نرسوں کا عالمی دن: طبی خدمات انجام دینے والوں نے عالمی وبا کے دوران زندگی کیسے بسر کی

صوفیہ بٹیِزا - بی بی سی ورلڈ سروس

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  


Paolo Miranda and baby

Paolo Miranda
بیٹی وِکٹوریا کی پیدائش نے پاؤلو مرینڈا کو تھکان اور کام کے دروان پہنچنے والے صدمات کو جھیلنے میں مدد دی

دنیا بھر میں کووڈ۔19 سے جنگ میں نرسیں پیش پیش رہیں، مگر اس کام نے ان پر گہرے منفی ذہنی اور جسمانی اثرات بھی مرتب کیے ہیں۔ نرسوں کے بین الاقوامی دن کے موقع پر اٹلی میں طبّی نگہداشت فراہم کرنے والوں نے، جنھوں نے وبا کے آغاز پر بی بی سی سے بات کی تھی، اب بتایا کہ اس دوران پہنچنے والے صدمات سے نمٹنے کے لیے انھوں نے کیا تدابیر اختیار کیں۔

ہم نے جو دیکھا ہے وہ نہیں بھولتا

nurses

Paolo Miranda
عالمگیر وبا سے نمٹنے کے دوران پاؤلو مرینڈا نے اپنے رفقائے کار کی تصاویر کھینچیں

انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں کام کرنے والے نرس پاؤلو مرینڈا نے کہا: ’میں نے کبھی نہیں سوچا تھا کہ مجھے میری سابقہ زندگی واپس مل سکے گی۔‘

انھوں نے اس عرصے کے دوران درپیش صورتحال کو تصاویر میں قید کرنے کا فیصلہ کیا۔

تصاویر سے ظاہر ہوتا ہے کہ جب اس صورتحال کو نیو نارمل یا نیا معمول سمجھ لیا گیا اور لوگوں نے انھیں ہیرو ماننا چھوڑ دیا تو ان کے رفقائے کار وبا کی پہلی لہر سے کیسے نبرد آزما ہوئے۔

انھوں نے بی بی سی کو بتایا: ’میں اس وقت کو کبھی بھولنا نہیں چاہوں گا۔ جلد ہی یہ سب تاریخ کا حصہ بن جائے گا۔ اگرچہ ہنگامی صورتحال پہلی کی سی نہیں رہی، مگر ہمیں اپنے چاروں اطراف اندھیرا نظر آتا ہے۔

’ایسا محسوس ہوتا ہے جیسے ہم زخم خوردہ ہیں۔ ہم نے جو دیکھا وہ ہمارے اندر رچ بس گیا ہے۔‘

Baby Vittoria and her mum

Paolo Miranda
پاؤلو نے اپنی بیٹی کا نام وکٹوریا رکھا جس کے معنی فتح ہے

اس دوران پاؤلو کے لیے ایک بڑی تبدیلی وقوع پذیر ہوئی: وہ باپ بن گئے ہیں۔

’ہم نے اپنی بیٹی کا نام وکٹوریا رکھا ہے، جس کا مطلب ہے فتح۔ ایسی تباہ کن صورتحال کے اندر دنیا میں ایک نئی زندگی کو جنم دینے نے ہماری بہت ہمت بندھائی۔‘

پاؤلو کا کہنا ہے کہ گذشتہ برس کے دوران پیش آنے والے واقعات کے منفی اثرات اب بھی برقرار ہیں اور وہ صدمے سے نہیں نکل پائے ہیں۔ انھوں نے بتایا کہ اس عرصے میں ان کے کئی رفقائے کار نے بچے پیدا کرنے کا فیصلہ کیا، جو موت اور صعوبتوں کے سامنے ہتھیار نہ ڈالنے کا اعلان تھا۔

’میری بیٹی اس کیفیت سے نکلنے میں میری بہت مدد کر رہی ہے، میں گھر لوٹتا ہوں، اسے دیکھتا ہوں، جواب میں وہ مسکرا دیتی ہے، اور میری تمام تھکن دور ہو جاتی ہے۔‘

یہ میری جیت تھی

فروری 2020 میں اٹلی عالمی وبا کا مرکز بن گیا تھا۔

مارٹینا بینڈیٹی نے، جو انتہائی نگہداشت کے شعبے میں نرس ہیں، بی بی سی کو بتایا کہ اس وقت ان کا یقین متزلزل ہوگیا تھا اور وہ یہ سوچنے پر مجبور ہو گئی تھیں کہ انھیں نرس رہنا بھی چاہیئے یا نہیں۔

مگر پھر ان کا یقین بحال ہوگیا اور اب وہ اپنے پیشے کو بہت ’شاندار‘ سمجھتی ہیں، مگر ساتھ ہی خبردار کرتی ہیں کہ یہ ہر ایک کے بس کی بات نہیں ہے۔

’مجھے محسوس ہوتا ہے جیسے میری عمر دس سال زیادہ ہوگئی ہے۔ میں بہت شوخ اور چنچل ہوا کرتی تھیں ۔۔۔ وہ شخصیت اب نہیں رہی۔‘

Martina Benedetti

Martina Benedtti/DoDo
مارٹینا بینیڈیٹی کے بقول انھیں محسوس ہوتا ہے جیسے وبا نے انھیں دس سال بوڑھا کر دیا ہے

انھوں نے لکھنے میں پناہ ڈھونڈی اور سونے سے پہلے اپنے جذبات کو قلمبند کرنا شروع کیا۔ جو بعد میں ایک ای بک (برقیاتی کتاب) کی شکل میں شائع ہوا۔

ماریٹنا کہتی ہیں کہ ان مریضوں کے ساتھ کام کرنا مشکل تھا جو کوروناوائرس کو ماننے کے لیے تیار نہیں تھے، مگر جس نے انھیں انتہائی نگہداشت کے شعبے میں پہنچا دیا تھا۔

’مجھے ایسے مریضوں کا علاج کرنا پڑا جو سوشل میڈیا پر دوسروں کو ورغلاتے تھے کہ ماسک نہ پہنیں اور نرسوں کو جھوٹا کہتے تھے۔‘

مارٹینا کہتی ہیں کہ وہ بعض ایسے مریضوں کی سوچ بدلنے میں کامیاب رہی ہیں۔

’ایک منکرِ کووِڈ نے ہسپتال سے خارج ہونے کے بعد فیس بک پر بالکل اس کے برعکس پوسٹ کی جیسی وہ پہلے کرتے تھے۔ یہ میرے لیے جیت سے کم نہ تھا۔‘

میں نے وہ توانائی محسوس کی جس کا مجھے علم نہ تھا

ڈاکٹر سرینا بوریلو کا کہنا ہے کہ عام طور پر مریضوں اور ان کے رشتہ داروں کو ایمرجنسی پر بوجھ سمجھا جاتا ہے کیونکہ وہ ہنگامی حالت سے نمٹنے کی رفتار سست کر دیتے ہیں۔ مگر انھیں سمجھانے، ان پر ذمہ داری ڈالنے اور ان کے ساتھ خوشی اور غم شریک کرنے سے وہ آپ کی ٹیم کے اضافی رکن بن جاتے ہیں۔ اور اس طرح کام آسان ہو جاتا ہے۔‘

Elisa enjoys the mountains

BBC
الیزا نانینو کہتی ہیں کہ گذشتہ سال نے انھیں توانائی بخشی

ایک تحقیق کے مطابق وبا کے دوران نوے فیصد نرسوں نے کبھی اپنا پیشہ بدلنے کے بارے میں نہیں سوچا بلکہ انھیں اس پر فخر کا احساس ہوا۔

الیزا نانینو کہتی ہیں ’وبا نے اس بات کی توثیق کی کہ میں صحیح پیشے سے وابستہ ہوں۔ مجھے وہ توانائی ملی جو میں نے پہلے کبھی محسوس نہیں کی تھی۔ جب میں نے لوگوں کو مرتے دیکھا تو میں روئی، مگر میں نے لوگوں کی زندگی بھی بچائی۔ یہ ایک انمول احساس ہے۔‘

الیزا کہتی ہیں کہ گھر آکر بھی جب ان کی توجہ کام پر سے نہیں ہٹتی تھی تو وہ کھانا پکانا شروع کر دیتی تھیں جس سے انھیں مدد ملی۔ یہ کھانا وہ ہسپتال میں اپنے رفقائے کار میں بانٹ دیتی تھیں۔

اپنے ساتھی عملے کو ان کا سب سے اہم مشورہ یہ ہی ہوتا تھا کہ وہ جنھیں نہیں بچا سکے اس کے لیے وہ اپنے اندر احساس جرم پیدا نہ ہونے دیں۔

’وبا کے دوران سب کی جان بچانا ناممکن ہے۔ آپ کے بس میں جو ہے وہ کریں، مگر کسی احساس جرم کے ساتھ گھر نہ جائیں۔‘

Two hospital members of staff embrace

PAOLO MIRANDA
مارٹینا کہتی ہیں کہ مدد کے لیے ایک دوسرے پر انحصار ضروری تھا

مارٹینا کے لیے دوستوں یا خاندان والوں سے بات کرنا مشکل تھا کیونکہ جس کیفیت سے وہ گزر رہی تھیں وہ اس کا پورا ادراک نہیں کر سکتے تھے۔ وہ کہتی ہیں کہ یہ ان کے رفقائے کار تھے جو ایسے وقت میں کام آئے۔

’کسی بحران سے نمٹنے والی نرسوں کو میرا مشورہ یہ ہے کہ مل کر کام کریں۔

’جب آپ ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوں تو اسے چھپانا وقت کا ضیاع ہے۔ اپنے طور پر آپ کو کچھ حاصل نہ ہوگا۔ رفقائے کار سے بات کریں، ہو سکتا ہے کہ وہ بھی ایسی ہی کیفیت سے گزر رہے ہوں۔‘

ذہنی سکون

ڈاکٹر بریلو کو خدشہ ہے کہ عالمی وبا کے نتیجے میں بہت سے ڈاکٹروں اور نرسوں کو ایسے تجربات کا سامنا رہے گا جن کے منفی اثرات کئی مہینوں بلکہ سالوں تک قائم رہ سکتے ہیں۔

One hospital staff member consoles another in a corridor

Sofia Bettiza
ڈاکٹر بریلو کہتی ہیں کہ ’جب بالآخر آپ کو جو ہوا اس کے بارے میں سوچنے کا وقت ملتا ہے تو لوگ وہ سب کچھ بھولنے لگتے ہیں، اور آپ خود کو زیادہ ہلکان محسوس کرتے ہیں۔‘

ڈاکٹر بریلو کہتی ہیں کہ ‘جب بالآخر آپ کو جو ہوا اس پر سوچنے کا وقت ملتا ہے تو لوگ وہ سب کچھ بھولنے لگتے ہیں، اور آپ زیادہ ہلکان محسوس کرتے ہیں۔’

وہ کہتی ہیں کہ ہسپتالوں کو چاہیے کہ اپنے عملے کے لیے نفسیاتی مدد فراہم کرنے کے انتظامات کریں اور انھیں اپنا خیال رکھنے کی ترغیب دیں۔

اس میں اپنے مشاغل کو، جو وبا کی وجہ سے چھوٹ گئے ہیں، پھر سے شروع کرنا، اہل خانہ کے ساتھ وقت گزارنا، اور کھیل کود جیسی سرگرمیاں شامل ہیں۔ وہ خود بھی ایسا ہی کرنے کا ارادہ رکھتی ہیں۔

’میں اپنے شوہر کے ساتھ پہاڑوں پر جانے کا سوچ رہی ہوں، کہیں فطرت کے قریب تر، سب سے الگ تھلگ، جہاں میں اپنا ذہنی سکون پھر سے تلاش کر سکوں۔‘

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 19456 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp