گلگت بلتستان کے حلقہ نمبر 1 کی محرومیاں

شہری اور دیہی آبادی پہ محیط گلگت بلتستان کا یہ حلقہ انتہائی اہمیت کا حامل ہونے کے ساتھ ساتھ انتہائی پسماندہ بھی ہے۔ اس حلقے کی اہمیت اس لیے ہے کہ گلگت شہر کا ایک قابل ذکر رقبہ اس حلقے میں شامل ہے اور پسماندہ اس لیے کہ یہاں کی شہری اور دیہی آبادی دور جدید میں بھی بنیادی اور لازمی حقوق سے محروم ہے۔  اس حلقے کے نالوں سے پائپ لائنز کے ذریعے دوسرے حلقوں کے لیے پانی تو جاتا ہے مگر حلقے کے عوام صاف پانی کو ترستے ہیں۔یہاں کی آبادی کا شمار قدیم آبادی میں ہوتا ہے مگر زمینوں کے سرکاری ریٹس دوسرے حلقوں کی بنجر زمینوں سے بھی بہت کم ہیں۔ ایجوکیشن کے میدان میں کوئی ایک بھی قابل ذکر سکول اور کالج اس حلقے میں موجود نہیں ہیلتھ سیکٹر اور پبلک ٹرانسپورٹ کے حالات بھی زیادہ مختلف نہیں ہیں اور مزے کی بات تو یہ ہے کہ یہاں کے لوگ اپنے ووٹوں کے ذریعے جس نمائندے کو اسمبلی بیجتے ہیں اسی سے ہی ملنے کو ترستے ہیں۔ ایسی صورتحال میں پانی، بجلی، تعلیم، ٹرانسپوراٹ اور زمینوں کے سرکاری ریٹس کا نہ ہونے کے برابر ہونا زیادہ ناموافق نہیں لگتا۔

Read more

گلگت بلتستان کے باسی کس کے ساتھ کھڑے ہوں؟

ایک وقت تھا جب گلگت میں شیعہ سنی فسادات ہوتے تھے۔ ٹارگٹ کلنگز ہوتی تھیں۔ جانے انجانے میں عام آدمی بھی مخالف مسلک کے بے گناہ لوگوں کے قتل کو جائز سمجھنے لگا تھا۔ رشتہ داروں سے بھی ترک تعلق صرف اس وجہ کیا جاتا تھا کہ ان کا خونی رشتہ مسلکی رشتہ سے مطابقت…

Read more