نینسی پیلوسی دوبارہ ایوانِ نمائندگان کی اسپیکر منتخب

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

نینسی پیلوسی نے 216 ووٹ حاصل کیے جب کہ ری پبلکن رہنما کیون میکارتھی نے 209 ووٹ حاصل کیے۔ 

ڈیمو کریٹک رُکن کانگریس نینسی پیلوسی اتوار کو چوتھی مدت کے لیے ایک بار پھر ایوانِ نمائندگان کی اسپیکر منتخب ہو گئی ہیں۔ ایوان میں ڈیمو کریٹک پارٹی کو ری پبلکنز کے مقابلے میں معمولی برتری حاصل ہے اور ماہرین کے بقول بہت سے چیلنجز پیلوسی کے منتظر ہیں۔

دوبارہ اسپیکر منتخب ہونے کے بعد نینسی پیلوسی نے کہا ہے کہ ایک بار پھر اسپیکر منتخب ہونا اُن کے لیے اعزاز کی بات ہے۔

کیلی فورنیا سے تعلق رکھنے والی ڈیمو کریٹک رہنما نینسی پیلوسی نے اتوار کی دوپہر ووٹنگ کے دوران 216 ووٹ حاصل کیے جب کہ ری پبلکن رہنما کیون میکارتھی نے 209 ووٹ حاصل کیے۔

دو ڈیمو کریٹک اراکین نے مخالف اُمیدوار جب کہ تین ڈیمو کریٹس نے ایوان میں موجود ہونے کے باوجود کسی اُمیدوار کے حق میں ووٹ نہیں دیا۔

نینسی پیلوسی 2003 سے ایوانِ نمائندگان میں ڈیمو کریٹک پارٹی کی نمائندگی کر رہی ہیں جب کہ وہ اسپیکر منتخب ہونے والی پہلی خاتون تھیں۔

نومبر کے انتخابات میں کانگریس کی بعض نشستیں کھونے کے باوجود ڈیمو کریٹک پارٹی کو ایوانِ نمائندگان میں ری پبلکنز کے مقابلے میں معمولی برتری حاصل ہے۔

چار سو پینتیس اراکین پر مشتمل ایوانِ نمائندگان میں ڈیمو کریٹس کے 222 جب کہ ری پبلکنز کے 211 اراکین ہیں۔

80 سالہ نینسی پیلوسی کا تعلق امریکی ریاست کیلی فورنیا سے ہے۔
80 سالہ نینسی پیلوسی کا تعلق امریکی ریاست کیلی فورنیا سے ہے۔

دوبارہ اسپیکر منتخب ہونے کے بعد پیلوسی نے اپنے خطاب میں کہا کہ نئی کانگریس کو کرونا وبا اور معاشی بحران سے نبرد آزما ہونے کے لیے مل کر کام کرنا ہو گا۔

اُں کا کہنا تھا کہ “آج ہم جب حلف اُٹھا رہے ہیں تو ہمیں درپیش مشکلات اور چیلنجز ماضی کے مقابلے میں کہیں زیادہ ہیں۔”

پیلوسی کا کہنا تھا کہ معاشرے کے ہر طبقے کو اس وبا نے متاثر کیا ہے۔ ساڑھے تین لاکھ سے زائد امریکی ہلاک ہو گئے ہیں۔ دو کروڑ سے زائد افراد اس وبا سے متاثر ہوئے ہیں۔ لاکھوں لوگ بے روزگار ہو چکے ہیں۔ یہ اعداد و شمار ہمارے اندازوں سے کہیں زیادہ ہیں۔

اسّی سالہ پیلوسی نے یہ بھی بتایا کہ دو سالہ مدت کے خاتمے کے بعد وہ دوبارہ اسپیکر کا انتخاب نہیں لڑیں گی۔

ایوان میں اپنے خطاب سے قبل ایوانِ نمائندگان میں اقلیتی رہنما کیون میکارتھی نے ٹوئٹ کی کہ “پرانی کانگریس مکمل طور پر ناکام رہی تھی اور درحقیقت یہ گزشتہ 50 سالوں کے دوران سب سے غیر فعال کانگریس تھی۔”

بعدازاں اپنے خطاب میں میکارتھی نے کہا کہ “کاش میں یہ کہہ سکتا کہ کانگریس کی اکثریت عام آدمی کی بھلائی اور اصل مسائل کے حل کی سمت اقدامات کرے گی۔ لیکن مجھے یہ اشارے مل رہے ہیں کہ یہ سمت درست نہیں ہے۔”

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

وائس آف امریکہ

”ہم سب“ اور ”وائس آف امریکہ“ کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے مطابق ”وائس آف امریکہ“ کی خبریں اور مضامین ”ہم سب“ پر شائع کیے جاتے ہیں۔

voa has 1329 posts and counting.See all posts by voa