ہم کائنات میں اکیلے نہیں ہیں

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

کِسی بھی تاریک رات میں جب آسمان پر بادل موجود نہ ہوں اور کُھلا آسمان ستاروں سے مزیّن ہو جن میں کئی ستاروں روشنی مستقل طور پر نظر آرہی ہوگی تو کُچھ کی ٹمٹماتی ہُوئی۔

بِلاشُبہ یہ ستارے اربوں کھربوں کی تعداد میں ہیں لیکن کیا کبھی آپ نے سوچا کہ جس طرح آپ اپنے سیّارے پر کھڑے آسمان کو گھُور رہے ہیں اور اَن گنت ستارے آپ کو نظر آ رہے ہیں شاید بالکل ایسے ہی اربوں کھربوں (نُوری ) مِیلوں کی دُوری پر کسی اور سیّارے پر کوئی ہماری جیسی یا ہم سے بالکل مختلف مخلوق اپنے سیّارے پر کھڑے ہوکر آسمان کی جانب دیکھ رہی ہو اور اسے بھی آسمان پر کئی ستارے نظر آرہے ہوں۔

عین ممکن ہے کہ ہم انسانوں کی طرح یا ہم سے بھی زیادہ ذہین، ان میں سے بھی زیادہ تر یہی سوچتے ہوں کہ ان کے علاوہ کائنات میں کہیں زندگی موجود نہیں ہے اور دراصل وہی ”اشرف المخلوقات“ ہیں۔

خوش قسمتی سے سائنس ایسا نہیں سوچتی اور کئی دہائیوں سے کائنات میں ”زندگی“ کی تلاش میں سرگرداں ہے۔

سارا سیگر (خلائی ماہر و محقق) کے مطابق پِیگاسی 51 بی 1995 میں دریافت ہوا تھا۔ جوکہ خود ایک سرپرائز تھا۔ ایک جناتی سیّارہ جو دوسرے ستاروں کے قریب خلاف معمول طور پر سامنے آیا جس کی چار دن تک خلاف معمول حرکت جاری رہی۔ 51 پیگ کی یہ حرکت دراصل اس بات کی نشاندہی کر رہی تھی کہ اسے وہاں نہیں ہونا چاہیے تھا، جہاں وہ اس وقت موجود تھا۔ اور اس کی یہ حرکت بالکل غیر معمولی تھی۔ آج ہم 4000 سے زائد ان سیاروں کو جانتے ہیں جن کا تعلق ہمارے نظام شمسی سے باہر ہے۔

ان میں سے زیادہ تر ستارے / سیارے کیپلر اسپیس دوربین سے دریافت کیے گئے ہیں۔ کیپلر کا مقصد یہ تھا کہ دیکھا جائے کہ کتنے سیارے اس وقت اپنے مدار میں گردش کر رہے ہیں اور کیپلر نے کوئی ایک لاکھ پچاس سیارے آسمان میں دیکھے، یہ ایسے ہی جیسے آپ اپنا بازو پھیلائیں اور آپ کا بازو جتنا حصار گھیرے گا یہ دوربین اتنا ہی آسمان کور کر رہی تھی۔

لیکن اس دوربین کا بنیادی مقصد ایک انتہائی عجیب اور ڈرا دینے والے سوال کو حل کرنا تھا؛ ”کیا اس کائنات میں ہمارے سیارے کے سوا بھی کہیں زندگی موجود ہے؟ یا زِندگی اِسی سیارے یعنی“ زمین ”تک ہی محدُود ہے؟ “

بڑی حد تک یہ بھی امکان ہے کہ شاید ہی کبھی ہم یہ جان پائیں کہ کائنات میں کوئی دوسری دنیا بھی آباد ہے۔ بہرحال کیپلر دُوربین کا جواب بہت ہی نپا تُلا تھا۔ کائنات میں ستاروں کی نسبت سیارے زیادہ ہیں اور ان میں سے تقریباً ایک چوتھائی زمین کے سائز کے ہیں اور یہ بھی کہا جاسکتا ہے کہ وہ habitable zone جہاں پہ زندگی کے لئے حالات نہ زیادہ گرم ہیں اور نہ ہی زیادہ ٹھنڈے۔

ہماری کہکشاں کائنات میں موجود کھربوں دوسری کہکشاؤں میں سے ایک ہے ہماری کہکشاں کا نام ’مِلکی وے‘ ہے اور ہماری کہکشاں میں کم از کم سو ارب ستارے و سیارے موجود ہیں جس کا مطلب ہے کہ کم از کم پچیس ارب جگہیں ہماری کہکشاں میں ممکنہ طور پر ایسی ہو سکتیں ہیں جہاں زندگی اپنی جڑ پکڑ سکتی ہے۔

سیگر کے بقول یونیورسٹی آوو کیلیفورنیا برکیلے کے خلائی ماہر اینڈریو سموئن نے بتایا کہ کیپلر سے کی گئی تحقیقات کو خلائی سائنس میں کافی احترام سے دیکھا جاتا ہے۔ اس دوربین نے کائنات میں وجود و بقاء کے مفروضوں کو یکساں تبدیل کر کے رکھ دیا۔ اب سوال یہ نہیں رہا کہ ”زمین کے سوا بھی کہیں زندگی موجود ہے“۔ یہ بات تو تقریباً یقینی ہے کہ زندگی موجود ہے اب سوال باقی یہ رہ گیا ہے کہ ”ہم اس زندگی کو تلاش کیسے کریں؟ “

اس انکشاف نے کہ کہکشاں میں لاتعداد سیّارے موجود ہیں، زندگی کی تلاش میں ایک نئی روح پھونک دی ہے۔ جب سے غیر سرکاری افراد نے اس کام میں اپنی دلچسپی اور پیسے کا استعمال کیا ہے یہ کام اور بھی تیز ہوگیا ہے۔ ناسا بھی کافی شد و مد سے اسی سوال کے جواب کی تلاش میں مصروف ہے۔ زیادہ تر تحقیق کا فوکس اس بات پر ہے کہ کہیں بھی کسی دوسری دنیاؤں میں زندگی کی کوئی رمق تلاش کی جائے۔ دہائیوں سے جاری اس ریسرچ کو نئے ٹارگٹس اور نئے پیسے اور بڑھتی ہوئی جدید کمپیوٹر ٹیکنالوجی نے خلاء میں intelligent Aliens کی تلاش کو بڑی حد تک پر جوش اور شاید مُمکن بھی بنا دیا ہے۔

سیگر کے مطابق اُن کی کیپلر ٹیم میں ایک میک آرتھر ایوارڈ یافتہ کا شامل ہونا اس کی زندگی بھر کے اہم مقاصد کی جانب بڑھتا ہوا ایک اور قدم ہے۔ پُورا فوکس ایک ایسے سیّارے کو ڈھونڈنا ہے جو زمین جیسا ہو اور سورج جیسے ستارے کے گِرد گردش کرتا ہو، (TESS یعنی Transiting Exoplanet Survey Satellite یہ ایک MIT۔ Led NASA ) خلائی دوربین جو پچھلے سال ہی لانچ کی گئی ہے۔ کیپلر کی طرح TESS بھی تلاش کے سفر پر گامزن ہے۔

کسی بھی ایک ستارے کی ہلکی سی چمک کو جب وہ ستارہ کسی بھی سیّارے کے پاس سے گزرتا ہو TESS کا ٹارگٹ اس وقت پورے آسمان میں کوئی بھی ایسے پچاس سیارے تلاش کرنا ہے جن کی اوپری سطح زمین کی طرح پتھریلی یا rocky ہو تاکہ ایسے سیاروں کو بعد ازاں مزید طاقتور دوربینوں کے ذریعے جانچا جاسکے۔ ایسی دوربینیں جیسا کہ James Webb Space Telescope جو کہ ناسا 2021 ء میں لانچ کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔

مثال کے طور پر جیسا کہ ہمیں پتّے سبز نظر آتے ہیں کیونکہ کلوروفل روشنی کا ایک بھوکا molecule ہوتا ہے جو سرخ اور نیلے رنگ کو جذب کر لیتا ہے اور صرف سبز رنگ منعکس کرتا ہے۔ تقریباً بیس سال کی عمر میں ہی سیجر نے یہ خیال پیش کیا تھا کہ گردش کرتے سیاروں کے اوپری ماحول میں ممکنہ طور پر ایسے رنگ موجود ہوتے ہیں جن میں وہاں بسنے والی مخلوقات کے جسموں سے خارج ہونے والی گیسیں بناتی ہیں۔ تو اس طرح جو روشنی ہم تک پہنچتی ہے اس میں سے ہم زندگی کا ثبوت تلاش کر سکتے ہیں یہ بالکل بھی آسان نہیں ہے۔ ایک rocky planetکا اوپری سطح کا ماحول بالکل ایسا ہی ہوتا ہے جیسے پیاز کی اوپری پرت کو دیکھ رہے ہوں یا آپ کے سامنے صرف آئی میکس IMax کی سکرین ہو لیکن اس سکرین کے پیچھے کیا ہے یہ جاننا ابھی باقی ہے۔

ایک موہوم امید ہے کہ راکی پلینٹ Webb Telescope کی رینج کے اتنے قریب سے گزرے کہ اس سیارے / ستارے کی روشنی کافی طور پر قابو کی جاسکے تاکہ زندگی کے آثار کی تحقیقات کی جاسکیں۔ لیکن سیجر اور دیگر سائنسدانوں کا خیال یہ ہے کہ انھیں Next Generation کے خلائی دوربینوں کی ایجاد کا انتظار کرنا ہوگا۔

43 سالہ گائیون (خلائی ماہر و محقق) کے پاس ایک بہت بڑی دوربین ہے جسے The Subaru Observatoryکہتے ہیں اس کے ساتھ ساتھ 12 اور دوربینیں بھی Manua Kea جو کہ Hawaii کا ایک ساحلی جزیرہ ہے اس کی اونچی جگہ پر یہ Observatory بنائی گئی ہے جہاں یہ دوربینیں نصب ہیں۔ Subaru کا 27 فیٹ کا رفلیکٹر دنیا کے Single Piece عدسوں میں سے ایک ہے۔ اِس کو جاپان کی نیشنل ایسٹرونامیکل آبزرویٹری کے طور فنڈ کیا جاتا ہے اور اس کا کاریں بنانے والی Subaru کمپنی سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ یہ سطح سمندر سے 13,796 feet کی بلندی پر واقع ہے۔ یہاں سے کائنات کا بہت ہی واضح منظر نظر آتا ہے۔ گائیون بھی سیگر کی طرح Mac Arther Genius Award کا ونر ہے۔ اس کی خصوصی مہارت روشنی کی پرکھ پر ہے۔

جیسے کہ پچھلی قسط میں بتایا تھا کہ گائیون بھی سارا سیگر کی طرح MacArther جینئس ایوارڈ ونر ہے اور اس کی اصل مہارت دور دراز کے سیّاروں / ستاروں کی روشنی کی جانچ پڑتال ہے۔ اس کی اس سمجھ کے بغیر Subaru کے عدسوں پر آنے والی کسی قسم کی بھی روشنی کو پڑھنا ممکن نہیں تھا۔ گائیون کے مطابق بڑا سوال یہ بھی ہے کہ ؛ ”کیا وہاں آسمانوں پر کوئی biological activity ہو رہی ہے کہ نہیں اور اگر ہو رہی ہے تو اس نوعیت کی ہے کیو وہاں بھی براعظم، سمندر اور بادل ہیں ان تمام سوالات کے جوابات دینے تب ہی ممکن ہو سکیں گے جب آپ اس سیارے کی روشنی کو اس جڑے یا اس سے متعلقہ ستارے یا اس کے سورج سے آنے والی روشنی سے الگ کر کے پرکھ سکیں۔ “

دوسرے لفظوں میں، دراصل پوری کوشش اس بات کی ہے کہ کسی ایسے سیارے جو زمین کے سائز کا ہو rocky surface رکھتا ہو اس سے آنے والی روشنی کو اور اس سے جڑے اس کے ستارے کی روشنی سے الگ کرکے دیکھا جاسکتا ہے۔ یہ بالکل ایسا ہی ہے جیسے آپ ایک بڑی چمکدار لائٹ (flood light) کے سامنے اُڑنے والی چھوٹی سی ایک مکھی کو آنکھ میچ کر دیکھنے کی کوشش کریں۔ تو یہ ممکن نہیں۔ بالکل ایسے ہی آج کی ماڈرن ٹیلیسکوپس کے ساتھ یہ ممکن نہیں۔ کہ دُور دراز کے سیاروں کی روشنی اور اُن سے منعکس ہونے والی اُن کے سِتارے کی روشنی کو الگ الگ جانچا جاسکے۔ اسی لیے گائیون اور سیگر Next generation Telescopes کا انتظار کر رہے ہیں جِس کی پہلی ٹیلیسکوپ 2021 میں لانچ ہوگی۔

زمین پر موجود Telescopesجیسے کہ Subaru telescope خلاء میں موجود ٹیلیسکوپس جیسا کہ Hubble سے کہیں زیادہ نا صرف طاقتور ہوتی ہے بلکہ یہ روشنی کی زیادہ مقدار کو بھی اکٹھا کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے ( سیاروں سے آنے والی روشنی کو جانچنے کے لئے ان Telescopes کا زیادہ روشنی اکٹھی کرنا خوبی نہیں بلکہ خامی ہے ) ۔ اس نُقص کی ایک بڑی وجہ یہ بھی ہے کہ ابھی تک یہ مسئلہ سمجھ نہیں آسکتا ہے کہ ایک 27 فیٹ کے سائز کے عدسے کو کیسے اس قابل بنایا جائے کہ وہ خلاء موجود دور دراز کے ستاروں / سیاروں سے آنے والی روشنی کو مِیچ squint کر کے دیکھ سکیں۔

زمین پر موجود ٹیلیسکوپس کے ساتھ ایک مسئلہ یہ بھی ہے کہ ان کے عدسوں سے کسی بھی ستارے یا سیارے سے آنے والی روشنی ہمارے کُرہء ہوائی سے ہوکر گزرتی ہے۔ ہمارے کرہء ہوائی میں موجود ہوا کے درجہ حرارت میں اتار چڑھاؤ ستاروں سے آنے والی روشنی کو بے قاعدہ کر دیتا ہے۔

جیسا کہ ٹمٹماتا ہوا ستارہ جو ہمیں ایسا دکھائی دیتا ہے دراصل ایسا ہوتا نہیں ہے لیکن ہوا میں موجود لہروں کی وجہ سے وہ ہمیں ایسا دکھائی دیتا ہے۔ بالکل ایسے ہی جیسے گرمیوں کے دنوں میں ہمیں اسفالٹ سے بنی سڑکیں چمکتی ہوئی دکھائی دیتی ہیں۔

نیکسٹ جنریشن ٹیلیسکوپ SCExAO کا سب سے پہلا کام یہ ہوگا کہ ستاروں سے آنے والی روشنی میں یہ پیدا ہونے والے اتار چڑھاؤ یا ٹمٹماہٹ کو ختم کر دے۔ یہ ایسے ممکن ہوگا کہ ستارے سے آنے والی روشنی کو ایک shape shifting عدسے پر منتقل کیا جائے گا۔ جس کے پیچھے دو ہزار چھوٹی چھوٹی موٹریں نصب ہوں گی وہ روشنی کی اس information کو 3000 /sec کے حساب سے deform کریں گی۔ اس طرح ہمارے کرہء ہوائی سے پڑنے والے رخنوں کو دور کیا جاسکے گا اور اسی طرح ستاروں سے آنے والی روشنی کی کرنوں کو تقریباً اسی طرح سے دیکھا جاسکے گا جیسے کہ وہ ہماری زمین کے ماحول میں داخل ہونے سے پہلے تھیں۔

مزید پڑھنے کے لیے اگلا صفحہ کا بٹن دبائیں

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •