مستنصر حسین تارڑ آج 79 برس کے ہوگئے

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اردو کے سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مصنف مستنصر حسین تارڑ آج 79 برس کے ہوگئے۔

میں نے 1977 میں روزنامہ ” امروز‘’ سے صحافت کا آغاز کیا تو ان دنوں وہ گوالمنڈی میں اپنے والد چودھری رحمت خاں تارڑ کی قائم کردہ دکان کسان اینڈ کمپنی پر بیٹھا کرتے تھے۔ کئی بار وہاں حاضری دی اور گوالمنڈی کی ملائی والی چائے کا لطف اٹھایا۔ پھر ٹی ہاؤس میں بھی ملاقات رہی۔ اب کبھی کبھار کسی تقریب میں ملاقات ہوجاتی ہے۔ لیکن محبت کا تعلق ملاقات کا محتاج نہیں

مستنصر حسین تارڑ یکم مارچ 1939ء کو لاہور میں پیدا ہوئے۔ آبائی تعلق گجرات سے ہے۔ والد رحمت خان تارڑ گجرات کے ایک کاشت کار گھرانے سے تعلق رکھتے تھے۔ مستنصر حسین تارڑ کا بچپن بیڈن روڈ پر واقع لکشمی مینشن میں گزرا جہاں سعادت حسن منٹو پڑوس میں رہتے تھے۔ اُنھوں نے مشن ہائی اسکول، رنگ محل اور مسلم ماڈل ہائی اسکول میں تعلیم حاصل کی۔ میٹرک کے بعد گورنمنٹ کالج میں داخلہ لیا۔ ایف اے کے بعد برطانیہ اور یورپ کے دوسرے ممالک کا رخ کیا، جہاں فلم، تھیٹر اور ادب کو نئے زاویے سے سمجھنے، پرکھنے اور برتنے کا موقع ملا۔ پانچ برس وہاں گزارے اور ٹیکسٹائل انجنئیرنگ کی تعلیم حاصل کرکے وطن واپس لوٹے۔

1957ء میں شوقِ آوارگی انھیں ماسکو، روس میں ہونے والے یوتھہ فیسٹول لے گیا۔ (اُس سفر کی روداد 1959 میں ہفت روزہ قندیل میں شایع ہوئی۔ )۔ اس سفر پر ہی ناولٹ ”فاختہ“ لکھا۔ یہ قلمی سفر کا باقاعدہ آغاز تھا۔

ٹی وی
پاکستان لوٹنے کے بعد جب ان کے اندر کا اداکار جاگا، تو انھوں نے پی ٹی وی کا رخ کیا۔ پہلی بار بہ طور اداکار ”پرانی باتیں“ نامی ڈرامے میں نظر آئے۔ ”آدھی رات کا سورج“ بہ طور مصنف پہلا ڈراما تھا، جو 74ءمیں نشر ہوا۔ آنے والے برسوں میں مختلف حیثیتوں سے ٹی وی سے منسلک رہے۔ جہاں کئی یادگار ڈرامے لکھے، وہیں سیکڑوں بار بہ طور اداکار کیمرے کا سامنا کیا۔ پاکستان میں صبح کی نشریات کو اوج بخشنے والے میزبانوں میں ان کا شمار ہوتا ہے۔ بچوں کے چاچا جی کے طور پر معروف ہوئے۔ 2014ء میں ایکسپریس ٹی وی پر ”سفر ہے شرط“ کے نام سے سفر نامہ پروگرام اور جیو ٹی وی پر شادی کے حوالے سے ایک پروگرام بھی کیا۔
مستنصر صاحب نے خود بھی ڈرامے تحریر کیے جن میں قابل ذکر یہ ہیں :
شہپر
ہزاروں راستے
پرندے
سورج کے ساتھہ ساتھہ
ایک حقیقت ایک افسانہ
کیلاش
فریب

سفرنامے
1969 ء میں وہ یورپی ممالک کی سیاحت پر روانہ ہوئے، واپسی پر ”نکلے تری تلاش میں“ کے نام سے سفرنامہ لکھا۔ یہ 71ءمیں شائع ہوا۔ قارئین اور ناقدین دونوں ہی نے اسے ہاتھوں ہاتھہ لیا۔ اِس کتاب کو ملنے والی پذیرائی کے بعد انھوں نے پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔ اگلا سفر نامہ ”اندلس میں اجنبی“ تھا۔ 42 برسوں میں 30 سفرنامے شائع ہوئے۔ 12 صرف پاکستان کے شمالی علاقوں کے بارے میں ہیں۔ پاکستان کی بلند ترین چوٹی ”کے ٹو“ پر ان کا سفرنامہ اس قدر مقبول ہوا کہ دو ہفتے میں پہلا ایڈیشن ختم ہو گیا۔ اِس علاقے سے اُن کے گہرے تعلق کی بنا پر وہاں کی ایک جھیل کو ”تارڑ جھیل“ کا نام دیا گیا۔

اوائلِ عمر میں سوویت یونین کے سفرنامے ”لنڈن سےماسکو تک“سے انہوں نے سفر ناموں کی ابتدا کی۔ اس کے بعد ”نکلےتیری تلاش میں“ سے انہوں نے اردو ادب میں سفرنامہ لکھنےکے لیےایک ایسا انداز متعارف کروایا جس کی اقتدا میں کئی سفرنامے لکھے گئے۔ انہوں نے سفرنامہ کو دلچسب، پُر مزاح، آسان اور سلیس تحریر سے ادب میں سفرناموں کے قارئین کی ایک کثیر تعداد پیدا کی۔ منظر نگاری کرتے ہوئے وہ الفاظ کی ایسی جادوئی بنت کرتے ہیں کے پڑھنے والا اس مقام و منظر سے بھرپور واقفیت حاصل کرلیتا ہے۔ “نکلے تیری تلاش کے بعد انہوں نے مڑ کر نہیں دیکھا اور اندلس میں اجنبی، خانہ بدوش، کے ٹو کہانی، نانگا پربت، یاک سرائے، رتی گلی، سنو لیک، چترال داستان، ہنزہ داستان، شما ل کے سفرناموں سے ایسے سفرنامے تحریر کیے جن کو پڑھ کر کئی لوگ آوارہ گرد بن کر ان مقاموں کو دیکھنے ان جگہوں تک جا پہنچے۔ “غار حرا میں ایک رات اور منہ ول کعبہ شریف“ ان کے وہ سفر نامے ہیں جوحجاز مقدس کے بارے میں تحریرکیے گئے ہیں۔ “نیو یارک کے سو رنگ، ماسکو کی سفید راتیں، پتلی پیکنگ کی، سنہری الو کا شہر بھی یادگارسفر نامے کہے جا سکتے ہیں۔

ناول نگاری

سفرنامے کے میدان میں اپنا سکہ جما کر ناول نگاری کی جانب آ گئے۔ اولین ناول ”پیار کا پہلا شہر“ ہی بیسٹ سیلر ثابت ہوا۔ اب تک اِس کے پچاس سے زائد ایڈیشن شائع ہوچکے ہیں۔ یوں تو ہر ناول مقبول ٹھہرا، البتہ ”راکھہ‘‘ اور “بہاؤ” کا معاملہ مختلف ہے۔ خصوصاً “بہاؤ” میں اُن کا فن اپنے اوج پر نظر آتا ہے، پڑھنے والوں نے خود کو حیرت کے دریا میں بہتا محسوس کرتا ہے۔ اِس ناول میں تارڑ صاحب نے تخیل کے زور پر ایک قدیم تہذیب میں نئی روح پھونک دی۔ “بہاؤ” وادی سندھ کے ایک شہر کا احوال ہے جو ایک قدیم دریا سرسوتی کے معدوم اور خشک ہوجانے کا بیان ہے، جس سے پوری تہذیب فنا کے گھاٹ اتر جاتی ہے۔ ناول کی زبان انتہائی منفرد ہے اس میں سندھی، سنسکرت، براہوی اور سرائیکی زبان کے الفاظ جا بجا ملتے ہیں جس سے ناول کا طرزِ تحریر اور اسلوب منفرد ہو جاتا ہے۔ “بہاؤ” کی طرزِ تحریرو زبان کی مثال ملنا مشکل ہے، یہ ایک انوکھی تخلیق ہے بقول مصنف یہ ایک(Myth )متھ ہے۔ “بہاؤ” میں مستنصر حسین تارڑ ماہر بشریات Anthropoligist نظر آتے ہیں۔

راکھ کو 1999ء میں بہترین ناول کے زمرے میں وزیر اعظم ادبی ایوارڈ کا مستحق گردانا گیا، جس کا بنیادی موضوع سقوط ڈھاکا اور بعد کے برسوں میں کراچی میں جنم لینے والے حالات ہیں۔ ”قلعہ جنگی“ نائن الیون کے بعد افغانستان پر امریکی حملے کے پس منظر میں لکھا گیا۔ اردو کے ساتھ پنجابی میں بھی ناول نگاری کا کام یاب تجربہ کیا۔ اس سفر میں افسانے بھی لکھے۔ ان کی شناخت کا ایک حوالہ کالم نگاری بھی ہے، جس میں ان کا اسلوب سب سے جداگانہ ہے۔ ’خس و خاشاک زمانے‘ ضخیم ناول ہے جس میں دو خاندانوں کی کئی نسلوں پر پھیلی داستان بیان کی گئی ہے۔

“اے غزال شب“ سوویت یونین کے زوال کے بعد، پھیکے پڑچکے سرخ رنگ کی کہانی ہے جس میں لینن کے مجسمے پگھلا کر صلیبیں بنائی جا رہی ہیں اور کرداروں میں اُکتاہٹ بڑھ رہے ہے۔ اکتاہٹ، جو ان میں واپس اپنے وطن آنے کی خواہش جگاتی ہے، وہاں قیام کرنے کی غرض سے نہیں کہ اب وہاں اُن کا اپنا کوئی نہیں، فقط نامعلوم میں جھانکنے کے لیے۔ اور جب وہ یہ فیصلہ کرتے ہیں، تو شوکی جھوٹا سامنے آتا ہے۔ ایک عجیب و غریب کردار جس کا تخیل گم شدہ چیذوں تک پہنچ جاتا ہے۔ اور قارئیں ناول کے چار کرداروں ہی کے زمرے میں آتے ہیں، اُس کی زبان سے سنتے ہیں۔ راکھہ اور خس و خاشاک زمانے کی طرح یہ ناول بھی پاکستان کی مٹی سے جڑا ناول ہے جس کے کردار جاندار لیکن ماضی گزیدہ ہیں۔ خس و خاشاک زمانے بلا شبہ عظیم ناولوں کی فہرست میں شامل کرنے کے قابل ہے لیکن اے غزال شب بھی اگرچہ ضخامت میں قدرے مختصر ہے لیکن اسے بھی ایک ماسٹر پیس کہا جائے تو بے جا نہ ہو گا۔ جو قاری تارڑ کے اسلوب سے آشنا ہیں انہیں اس ناول میں ان کا فن اپنے عروج پر نظر آئے گا۔ تارڑ نے ماسکو میں اپنے قیام کے دوران میں جن حالات و واقعات کا مشاہدہ کیا اور ماسکو کی سفید راتیں میں تحریر کیا اس کا عکس اگر چہ جا بجا نظر آتا ہے لیکن اس ناول میں انداز بیاں، گہرائی و گیرائی کا جواب نہیں ہے۔ یوں محسوس ہوتا ہے کہ اب آکے تارڑ کا فن اپنے کمال تک پہنچا ہے۔ اس ناول میں تارڑ کے کردار ماضی کے خوابوں کے اسیر اور زندگی کی لایعنیت سے تنگ آئے لوگ ہیں۔

کالم نگاری

تارڑ صاحب کالم نگاری بھی کرتے رہے ہیں۔ ان کے کالموں کے مجموعے مندرجہ ذیل ہیں:
چک چک
الو ہمارے بھائی ہیں
گدھے ہمارے بھائی ہیں
شطر مرغ ریاست
تارڑ نامہ 1، 2، 3، 4
آجکل روزنامہ نئی بات اور ہفتہ وار اخبار جہاں میں کالم لکھتے ہیں۔

تخلیقات

خانہ بدوش
جپسی (ناول)
اندلس میں اجنبی
پیار کا پہلا شہر
نانگا پربت
ہنزہ داستان
شمشال بےمثال
کےٹو کہانی
برفیلی بلندیاں
سفر شمال کے
گدھے ہمارے بھائی ہیں
کالاش
یاک سرائے
دیو سائی
چترال داستان
کاروان سرائے
الّو ہمارے بھائی ہیں
نکلے تیری تلاش میں
بہاؤ (ناول)
راکھ (ناول)
پکھیرو (ناول)
سنو لیک
نیپال نگری
پتلی پیکنگ کی
یاک سرائے
دیس ہوئے پردیس (ناول)
سیاہ آنکھ میں تصویر (کہانہاں)
خس و خاشاک زمانے (ناول)
اے غزال شب(ناول)
الاسکا ہائی وے
ہیلو ہالینڈ
ماسکوکی سفید راتیں
لاہور سے یارقند تک

خطوط (شفیق الرحمٰن، کرنل محمد خان، محمد خالداختر)۔

نیویارک کے سو رنگ
امریکا کے سو رنگ
آسٹریلیا آوارگی
راکا پوشی نگر
اور سندھ بہتا رہا
15 کہانیاں
تارڑ نامہ (1)
تارڑ نامہ (2)
تارڑ نامہ(3)
تارڑ نامہ(4)
تارڑ نامہ(5)

اعزازات

مستنصر حسین تارڑ کی ادبی خدمات کے بدلے صدارتی تمغا حسن کارکردگی[2] اوران کے ناول ”راکھہ“ کو 1999 میں بہترین ناول کے زمرے میں وزیر اعظم ادبی ایوارڈ کا مستحق گردانا گیا اور آپ کو 2002ء میں دوحہ قطر میں لائف ٹائم اچیومنٹ ایوارڈ دیا گیا۔

متاثر کرنے والے لوگ

مطالعے کی عادت جتنی پختہ ہے، اتنی ہی پرانی۔ اردو میں قرۃالعین حیدر ان کی پسندیدہ لکھاری ہیں۔ اُن کا ناول ”آخری شب کے ہمسفر“ اچھا لگا۔ ٹالسٹائی اور دوستوفسکی کے مداح ہیں۔ ”برادرز کرامازوف“ کو دنیا کا سب سے بڑا ناول خیال کرتے ہیں۔ شفیق الرحمن کے مضمون ”برساتی“ کو اپنے سفرنامے ”نکلے تری تلاش میں“ کی ماں قرار دیتے ہیں۔ کرنل محمد خان کی ”بجنگ آمد“ کو اردو کا بہترین نثری سرمایہ سمجھتے ہیں۔ غیرملکی ادیبوں میں رسول حمزہ توف کی ”میرا داغستان“ اور آندرے ژید کی خودنوشت اچھی لگیں۔ کافکا اور سارتر بھی پسند ہیں۔ ترک ادیب یاشر کمال اور اورحان پامک کے مداح ہیں۔ مارکیز اور ہوسے سارا ماگو کو بھی ڈوب کر پڑھا۔ ممتاز ادیب محمد سلیم الرحمن کی تنقیدی بصیرت کے قائل ہیں۔ اپنی تخلیقات کے تعلق سے ان سے مشورہ ضرور کرتے ہیں۔

تارڑ کہتے ہیں”دوستوفسکی سے مَیں نے صبر سیکھا کہ کیسے لکھا جاتا ہے، کیسے کردار نگاری کی جاتی ہے۔ مَیں کوئی اوریجنل شخص نہیں ہوں بلکہ میرے اندر اُن بہت سے ادیبوں کی جھلک نظر آتی ہے، جنہیں مَیں نے پڑھا ہے اور جو آہستہ آہستہ مجھ میں سرایت کرتے گئے ہیں۔ آیا میرا اپنا کوئی اَنگ بھی بنا ہے یا نہیں، یہ مَیں نہیں کہہ سکتا۔ دوستوفسکی، چیخوف اور ٹالسٹائی کے بعد مَیں نے کافکا، کامیو اور کئی فرانسیسی ادیبوں کے ساتھ ساتھ جرمن ادیب ہرمن ہیسے کو بھی پڑھا، جن کے ناول ”سدھارتھ“ کو تو ایک بائبل کی طرح پڑھا جاتا ہے‘‘۔

تاثرات و تبصرے

ان کے ناول جنہوں نے سب سے زیادہ ادبی حلقوں میں پزیرائی حاصل کی ان میں سرفہرست ”بہاؤ“کا نام آتا ہے جو وادی سندھ کے معاشرتی طرز اور اطوار کو واضح کرتا ہے۔

اردو ادب کے مشہور ناول نگار عبداللہ حسین بہاؤ کے بارے میں لکھتے ہیں ”اس تحریر کی پشت پر جس قدر تخیلاتی ریسرچ پائی جاتی ہے اس کا اندازہ کر کے حیرت ہوتی ہے۔ رسمی لحاظ سے سوچتا ہوں تو خیال آتا ہے کے اگر یہ ناول کسی ترقی یافتہ ملک میں لکھا جاتا تو چند سال کے اندر مصنف کو کسی یونیورسٹی کی جانب سے علم بشریات کی اعزازی ڈگری پیش کی جاتی ”عبداللہ حسین کے ان الفاظ سے بہاؤ کی ادبی حیثیت کا اندازہ کیا جا سکتا ہے۔

“ نکلے تری تلاش میں” سفرنامہ 71ءمیں شائع ہوا۔ قارئین اور ناقدین دونوں ہی نے اسے ہاتھوں ہاتھ لیا۔ اِسے پڑھنے کے بعد محمد خالد اختر نے لکھا تھا: “ اُس نے مروجہ ترکیب کے تاروپود بکھیر ڈالے ہیں!”

”اندلس میں اجنبی“ پڑھ کر شفیق الرحمن نے کہا: ”تارڑ کے سفرنامے قدیم اور جدید سفرناموں کا سنگم ہیں!“

اس کے علاوہ ”راکھ اورخس و خاشاک زمانے کو بھی شاہکار نہ کہنا نہ انصافی ہوگی۔ تقسیم برصغیر کے بارے میں لکھ گئے یہ ناول ان تاریخی حقائق کو بیان کرتے ہیں جن پی اب تک بات کرنا پسند نہیں کی جاتی ہے، “خس و خاشاک زمانے ” کو تو پاکستان کی ایک ایسی دستاویز کہا جاسکتا ہے جو پاکستانی معاشرے کی اخلاقی اور تہذیبی اقدار اور اس کے بدلتے رویوں کو بیان کرتی ہے۔ جب کے ”پیار کا پہلا شہر“ اور قربت مرگ میں محبت“ مقبول عام ہیں۔ ادب سے لگاؤ رکھنے والا شاید ہی کوئی ایسا ہوگا جس نے پیار کا پہلا شہر پڑھ نہ رکھا ہو۔ اس کے علاوہ ڈاکیا اور جولاہا، سیاہ آنکھ میں تصویر، جپسی، قلعہ جنگی، فاختہ اور، اے غزال شب کے نام بھی ان کے ناولوں میں شمار ہوتے ہیں، بقول عبداللہ حسین اے غزال شب اُن کا پسندیدہ ترین ناول ہے۔
[وکی پیڈیا سے استفادہ]

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •