واہ ری جمہوریت!


اختیار کی لڑائی میں مال غنیمت کی صورت عوام کس کے ہاتھ آئیں گے، طاقت کے حصول کی جنگ میں کس کا ہتھیار بنیں گے اور کس کا ایندھن۔۔۔ اس سے کسی کو کچھ مطلب نہیں۔

مسندِ اختیار میں کون بادشاہ گر ہو گا غربت کی لکیر سے نیچے بسنے والوں کا مسئلہ یہ نہیں بلکہ نارسائی کا دکھ ہے جس کا مداوا طاقتوروں کے پاس نہیں۔

بھوک افلاس اور ننگ کے مارے عوام پر حکمرانی کا خواب سب کا ہے مگر عوام کا ترجمان کون؟ اقتدار اور اختیار کی کہانی کے سب سے اہم کردار وہ ہیں جنھیں بھوک مٹانے سے فرصت نہیں۔

جن کے نام پر سیاست چمکائی جاتی ہے اور اختیار کی بساط بچھائی جاتی ہے وہی دراصل اس کھیل میں شامل نہیں۔ جن کی ہاتھوں کی لکیروں سے اقتدار چُرایا جاتا ہے وہی اختیار کے ہاتھوں بے بس تقدیر کا تماشا دیکھ رہے ہیں۔

سیاسی میدان کے گھوڑوں میں کون آگے ہے اور کون پیچھے، عوام کے پاس سوچنے کو اب اتنا وقت کہاں۔ اختیار، اقتدار اور طاقت کے اس کھیل میں سب ہارنے والے عوام صرف اور صرف زندہ باد، مردہ باد کے نعروں لیے استعمال کیے جاتے ہیں۔

اسلام آباد کے گرم آتش دانوں والے بڑے ڈرائنگ رومز میں عوام کی تکلیف میں غم غلط کرنے والی اشرافیہ شاید اس بات سے بے خبر ہے کہ وطن عزیز کی بڑی آبادی زندگی کی سانسوں کو رواں رکھنے کے لیے کس کرب سے گُزر رہی ہے۔

معاشی اعشاریوں میں آگے پیچھے لگنے والے صفر کی داستان میں منفی ہو جانے والے عوام، مثبت اعشاریوں کی آس میں زندگی گزار رہے ہیں۔ تنگ داماں، تنگ دست اور کشادہ دامن تہی دست ہو رہے ہیں مگر پاکستان کا سب سے بڑا مسئلہ صرف آرمی چیف کی تعیناتی ہے۔

یوں تو گذشتہ پچہتر برس سے عوام کی تقدیر کندھے پر سجے ستاروں کے ہاتھ میں ہی رہی ہے مگر اب یوں محسوس ہوتا ہے کہ گویا کوئی مقدر کا سکندر ہے، جس کی تلاش جاری ہے۔

وزیراعظم کی مشکل دیکھ کر لگتا ہے کہ اس ایک دن کے لیے مسند اقتدار پر بیٹھنے والے شہباز پرواز کے پَر اُتار بیٹھے ہیں۔ شُتر مرغ کی مانند ریت میں سر دبائے سیاسی قیادت سورج سے آنکھیں چار کرنے سے کترا رہی ہے اور وزیراعظم یوں خاموش ہیں جیسے کسی قیامت کا انتظار ہے، گزرے گی تو حساب کتاب کا وقت آئے گا۔

سویلین بالادستی اور ’ووٹ کو عزت‘ دلوانے کا خواب دکھانے والی سینیئر قیادت اپنے حقوق بچانے کی کوشش میں ہے۔

آرمی چیف کی تقرری کے لیے جن مسائل کا سامنا ہے اُس کا احاطہ صرف یوں کیا جا سکتا ہے کہ تاحال جی ایچ کیو سے آرمی چیف کی تعیناتی کی ایک سمری تک منگوائی نہیں جا سکی۔ جس ملک میں وزیراعظم کا اختیار سمری منگوانے تک بھی نہ ہو اُس ملک میں سویلین بالادستی دیوانے کا خواب ہی ہو سکتی ہے۔

گذشتہ برس اکتوبر میں عمران خان نے بطور وزیراعظم ناں ناں کرتے ڈی جی آئی ایس آئی کی تقرری کی مگر اپنی پسند اور اپنے وقت پر، یہاں تک کہ آرمی چیف قمر جاوید باجوہ کو استعفے کی دھمکی دینا پڑی مگر چونکہ عمران خان کی پشت مضبوط تھی لہذا انھوں نے پورا اختیار استعمال کیا مگر یہ اختیار شہباز شریف استعمال کیسے کریں اس کے لیے پشت اور حوصلہ دونوں درکار ہیں، جو فی الحال دستیاب نہیں۔

طاقت اور اختیار کے اس آخری مرحلے میں مقاصد اور اہداف سامنے رکھے گئے ہیں۔ آئین، قانون اور اصول کی بجائے ذاتی مفادات کے حصول کا لائحہ عمل اور طریقہ کار کون اور کہاں طے کر رہا ہے یہی اصل سوال ہے۔ طاقت کے کئی ایک مراکز موجود ہوں تو نتائج عوام کی تقسیم اور تفریق کی صورت ہی ہو سکتے ہیں۔

طاقت کے جو اصول گذشتہ چند برسوں میں متعارف ہوئے ہیں اُن پر عملدرآمد کرنا اور تخلیق کردہ ’ہائبرڈ رجیم‘ کو چیلنج کرنا کم از کم روایتی سیاست دانوں کے بس کی بات نہیں۔

تعیناتی اور اُس کے گرد گھومتی سیاست جی ٹی روڈ کے سفر پر ہو یا ایوان اقتدار میں براجمان، اصل اختیار کہیں اور ہے۔ عمران خان اُس اختیار کو چیلنج کر رہے ہیں لیکن عوام کو طاقت دینے کے لیے نہیں بلکہ طاقت کا توازن اپنے حق میں کرنے کے لئے جبکہ اتحادی جماعتیں اسٹبلشمنٹ کو مائل کرنے لئے کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں کر رہیں۔

واہ ری جمہوریت، اس سے بہتر ہے کہ پارلیمان کو تالا لگا کر عوام کے سامنے آئین کی سربلندی کے نعرے نا لگائے جائیں۔

پہلی، دوسری بلکہ تیسری دُنیا کا کون سا ایسا ملک ہے جہاں آرمی چیف کی تعیناتی دنوں نہیں مہینوں زیر بحث رہتی ہو، جہاں کاروبار مملکت روک دیا جاتا ہو اور صرف ’جادوئی تاریخوں‘ کا انتظار کیا جائے۔ جہاں معیشت، سیاست، سماج سب ایک طرف اور کون بنے گا آرمی چیف کا راگ دوسری طرف صبح شام الاپا جا رہا ہو۔

کہنے کو ہم عوامی جمہوریہ میں بستے ہیں تاہم عوام جمہوریہ سے کوسوں دور۔۔۔ کہنے کو جمہوریت بھی ہے مگر جمہور کی حکمرانی صرف آئین کی کتاب میں مقید اور کہنے کو ملک میں نظام پارلیمانی ہے مگر حکمرانی کسی اور کی۔

کچھ عرصہ قبل کالم میں لکھا تھا کہ وطن عزیز میں آرمی چیف منتخب کرنے کے لیے وزیراعظم تعینات کیے جاتے ہیں اور اب اس کا عملی مظاہرہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔

ستم ظریفی یہ ہے کہ نہ ہم نے ماضی سے کچھ سیکھا اور نہ ہی مستقبل میں سیکھنے کا کوئی ارادہ رکھتے ہیں۔


Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments