صرف یہ دیکھنے باہر نکلتی ہے کہ یار کرونا واقعی ہے یا صرف ڈرایا جا رہا ہے۔ آپ اس عظیم قوم کی ذہنیت کا اندازہ اس بات سے لگایے کہ حکومت نے لاک ڈاؤن کے دنوں میں مستحقین کو گھر گھر راشن پہنچانے کی ذمہ داری لی، ایسے میں ہزاروں ایک گھرانوں ے بھی اپلائی کردیا جو آسانی کے ساتھ اپنا گزارہ کر سکتے ہیں یعنی وبا کے دنوں میں بھی مخصوص لوٹ مار کا ذہن رکھنے والا طبقہ مظلوم کا حق مارنے سے باز نہیں آ رہا۔

ایسی قوم پر اگر طاعون، انفلوئنزا یا کرونا جیسے وائرس جیسا عذاب نہ آئے تو کیا آئے۔ قومیں مشکل وقتوں میں کیسے سروائیو کرتی ہیں؟ اپنے عمل سے پہچانی جاتی ہیں اور کرونا وائرس کے دنوں میں ہمارے اعمال کیا ہیں آپ حالیہ صورت حال سے اندازہ لگا سکتے ہیں کہ روز بروز کرونا وائرس کی پھیلاؤ میں تیزی سے اضافہ ہورہا ہے اور اگر ہم نے خود کو نہ بدلا، ہم نے قدرت کی طرف رجوع نہ کیا اور اپنی اعمال نہ بدلے تو یقین جانیں طاعون سے اڑھائی کروڑ اور انفلوئنزا سے چار کروڑ لوگ ہلاک ہوئے تھے اور کرونا سے اس وقت تک پینتالیس ہزار لوگ مر چکے ہیں اور یہ تعداد روز بروز بڑھ رہی ہے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *