کورونا وائرس ویکسین اور سرعت انزال کا خوف

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

محفل میں عجیب سی خاموشی چھا رہی تھی۔ میں نے سکوت کی دھند زدہ چادر کو توڑ کر کچھ خوشگوار ماحول بنانے کی کوشش کی۔

”فائزر نے پھر ویکسین بنا لی کورونا وائرس کی، امید ہے اب جلد ہی عوام کی پہنچ میں ہو گی۔“
وہ نہایت خشمگیں نگاہوں سے مجھے گھور کر بولے:

”یہی تو تم زیادہ پڑھے لکھوں کا مسئلہ ہے۔ ایک سازش ہے نئی نسل جس کا شکار ہوتی چلی جا رہی ہے بس۔ اور تم بھی سیانے بیانے ہو کر اندھا دھند گناہوں کی اس دلدل میں دھنستے چلے جا رہے ہو۔ کیا کیا ححححرام (ح کی آواز گلے کی گہرائیوں سے) اجزا اس یہودیوں کی کمپنی نے اس ویکسین میں استعمال نہیں کیے ؟ حتی ’کہ سور کا ڈی این اے بھی۔ معاذ اللہ!“

ریش مبارکہ کا مٹھی سے مساج کرتے ہوئے مزید فرمانے لگے:
”یہ کورونا وائرس اور یہ ویکسین سب ایمان ختم کرنے کے حربے ہیں۔“

اور تم تو میڈیکل فیلڈ میں ہو ناں؟ چلو تمہاری ہی زبان میں سمجھاتا ہوں۔ کوئی دوا دارو یا ویکسین دنیا میں ایسی نہیں جس کا سائیڈ ایفیکٹ نہ ہو۔ کیا تم جانتے ہو اس ویکسین کے سائیڈ ایفیکٹس کس قدر تباہ کن ہیں؟ ”

”نہیں۔ کیا سائیڈ ایفیکٹس ہیں؟“
”عورتوں کی مونچھیں نکل آتی ہیں۔ لیکوریا بھی ہوجاتا ہے“

”اور مردوں میں؟“
میں نے فارماکولوجی کی تمام کتب کو دل ہی دل میں دریا برد کرتے ہوئے پوچھا؟
”سرعت انزال“ ۔اور میں ایسے ہی آسمان کو تکنے لگا جیسے جون صاحب نے فرمایا تھا۔

اس اثنا میں وہ جو کچھ بولتے رہے ، اس کی تاب نہ یہ تحریر لا سکتی ہے نہ ہی قارئین کرام کی بصارت۔

ایک مدت کے بعد آپ خاموش ہوئے اور خوں خوار تیوری چڑھا کر مجھے دوبارہ گھورنے لگے کہ میں جواب نہ دے کر بے تمیزی کا ارتکاب کر رہا ہوں۔

میں نے ہمت کر کے کہا
”اب اگر آپ کے اور ہمارے درمیان فیصلے آلۂ تناسل اور اندام نہانی نے ہی کرنے ہیں تو چوہا لنڈورا بھلا۔“
اور یہ شعر پڑھتا وہاں سے نکل آیا

ہم سمجھتے تھے کہ لائے گی حفاظت ویکسین
کیا خبر تھی کہ چلا آئے گا انزال بھی ساتھ

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •