یوٹیوب کے فیچر ‘شارٹس’ پر مقبول ویڈیو بنانے والوں کے لیے فنڈ کا اعلان

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

یوٹیوب کی جانب سے کرئیٹر فنڈ کا اعلان کرنے کا مقصد صارفین کی توجہ مبذول کرانا ہے۔
ویب ڈیسک — ویڈیو اسٹریمنگ پلیٹ فارم یوٹیوب نے منگل کو اپنے مختصر ویڈیو فیچر ‘شارٹس’ پر مقبول ویڈیوز بنانے والے صارفین کے لیے 10 کروڑ ڈالرز کے کرئیٹر فنڈ کا اعلان کیا ہے۔

یوٹیوب کی جانب سے کرئیٹر فنڈ کا اعلان کرنے کا مقصد صارفین کی توجہ مبذول کرانا ہے۔

معروف ویڈیو اسٹریمنگ سائٹ یوٹیوب کا کہنا ہے کہ کرئیٹر فنڈ کا آغاز آئندہ آنے والے مہینوں میں ہو گا جب کہ پلیٹ فارم رواں برس اور 2022 میں مقبول مختصر ویڈیوز بنانے والے صارفین کو رقم کی ادائیگی کرے گا۔

یوٹیوب کا فیچر ‘شارٹس’ کیا ہے؟

یوٹیوب کا فیچر شارٹس مقبول لپ سنکنگ ایپ ٹک ٹاک ہی کی طرح ہے جہاں صارفین 60 سیکنڈز کے دورانیے کی مختصر ویڈیو بنا سکتے ہیں۔

صارفین شارٹس کے ذریعے بنائی جانے والی ویڈیوز میں اپنی من پسند آڈیو اور ٹیکسٹ بھی لگا سکتے ہیں جب کہ وہ ویڈیو کی اسپیڈ (رفتار) کم زیادہ بھی کر سکتے ہیں۔

یوٹیوب کی جانب سے اپنے مختصر فیچر کے لیے 10 کروڑ ڈالرز کے کرئیٹر فنڈ کا اعلان اس وقت سامنے آیا ہے جب سوشل میڈیا پلیٹ فارم نوجوان کونٹینٹ کریئٹرز (مواد تخلیق کرنے والے) کی توجہ سمیٹنے کی دوڑ میں لگے ہوئے ہیں۔

سب سے پہلے مختصر ویڈیو بنانے کا ٹرینڈ ٹک ٹاک ایپ نے پیش کیا تھا جس کے بعد فیس بک کی زیرِ ملکیت ایپ انسٹاگرام نے مختصر ویڈیوز بنانے کا فیچر ‘ریلز’ اور اسنیپ چیٹ نے ‘اسپاٹ لائٹ’ فیچر متعارف کرایا۔

یوٹیوب کا کہنا ہے کہ وہ ہر مہینے اپنے اس نئے کرئیٹر فنڈ کے تحت ہزاروں ایسے کرئیٹرز جن کی ویڈیوز سب سے زیادہ مقبول ہوں گی، انہیں رقم کی ادائیگی کرے گی۔

تاہم یوٹیوب نے یہ واضح نہیں کیا کہ وہ ایک کانٹینٹ کرئیٹر کی ویڈیو مقبول ہونے پر انہیں کتنی رقم دے گی۔

یاد رہے کہ جیسے جیسے مختصر ویڈیو کے فیچرز کی مقبولیت میں دن بہ دن اضافہ ہوتا جا رہا ہے اسی بات کو مدِ نظر رکھتے ہوئے کمپنیاں زیادہ سے زیادہ صارفین کی توجہ حاصل کرنے کے لیے فنڈز کا اعلان کر رہی ہیں۔

جولائی میں ٹک ٹاک ایپ نے اپنے کرئیٹرز کے لیے ‘کرئیٹر فنڈ’ کا اعلان کیا تھا جب کہ اسنیپ چیٹ نے بھی اپنے مختصر ویڈیو فیچر اسپاٹ لائٹ پر صارفین کی مقبول ہونے والے ویڈیوز کے لیے 10 لاکھ ڈالرز مختص کیے تھے۔

دوسری جانب یوٹیوب کا مزید کہنا ہے کہ وہ ‘شارٹس’ پر اشتہارات کی آزمائش کا آغاز بھی کرے گی۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

وائس آف امریکہ

”ہم سب“ اور ”وائس آف امریکہ“ کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے مطابق ”وائس آف امریکہ“ کی خبریں اور مضامین ”ہم سب“ پر شائع کیے جاتے ہیں۔

voa has 2182 posts and counting.See all posts by voa

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *