ریکوڈک: چھ ارب ڈالر جرمانے کی ادائیگی پر حکم امتناع، پاکستان کے لیے کتنا بڑا ریلیف ہے؟

منزہ انوار، اعظم خان - بی بی سی اردو، اسلام آباد

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بلوچستان

BBC
صوبہ بلوچستان میں سونے اور تانبے کے اربوں ڈالر مالیت کے ریکوڈک پراجیکٹ میں بین الاقوامی ثالثی ٹریبونل کی جانب سے عائد کردہ چھ ارب ڈالر کے جرمانے کے فیصلے کے خلاف پاکستان نے حکم امتناعی حاصل کر لیا ہے اور اٹارنی جنرل آف پاکستان خالد جاوید کے مطابق اس اقدام سے جرمانے کی ادائیگی کے سلسلے میں ملک کو مئی 2021 تک کا ریلیف حاصل ہو گیا ہے۔

گذشتہ سال جولائی میں بین الاقوامی ثالثی ٹریبیونل نے پاکستان کی جانب سے آسٹریلیا اور چلی کی ایک مشترکہ کان کنی کی کمپنی کی مائننگ لیز منسوخ کرنے پر پاکستان پر چھ ارب ڈالر کا جرمانہ عائد کیا تھا۔

پاکستان کو کہا گیا تھا کہ وہ مائننگ کمپنی کو چار ارب ڈالر ہرجانے کی ادائیگی کے علاوہ 1.7 ارب ڈالر کی اضافی رقم بھی ادا کرے۔

تاہم اب پاکستان نے اس فیصلے کے خلاف ثالثی ٹریبیونل سے مستقل حکم امتناع حاصل کر لیا ہے جسے چند حلقے ایک بڑی کامیابی قرار دے رہے ہیں۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اٹارنی جنرل آف پاکستان نے کہا ہے کہ اس فیصلے کے بعد اب پاکستان ایک نئی قانونی حکمت عملی کے تحت آگے بڑھے گا۔

یہ نئی حکمت عملی کیا ہو گی اور پاکستان کے لیے یہ سٹے آرڈر کتنا مفید ہے یہ جاننے کے لیے بی بی سی نے اٹارنی جنرل آف پاکستان کے علاوہ اس مقدمے سے جڑے قانونی ماہرین سے بات کی۔

یہ بھی پڑھیے

ریکوڈک: آئی ایم ایف کے قرض جتنے جرمانے کا ذمہ دار کون؟

سیندک کا سونا بلوچوں کی زندگی بدلنے میں مددگار کیوں نہیں؟

ریکوڈک تنازع: حکومت کا عدالت سے باہر نمٹانے کا فیصلہ

مگر اس سے قبل یہ جاننا ضروری ہے کہ حکم امتناعی کیا ہوتا ہے؟ حکم امتناعی یعنی سٹے آرڈر عدالت کی طرف سے ایک خاص حکم نامہ ہوتا ہے جس میں کسی بھی معاملے کو جوں کا توں برقرار رکھا جاتا ہے۔ سادہ الفاظ میں کسی جاری متنازع معاملے کو روکنے کا حکم دیا جاتا ہے یا جو کچھ جیسا ہو رہا ہو ویسا جاری رہنے کا حکم دیا جاتا ہے۔

پاکستانی عالمی فورم پھر گذشتہ دس سال سے ریکوڈک مقدمے کی پیروی کرتا آ رہا ہے۔

اس دوران پاکستان نے متعدد بار اپنی قانونی حکمت عملی اور وکلا کی ٹیمیں بدلیں لیکن نتیجہ پھر بھی پاکستان کے خلاف نکلا۔ تاہم اب مئی 2021 تک حاصل ہونے والے حکم امتناع کے بعد ایک بار پھر پاکستان نے نئی حکمت عملی پر کام شروع کر دیا ہے۔

چاغی

BBC
یہ کتنا بڑا ریلیف ہے؟

پاکستان کے اٹارنی جنرل خالد جاوید خان نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ’یہ ایک بہت اہم ریلیف ہے کیونکہ اس وقت پاکستان مالی طور پر چھ ارب ڈالر کا جرمانے ادا کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہے۔ اس فیصلے کے بعد اب پاکستان کو مئی 2021 تک کا وقت مل چکا ہے۔‘

ان کے مطابق ’اب ہمارے پاس بہت سارے آپشن ہیں۔ ہم کوشش کریں گے اس عرصے میں ہم اس معاملے کو کوئی بہتر حل نکال سکیں۔‘

اٹارنی جنرل کا کہنا ہے کہ ہماری پہلی کوشش ہو گی کہ اس مقدمے میں پاکستان کے خلاف جو فیصلہ آیا ہے اسے ختم کرایا جا سکے، جس کے اب آثار پیدا ہو گئے ہیں۔

ماضی میں اس مقدمے کی پیروی کرنے والے ایک وکیل نے بی بی سی کو بتایا کہ سٹے آرڈر سے اب پاکستان بہتر طور پر اس مقدمے کے دیگر فریقوں سے بات چیت سے حل نکال سکتا ہے۔ ان کے خیال میں اب صرف اٹارنی جنرل آفس کو بہتر حکمت عملی اختیار کرنا ہو گی۔

ایڈووکیٹ فیصل صدیقی اس مقدمے پر گہری نظر رکھے ہوئے ہیں، اُن کے مطابق یہ ایک عارضی ریلیف ہے بالکل اسی طرح جس طرح مقامی عدالتوں سے مختلف کیسز میں عارضی ریلیف حاصل کیا جاتا ہے۔

انھوں نے کہا کہ اگر قانونی پوزیشن دیکھی جائے تو ’پاکستان یہ مقدمہ ہار چکا ہے اور اب ’ایوارڈ ریونیو‘ کرانا ہے، جس کے نظرثانی کے مرحلے میں امکانات بہت کم ہیں کیونکہ اصل مصیبت یہ ہے کہ اس مقدمے کا فیصلہ ابھی اپنی جگہ موجود ہے۔

فیصل صدیقی کے اس پوائنٹ پر ردعمل دیتے ہوئے اٹارنی جنرل کا کہنا تھا کہ ’یہ درست ہے کہ ابتدائی فیصلہ ہمارے خلاف آیا، لیکن اس کے بعد ثالثی سے متعلق کچھ ایسی پیش رفت ہوئی ہے جو پاکستان کے لیے خوش آئند ہے۔‘

اُن کے مطابق اب پاکستان کے پاس اس فیصلے کے خلاف نظرثانی کا آپشن بھی موجود ہو گا۔

یاد رہے کہ ثالثی ٹریبیونل کے مطابق پاکستان نے بلوچستان کے ضلع چاغی میں واقع ریکو ڈیک کان میں تانبے اور سونے کے ذخائر کے لیے کان کنی کی کمپنی ٹی سی سی کو غیر قانونی طور پر لیز کی تردید کی تھی۔ ٹریبونل کا کہنا تھا پاکستان نے آسٹریلیا، پاکستان دوطرفہ سرمایہ کاری معاہدے کے تحت غیر قانونی قبضہ کرنے کا ارتکاب کیا ہے۔

بعد میں ٹی سی سی نے پاکستان پر عائد جرمانے کے نفاذ کے لیے پانچ مختلف ممالک کی عدالتوں سے رجوع کیا۔

گذشتہ نومبر میں پاکستان نے کئی بنیادوں پر اس جرمانے کو منسوخ کرانے کے لیے آئی سی سی کے سامنے درخواست کی۔ جب پاکستان کی درخواست رجسٹرڈ ہوئی تو ٹی سی سی کے ذریعہ شروع کردہ عمل پر ازخود ایک عبوری قیام کی منظوری دی گئی۔

اس حکم کی تصدیق کے لیے سماعت اس اپریل میں ویڈیو لنک کے ذریعے ہوئی جبکہ بدھ کے روز ٹریبونل نے بالآخر پاکستان کے حق میں فیصلہ دیا اور سٹے آرڈر کی تصدیق کی۔

سوشل میڈیا پر ردعمل

https://twitter.com/HassanArif_1/status/1306692054664257542

ریکوڈک کے سٹے آرڈر کے معاملے پر سوشل میڈیا پر ملا جلا ردِعمل سامنے آ رہا ہے۔ جہاں کئی افراد اس فیصلے پر کافی خوش ہیں وہیں دوسری جانب کئی افراد یہ بھی سوال بھی کر رہے ہیں کہ سٹے آرڈر کا مطلب کب سے ’بڑی کامیابی‘ ہو گیا؟

شہاب صدیقی نامی صارف بھی یہی پوچھتے نظر آئے کہ ’مجھے یہ سمجھنے میں دقت ہو رہی ہے کہ سٹے آرڈر ’بڑی جیت‘ کیسے ہے؟‘

ساتھ ہی ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ یہ معاملہ عدالتی دائرہِ اختیار سے تجاوز اور ہمیں عدالتی اصلاحات کی ضرورت کیوں ہے، کی بہترین مثال ہے۔

https://twitter.com/HashUrTag/status/1306668979050754055

مصنفہ عائشہ صدیقہ پوچھتی ہیں ’مسئلہ یہ ہے کہ مذاکرات کون کرے گا اور مذاکرات کیسے ہوں گے۔ شاہد خاقان عباسی نے بہترین سودا کیا جسے اصلی طاقتوں نے مسترد کردیا۔ حیرت ہے کہ اب ٹی سی سی کیا طے کرے گی؟‘

https://twitter.com/iamthedrifter/status/1306658016784154631

وزیرِاعظم کے معاونِ خصوصی اور سی پیک کے چیئرمین عاصم سلیم باجوہ نے بھی اس بارے میں ٹویٹ کی کہ یہ حکمِ امتناع پاکستان کے لیے بہت بڑا ریلیف ہے۔ وزیر اعظم نے ہدایت کی ہے کہ وہ معدنیات کے شعبے میں تیزی سے اضافے کے لیے شفاف طریقے سے جی او بی کے ساتھ مکمل تعاون کریں، بہتر نظام بنائیں، مقامی سرمایہ کاروں کو شامل کریں، اپنے انسانی وسائل استعمال کریں۔‘

https://twitter.com/AsimSBajwa/status/1306811164077297664

پاکستان تحریکِ انصاف کے آفیشل ہینڈل سے بھی اس فیصلے پر سب پاکستانیوں کو مبارکبار دی گئی۔

https://twitter.com/PTIofficial/status/1306696634932310027

سوشل میڈیا صارف شہزاد یونس بھی اس فیصلے پر کافی خوش نظر آئے۔ انھوں نے لکھا کہ ’ریکو ڈیک کے معاملے میں پاکستان کے لیے بڑی جیت۔ وزیرِ اعظم عمران خان کی کوششیں رنگ لا رہی ہیں۔‘

صارف بشیر احمد لکھتے ہیں ’پی ٹی آئی حکومت کی زبردست کارکردگی۔ ریکوڈک کیس میں پاکستان اور قانونی ٹیم کی بڑی کامیابی اکسڈ نے پاکستان کی اپیل پر چھ (6) ارب ڈالر جرمانے کی ادائیگی پر عمل درآمد حکم امتناع کے ذریعے روک دیا۔۔ شکر الحمدللہ۔‘

https://twitter.com/ShahzadYunasPTI/status/1306654768539074560

ریکوڈک بلوچستان میں کہاں واقع ہے؟

ریکوڈک ایران اور افغانستان سے طویل سرحد رکھنے والے بلوچستان کے ضلع چاغی میں واقع ہے۔ بعض رپورٹس کے مطابق ریکوڈک کا شمار پاکستان میں تانبے اور سونے کے سب سے بڑے جبکہ دنیا کے چند بڑے ذخائر میں ہوتا ہے۔

ریکوڈک کے قریب ہی سیندک واقع ہے جہاں ایک چینی کمپنی ایک دہائی سے زیادہ عرصے سے تانبے اور سونے کے ذخائر پر کام کر رہی ہے۔ تانبے اور سونے کے دیگر ذخائر کے ساتھ ساتھ چاغی میں بڑی تعداد میں دیگر معدنیات کی دریافت کے باعث ماہرین ارضیات چاغی کو معدنیات کا ‘شو کیس’ کہتے ہیں۔

سپیریم کورٹ

BBC
ریکوڈک پر کام کب شروع ہوا اور یہ کب ایک کمپنی سے دوسری کو منتقل ہوا؟

بلوچستان کے سابق سیکریٹری خزانہ محفوظ علی خان کے ایک مضمون کے مطابق حکومت بلوچستان نے یہاں کے معدنی وسائل سے استفادہ کرنے کے لیے ریکوڈک کے حوالے سے 1993 میں ایک امریکی کمپنی بروکن ہلز پراپرٹیز منرلز کے ساتھ معاہدہ کیا۔

یہ معاہدہ بلوچستان ڈیویلپمنٹ کے ذریعے امریکی کمپنی کے ساتھ جوائنٹ وینچر کے طور پر کیا گیا تھا۔

چاغی ہلز ایکسپلوریشن کے نام سے اس معاہدے کے تحت 25 فیصد منافع حکومت بلوچستان کو ملنا تھا۔ اس معاہدے کی شقوں میں دستیاب رعایتوں کے تحت بی ایچ پی نے منکور کے نام سے اپنی ایک سسٹر کمپنی قائم کرکے اپنے شیئرز اس کے نام منتقل کیے تھے۔ منکور نے بعد میں اپنے شیئرز ایک آسٹریلوی کمپنی ٹھیتیان کوپر کمپنی (ٹی سی سی)کو فروخت کیے۔

نئی کمپنی نے علاقے میں ایکسپلوریشن کا کام جاری رکھا جس کے دوران یہ بات سامنے آئی کہ ریکوڈک کے ذخائر معاشی حوالے سے سود مند ہیں۔ بعد میں کینیڈا اورچِلی کی دو کمپنیوں کے کنسورشیم نے ٹی سی سی کے تمام شیئرز کو خرید لیا۔

بلوچستان

BBC
ٹی سی سی اور حکومت بلوچستان کے درمیان تنازع کب پیدا ہوا؟

ریکوڈک کے حوالے سے بلوچستان کے بعض سیاسی حلقوں میں تحفظات پائے جاتے تھے۔ ان حلقوں کی جانب سے اس رائے کا اظہار کیا جاتا رہا کہ ریکوڈک کے معاہدے میں بلوچستان کے لوگوں کے مفاد کا خیال نہیں رکھا گیا۔

اس معاہدے کو پہلے بلوچستان ہائی کورٹ میں چیلنج کیا گیا مگر ہائی کورٹ نے اس حوالے سے مقدمے کو مسترد کر دیا اور بعد میں ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع کیا گیا۔

سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں ایک بینچ نے قواعد کی خلاف ورزی پر ٹی سی سی کے ساتھ ہونے والے معاہدے کو کالعدم قرار دے دیا۔ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ٹی سی سی نے مائننگ کی لائسنس کے حصول کے لیے دوبارہ حکومت بلوچستان سے رجوع کیا۔

اس وقت کی بلوچستان حکومت نے لائسنس کی فراہمی کے لیے یہ شرط رکھی تھی کہ کمپنی یہاں سے حاصل ہونے والی معدنیات کو ریفائن کرنے کے لیے بیرون ملک نہیں لے جائے گی۔ حکومت کی جانب سے چاغی میں ریفائنری کی شرط رکھنے کے ساتھ ساتھ بلوچستان کے حصے کو بھی بڑھانے کی شرط بھی رکھی گئی۔

سیندک پراجیکٹ سے کوئی خاطر خواہ فائدہ نہ ملنے کے باعث حکومت بلوچستان کی جانب سے یہ شرائط بلوچستان کو زیادہ سے زیادہ فائدہ پہنچانے کے لیے رکھی گئی تھیں۔

کمپنی کی جانب سے ان شرائط کو ماننے کے حوالے سے پیش رفت نہ ہونے اور محکمہ بلوچستان مائننگ رولز 2002 کے شرائط پوری نہ ہونے کے باعث معدنیات کی لائسنس دینے والی اتھارٹی نے نومبر2011 میں ٹی سی سی کو مائننگ کا لائسنس دینے سے انکار کر دیا تھا۔

اس فیصلے کے خلاف ٹی سی سی نے سیکریٹری مائنز اینڈ منرلزحکومت بلوچستان کے پاس اپیل دائر کی تھی جسے سیکریٹری نے مسترد کیا تھا۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 16114 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp