برطانوی افراد کے درمیان سیکس کی شرح پہلے کی نسبت کم ہو گئی

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

برطانیہ میں قومی سطح پر کیے گئے ایک سروے کے مطابق برطانوی افراد کے درمیان سیکس کرنے کی شرح پہلے کی نسبت کم ہو گئی ہے۔

برطانوی میڈیکل جریدے میں شائع ہوئے نتائج یہ ظاہر کرتے ہیں کہ تقریباً ایک تہائی مرد اور خواتین نے گذشتہ مہینے کے دوران جنسی تعلق نہیں رکھا۔

34000 افراد کے اعداد و شمار کے مطابق تقریباً سنہ 2001 کی سہ ماہی سے ایسا ہی ہے۔

سروے کے دوران اکھٹے کیے گئے جوابات سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ 16 سے 44 برس کے تقریباً نصف سے کم مرد و خواتین نے ایک ہفتے میں کم از کم ایک بار سیکس کیا۔

Over-25s and couples who are married or living together account for the biggest falls in sexual activity across the 21-year period.

21 سالہ تحقیق کے عرصے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ 25 برس سے زائد عمر کے ایسے جوڑے جو شادی شدہ ہیں یا ایک دوسرے کے ساتھ رہتے ہیں سب سے کم جسمانی تعلقات استوار کرتے ہیں۔

سیکس میں کمی

محقیقین نے جس ڈیٹا کا جائزہ لیا ہے وہ برٹش نیشنل سروے آف سیکچوئل ایٹی ٹیوٹس اینڈ لائف سٹائلز نے تین مختلف ادوار سنہ 1991، 2001 اور 2012 میں اکھٹا کیا تھا۔ یہ برطانوی افراد کے جنسی رویوں کی ایک عکاسی کرتا ہے۔

حالیہ سروے کے مطابق:

  • گذشتہ ماہ کے دوران 41 فیصد یعنی آدھے سے کم ایسے افراد جن کی عمر 16 سے 44 برس کے درمیان ہے نے ہفتے میں کم از کم ایک بار سیکس کیا۔

The proportion reporting no sex in the past month has increased – from 23% to 29.3% among women and from 26% to 29.2% among men between 2001 and 2012

گذشتہ ماہ کے دوران خواتین میں سیکس نہ کرنے کا تناسب 23 فیصد سے بڑھ کر 29.3 فیصد ہو گیا جبکہ سنہ 2001 سے 2012 کے درمیان مردوں میں بھی یہ تناسب 26 فیصد سے بڑھ کر 29.2 فیصد ہو گیا تھا۔

The proportion reporting sex 10 or more times in the past month has fallen – from 20.6% to 13.2% among women and from 20.2% to 14.4% among men between 2001 and 2012

گذشتہ مہینے کے دوران 10 یا اس سے زیادہ بار سیکس کرنے والے افراد کا تناسب خواتین میں 20.6 فیصد سے کم ہو کر 13.2 فیصد ہو گیا ہے جبکہ سنہ 2001 سے 2012 کے درمیان مردوں میں یہی شرح 20.2 فیصد سے کم ہو کر 14.4 فیصد ہو گئی۔

The average number of times that 35 to 44-year-olds reported having sex in the past month fell from four to two among women and from four to three among men

35 سے 44 سال کی عمر کے ایسے افراد جنھوں نے گذشتہ ہفتے سیکس کیا، ان کی اوسط شرح خواتین میں چار سے کم ہو کر 2 اور مردوں میں 4 سے کم ہو کر 3 ہو گئی۔

Why the drop?

کمی کی وجہ؟

Researchers from the London School of Hygiene and Tropical Medicine say the decrease in sexual frequency has been seen among people who have previously been sexually active, rather than more people deciding to keep their virginity.

لندن سکول آف ہایجین اینڈ ٹروپیکل میڈیسن کے ریسرچرز کا کہنا ہے کہ سیکس میں کمی کی شرح، کنوارہ پن برقرار رکھنے والے افراد کے بجائے ایسے افراد میں دیکھی گئی ہے جو پہلے جنسی طور پر خاصے سرگرم تھے

Although people under 25 and those currently single were less likely to be sexually active, the steepest declines in sexual frequency were among older married or cohabiting couples.

تاہم25 سال سے کم عمر کے افراد اور وہ جو اپنے تک کسی جنسی تعلق نہں رکھتے

So are people simply going off sex? Apparently not.

Half of women and nearly two-thirds of men in the latest survey said they would like to have more sex.

This desire was more often voiced by people who were married or living together as a couple, which the researchers say “merits concern”.

Too busy, tired or stressed?

Lead researcher Prof Kaye Wellings said the “sheer pace of modern life” may be a reason why many people are having less sex.

“It is interesting that those most affected are in their mid-life – the so-called ‘sandwich’ generation. These are men and women who are often juggling work, childcare and responsibilities to parents who are getting older.”

Perhaps social pressure to over-report sexual activity may have eased, while gender equality means that women may now be less inclined to meet their partner’s sexual needs irrespective of their own, say the researchers.

The decline coincides with increasing use of social media and a global recession, which may be other contributing factors.

Having less sex is not always a bad thing, says Prof Wellings. She said the survey results may be a comfort to many.

“What is important to wellbeing is not how often people have sex but whether it matters to them.

“Most people believe that others have more regular sex than they do themselves.

“Many people are likely to find it reassuring that they are not out of line.”

Relate counsellor and sex therapist Peter Saddington said: “The important thing is quality not quantity. If you enjoy the experience you are more likely to do it again. But you have to make time for sex. It doesn’t always have to be spontaneous. Putting a date in the diary can help.”

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 8752 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

––>