جرم صرف مہاجر کہنا ہے سمجھنا نہیں

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

ہجرت اپنے علاقے سے کسی اور علاقے کی جانب کوچ کر جانے کو کہا جاتا ہے۔ اس کوچ کر جانے کا مقصد و مدعا کچھ بھی ہو سکتا ہے۔ ہجرت بسلسلہ روز گار، کسی بھی قسم کے عشق کا سودا دل و دماغ میں سما جانا، حالات کی ناسازگاری کا نقل مکانی پر مجبور کر دینا، اپنے ہی وطن میں اپنوں کے ہاتھوں زندگی کو عذاب بنا دیا جانا، کسی عظیم مقصد کے فروغ کے لئے کسی دوسری سر زمین کو اپنے لئے زیادہ زرخیز محسوس کرنا یا پھر اللہ کے دین کی تکمیل کے لئے کسی ایسی سر زمین کا میسر آ جانا جہاں اللہ کے بتائے ہوئے قوانین کے مطابق اپنی زندگی گزارنا زیادہ مناسب لگتا ہو۔ اس جہان فانی میں ہر قسم کے ”مہاجر“ پائے جاتے ہیں جو اپنی اپنی احتیاجات کی تسکین کے لئے آج بھی اپنی اپنی سر زمین وطن کو خیر آباد کہہ کر دیار غیر میں زندگی کی سانسوں کو پورا کرنے میں مصروف ہیں۔

ہجرت کی ان سارے اقسام میں، اسلامی نقطہ نظر کو سامنے رکھا جائے تو صحیح معنوں میں ہجرت وہی کہلائی جاتی ہے جو اللہ کی راہ میں کی جائے اور ہجرت کرنے والا اپنا سب کچھ چھوڑ کر صرف اور صرف اللہ کے دین کی خاطر اپنے آبائی وطن کو خیر آباد کہہ کر کسی ایسی سر زمین کی جانب ہجرت کر جائے جہاں وہ اپنے مقصد کی تکمیل کر کے اللہ اور اس کے رسول کی خوشنودی حاصل کر سکے۔

ہجرت ایک ایسا عمل ہے جس کو پیغمبروں کا عمل کہا جاتا ہے کیونکہ پیغمبران کرام نے جب جب بھی یہ محسوس کیا کہ ان کے اوپر خود ان کے وطن کی سر زمین تنگ ہو چکی ہے تو وہ اپنے اصحاب کو ہمراہ لے کر کسی نہ کسی ایسے علاقے کی جانب منتقل ہو جانے پر مجبور ہوتے رہیں ہیں جہاں وہ اللہ کے حکم کے مطابق سکون کے ساتھ زندگی گزار سکیں۔

کسی گروہ انسانی کا ہجرت کے بعد ”مہاجر“ کہلانا ایک بہت ہی عام سی بات ہے۔ بے شک ”مہاجر“ کسی قوم کا نام نہیں ہوتا کیونکہ ہجرت ایک ”عمل“ کا نام ہے جو کسی یا بہت ساری قوموں کو اختیار کرنی پڑتی ہے۔ ہجرت کرنے والوں میں کئی اقوام یا قبیلے جب کسی دوسری سر زمین پر جا کر آباد ہوتے ہیں تو وہاں پر موجود ساری قومیں، قبیلے یا مختلف پہچانیں رکھنے والی آبادی ان نئے آنے والوں کی ایک پہچان بنالیا کرتی ہیں اور یہ پہچان ”مہاجر“ کہلا نے لگتی ہے۔

جب پاکستان بنا تو جو خطہ زمین ”پاکستان“ کہلایا، اس خطہ زمین پر دوسری جانب سے آنے والے ”مہاجر“ کہلائے جانے چاہئیں تھے لیکن ”پاکستانیوں“ نے وسعت قلبی سے کام لیتے ہوئے انھیں ایک دن کے لئے بھی ”مہاجر“ کہہ کر نہیں پکارا یا با الفاظ دیگر ان کی پہچان ہجرت کے حوالے سے نہیں بنائی گئی بلکہ وہ کئی دہائیوں تک ”ہندوستانی“ ہی کہلائے جاتے رہے۔ پاکستان بن جانے کے بعد اگر سب سے بڑی کوئی اور ہجرت دیکھنے میں آئی وہ افغانی تھے۔

افغانستان سے آنے والے افراد میں کئی قبیلے اور قومی شامل تھیں لیکن ان کی پاکستان میں جو پہچان بنی وہ ہجرت کے حوالے سے بنی جس کی وجہ سے وہ تین تین چار چار دہائیاں گزر جانے کے باوجود بھی ”افغان مہاجرین“ ہی کہلائے جاتے ہیں۔ 1947 کی تقسیم ہند کے بعد لاکھوں کی تعداد میں پاکستان آ کر آباد ہونے والے مہاجروں اور افغانستان کے حالات بہت زیادہ بگڑ جانے کے نتیجے میں پاکستان میں آباد ہونے والے افغان مہاجروں میں جو فرق تھا وہ ایک دوسرے سے بہت مختلف تھا۔

ہندوستان سے ہجرت کر کے آنے والے، خواہ بصد رضا و رغبت آئے ہوں یا حالات کی سنگینی نے ان کو نقل مکانی پر مجبور کیا ہو، اس کے پس پردہ وجہ صرف اور صرف ”پاکستان“ رہی۔ ہندوستان کی سر زمین کسی بھی ایسے مسلمان کو آج بھی برداشت کرنے کے لئے تیار نہیں جس کے دل میں ذرہ برابر بھی پاکستان کے لئے کوئی نرم گوشہ پایا جاتا ہو لہٰذا ایسے سارے مسلمان جو پاکستان کی تحریک میں شامل رہے، خواہ وہ با رضا و رغبت آئے ہوں یا حالات نے انھیں نقل مکانی پر مجبور کیا ہو، وہ پاکستان کی جانب چلے آئے۔ افغانستان سے آنے والوں کا معاملہ بالکل اس کے بر عکس ہے اس لئے کہ کوئی ایک بھی افغانی پاکستان میں اس لئے داخل نہیں ہوا کہ وہ افغانستان کو پاکستان بنانا چاہتا تھا۔ نیز یہ کہ وہ پہلے بھی عارضی طور پر یہاں آ کر آباد ہوئے تھے اور اب بھی مستقل سکونت ان کی سوچ سے بہت دور ہے۔

ہوا یوں کہ وہ ”ہندوستانی“ جو جانے کے لئے آئے ہی نہیں تھے ان کے دل میں ”مہاجر“ کہلانے کا ایسا سودا سمایا کہ وہ پورے پاکستان سے اپنی مخالفت مول لے بیٹھے۔ پاکستان کو بے شک ان سے یہ شکایت بجا ہی سہی لیکن اگر دیانتداری سے خود پاکستان اپنی کچھ امتیازانہ سوچ کا جائزہ لے لیتا یا اب بھی اپنی سوچوں کا اعادہ کر لے تو اس میں پاکستان اور سابقہ ”ہندوستانی“ ، دونوں کا بڑا فائدہ ہے۔ مہاجر کہلوائے جانے کی ضد نامناسب ہی سہی لیکن اتنی بھی نہیں کہ کسی ایسی قوم پر کچھ ایسی پابندیاں لگادی جائیں جو پاکستان میں آباد کسی بھی کمیونٹی پر لگائی جائیں تو رد عمل ایسا ہی آئے گا جو سابقہ ”ہندوستانیوں“ کہلائے جانے والوں کی جانب سے آ رہا ہے۔

بے شک ان کا ”مہاجر“ کہلائے جانے پر اڑ جانا بہت غلط ہی سہی لیکن ”کوٹا سسٹم“ جیسے قوانین بنا کر، ان پر سرکاری ملازمتوں کے دروازے بند کر کے، ان کے علاقوں کی ملیں، کارخانوں سے ان کو دور رکھ کر، سیکیورٹی اداروں میں مناسب نمائندگی نہ دے کر، سیاسی آزادیوں سے محروم رکھ کر، ان کے شہر سے حاصل ہونے والی آمدنیوں کو ان کے شہر پر خرچ نہ کر کے اور ان کے تعلیمی اداروں میں پاکستان بھر کے طالب علموں کا کوٹا بڑھا بڑھا کر ان کے لئے تعلیم جیسی سہولتوں کو مسدود کر کے، اگر عملی طور پر پورا پاکستان ان کو ان کو ”ہندوستانی“ بنانے پر مجبور کرتا جائے گا تو وہ ضرور یہ بات سوچنے پر مجبور ہو جائیں گے کہ بے شک وہ اپنے آپ کو مہاجر کہیں یا نہ کہیں مگر وہ ہیں تو ”مہاجر“ ہی۔

ساری بحث کا ما حاصل یہی ہے کہ پاکستان کو اپنے کوٹا سسٹم سمیت، ہر امتیازانہ رویے کو بدلنا ہوگا ورنہ باہم مشورے نہ ہونا دلوں کی دوریاں تو بڑھا سکتا ہے، انھیں قربتوں میں تبدیل نہیں کر سکتا۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *