بھارت اور چین میں متنازع علاقے سے فوج کی واپسی کا معاہدہ کیسے ہوا؟

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

فائل فوٹو
نئی دہلی — بھارت اور چین کے درمیان مشرقی لداخ میں نو ماہ سے جاری سرحدی تنازع کو حل کرنے کے مقصد سے معاہدے کے تحت دونوں ممالک کی فوجیں اپنی پوزیشن سے واپسی کا عمل جاری رکھے ہوئے ہیں۔ مبصرین کے مطابق اس عمل میں کئی ماہ لگ جائیں گے۔

مبصرین کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس تنازع کے باقی رہنے سے دونوں ممالک کا نقصان ہو رہا تھا اور ایک طرح سے ان پر اندرونی دباؤ بھی تھا جس کی وجہ سے فوجی اور سفارتی سطح پر کیے جانے والے مذاکرات کی مدد سے اسے حل کیا گیا۔

تاہم یہ بھی کہا جا رہا ہے کہ ان نو ماہ کے دوران بھارت کا زیادہ نقصان ہوا اور سمجھوتے میں بھی اس کی کمزوری نظر آئی۔

بھارت کا علاقہ چین کے حوالے، راہول گاندھی کا الزام

بھارت میں حزبِ اختلاف کی بڑی جماعت کانگریس کے سینئر رہنما راہول گاندھی نے الزام لگایا ہے کہ وزیرِ اعظم نریندر مودی نے بھارت کا علاقہ چین کے حوالے کر دیا۔

انہوں نے ایک نیوز کانفرنس میں کہا کہ نریندر مودی نے چین کے سامنے سر جھکا دیا ہے۔ اسٹریٹجک اہمیت والے جن علاقوں پر چین قابض ہے اس کے بارے میں وزیرِ دفاع راج ناتھ سنگھ نے کچھ نہیں کیا۔

انہوں نے سوال کیا کہ کیلاش رینج سے فوج کو پیچھے ہٹنے کو کیوں کہا گیا۔ وزیرِ اعظم نے فنگر تھری سے فنگر فور تک کی زمین چین کو دے دی۔

انہوں نے وزیرِ اعظم نریندر مودی کو بزدل قرار دیتے ہوئے کہا کہ وہ فوج کی قربانی سے دھوکہ کر رہے ہیں۔

‘یہ کہنا درست نہیں ہے کہ بھارتی علاقہ فنگر فور تک ہے’

راہول گاندھی کے بیان پر وزارتِ دفاع سے وضاحت پیش کی گئی اور کہا گیا کہ یہ کہنا درست نہیں ہے کہ بھارت کا علاقہ فنگر فور تک ہے۔ بھارت کے نقشے میں اس علاقے کو بھی بھارت کا علاقہ دکھایا جاتا ہے جو چین کے قبضے میں ہے اور تقریباً 43ہزار مربع کلومیٹر ہے۔

بھارت میں چین مخالف مظاہرے

بھارت میں چین مخالف مظاہرے

وزارتِ دفاع کا کہنا ہے کہ بھارت کے مطابق لائن آف ایکچوئل کنٹرول (ایل اے سی) فنگر ایٹ تک ہے نہ کہ فنگر فور تک۔ یہی وجہ ہے کہ بھارت فنگر ایٹ تک گشت کرنے کے مطالبے کا اعادہ کرتا رہا ہے۔

وزارتِ دفاع نے کہا کہ ہاٹ اسپرنگ گوگرا اور دیپسانگ وادی میں جو بھی تنازع ہے اسے حل کر لیا جائے گا۔ پینگونگ سے فوجیوں کی واپسی کے 48 گھنٹے بعد ان علاقوں کی پہلے کی پوزیشن بحال کرنے پر بات کی جائے گی۔

‘فوج کی واپسی کے لیے دونوں ممالک پر اندرونی دباؤ تھا’

ادھر نئی دہلی کے سیاسی حلقوں کا کہنا ہے کہ پینگونگ جھیل کے اطراف سے فوجیوں کی واپسی کا معاہدہ ایک اہم کامیابی ہے۔ تاہم حکومت کی جانب سے اس کا سہرا اپنے سر باندھنے سے بچانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

سرحدی کشیدگی کے دوران گلوان وادی میں خونی جھڑپ اور متعدد ہلکی پھلکی جھڑپوں کے باوجود یہ معاہدہ کیسے ہوا اس سوال پر سینئر دفاعی تجزیہ کار اجے شکلا کہتے ہیں کہ ایک طرح سے دونوں ملکوں پر اندرونی دباؤ تھا۔

ان کے مطابق اس کے علاوہ چین کو یہ اندازہ نہیں تھا کہ بھارت کی زمینوں پر اس کے قبضے پر بھارت کی جانب سے اتنا شدید ردِ عمل ظاہر کیا جائے گا۔

اجے شکلا نے وائس آف امریکہ سے گفتگو میں کہا کہ بھارت نے فوجی، اقتصادی اور سفارتی اقدامات اٹھائے جس کا چین پر اثر پڑا۔ اس کے علاوہ چار ممالک کے درمیان عسکری اتحاد کو بھی متحرک کیا گیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ان کے خیال میں چین کی سمجھ میں یہ بات آئی ہو گی کہ بھارت نے جو ردِ عمل ظاہر کیا ہے۔ وہ اس کی توقع سے بہت زیادہ ہے۔ یہ بات چین کے مفاد میں نہیں تھی۔ اس لیے چین اسے حل کرنا چاہتا تھا۔ یہی وجہ ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان کمانڈر سطح کے مذاکرات میں یہ معاہدہ ہوا۔

‘ابھی یہ نہیں سمجھنا چاہیے کہ معاملہ مکمل حل ہو گیا ہے’

سابق ایئر چیف مارشل کپل کاک کا کہنا ہے کہ 16 جون کی خونی جھڑپ کے بعد 29 اگست کی رات میں بھارتی فوجیوں نے اپنے علاقے کی چوٹیوں پر قبضہ کر لیا جہاں سے پورے علاقے پر نظر رکھی جا سکتی تھی۔ یہاں تک کہ پینگونگ جھیل کے اطراف میں چینی جوان بھی ان کی نظروں میں آ گئے۔

لیکن ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ ابھی یہ نہیں سمجھ لینا چاہیے کہ یہ معاملہ مکمل طور پر حل ہو گیا ہے۔ ابھی اس میں وقت لگے گا اور خود وزیرِ دفاع راج ناتھ سنگھ نے کہا ہے کہ ابھی کئی تصفیہ طلب معاملے ہیں جن کو حل کرنا ہے۔

اس سوال پر کہ کیا اس معاہدے میں بھارت کو اپنی سابقہ پوزیشن سے ہٹنا پڑا ہے؟ اجے شکلا کہتے ہیں کہ ہاں بھارت کو ہٹنا پڑا ہے اور یہ بات اس کے مفاد میں نہیں ہے۔

ان کے مطابق پینگونگ سو جھیل کے جنوبی علاقے میں بھارتی فوج نے اچھی پوزیشنوں پر قبضہ کر رکھا تھا جس سے اس کو کافی فائدہ تھا۔

ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ جب بھی کوئی معاہدہ ہوتا ہے تو دونوں جانب سے کچھ نہ کچھ ترک کرنا پڑتا ہے۔ لہٰذا بھارت اور چین دونوں نے کچھ نہ کچھ چھوڑا ہے۔

اجے شکلا کے مطابق اس تنازع کے دوران بھارت کو اقتصادی اور فوجی نقصان ہوا ہے۔ بھارتی فوج کے دو ڈویژن پورے موسم سرما میں لداخ کے کیلاش رینج میں تعینات رہے۔ اس پر کافی اخراجات ہوئے۔ اس طرح کافی نقصان ہوتا ہے اور جانی نقصان بھی اٹھانا پڑتا ہے۔

‘بھارت کا زیادہ نقصان ہوا’

کپل کاک اجے شکلا کی بات سے اتفاق کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ اس دوران دونوں ملکوں کا نقصان ہوا ہے لیکن بھارت کو زیادہ نقصان اٹھانا پڑا۔ کیوں کہ بھارت ایک ترقی پذیر ملک ہے۔ اس کی معیشت چین کے مقابلے میں چھوٹی ہے اور بھارت کے پاس اتنا سرمایہ نہیں ہے کہ وہ چین جیسے ملک کا مقابلہ کر سکے۔

 

انہوں نے بتایا کہ رواں سال کے بجٹ میں بھی کہا گیا ہے کہ ہمیں چین سے مقابلہ کرنے کے لیے 30 ہزار کروڑ کا ساز و سامان لانا پڑا۔

ان کے مطابق یہ معاہدہ بھارت کے مفاد میں نہیں ہے۔ اسے فنگر فور سے، جہاں وہ پہلے قابض تھا، واپس نہیں آنا چاہیے تھا۔

انہوں نے مزید کہا کہ بھارت یہ کہتا رہا ہے کہ تمام متنازع علاقوں سے فوجیوں کی واپسی ہو گی لیکن معاہدے میں ایسا کچھ نہیں ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ بھی بھارت کی کمزوری ہے کہ فوجوں کی واپسی کے بارے میں چین کے بیان کے ایک روز بعد بھارت نے بیان دیا۔ حالاں کہ اس سلسلے میں ایک مشترکہ بیان جاری ہونا چاہیے تھا۔

دونوں ممالک کے درمیان یہ معاہدہ کیسے ہوا اس سلسلے میں چین کی حکومت کی جانب سے تاحال کوئی تفصیلی بیان سامنے نہیں آیا۔ بدھ کو چین کی وزارتِ دفاع کے ترجمان نے ایک بیان میں فوجیوں کی واپسی کی اطلاع دی تھی۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

وائس آف امریکہ

”ہم سب“ اور ”وائس آف امریکہ“ کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے مطابق ”وائس آف امریکہ“ کی خبریں اور مضامین ”ہم سب“ پر شائع کیے جاتے ہیں۔

voa has 1169 posts and counting.See all posts by voa

Leave a Reply