زرداری اور نواز شریف کے ٹی وی اور اے سی کی خیر نہیں

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اچھا جو انصافی احباب خوشی سے پھولے نہیں سما رہے اور بتلا رہے ہیں کہ اب زرداری یا نواز کے لیے وزیراعظم صاحب آ کر ٹی وی اے سی اور پکھے بند کردیں گے تو ان کو اطلاعاً عرض ہے کہ جناب والا آئین کے مطابق یہ سہولیات ان قیدیوں کو میسر ہیں اس لیے پہلے آئین بدلیں پھر خوش ہوں۔ ویسے یہ بھی ہے کہ ان کے اے سی ٹی وی ختم کرنے سے عوام کو کوئی فائدہ ملنے والا ہے کہ نہیں؟

جیل مینوئل کے مطابق جن قیدیوں کو اے کلاس دی جاتی ہے انھیں رہائش کے لیے دو کمروں پر محیط ایک الگ سے بیرک دیا جاتا ہے۔ جس کے ایک کمرے کا سائز نو ضرب 12 فٹ ہوتا ہے۔

قیدی کے لیے بیڈ، ایئرکنڈشن، فریج اور ٹی وی کے علاوہ الگ سے باورچی خانہ بھی شامل ہوتا ہے۔ اے کلاس کے قیدی کو جیل کا کھانا کھانے کی بجائے اپنی پسند کا کھانا پکانے کی بھی اجازت ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ اے کلاس میں رہنے والے قیدی کو دو مشقتی بھی دیے جاتے ہیں۔

جیل حکام کے مطابق اگر قیدی چاہے تو دونوں مشقتی ان کے ساتھ رہ سکتے ہیں اور اگر قیدی چاہے تو مشقتی کام مکمل کر کے اپنے بیرکوں میں واپس بھی جا سکتے ہیں۔

جیل قوانین کے مطابق جن قیدیوں کو بی کلاس دی جاتی ہے ان کو ایک الگ سے کمرہ اور ایک مشقتی دیا جاتا ہے تاہم اگر جیل سپرنٹنڈنٹ چاہیے تو مشقتیوں کی تعداد ایک سے بڑھا کر دو بھی کر سکتا ہے۔

دیکھا جائے تو خان صاحب آئین کی خلاف ورزی کر رہے ہیں صاف ظاہر ہے جو کچھ آئین میں درج ہے اس کے خلاف بیان دینا تو غیر آئینی ہوجاتا ہے۔

یہ خان صاحب کے بس میں بھی نہیں، کیونکہ اس کے لیے آئین و قانون بدلنا پڑے گا اور اس کے لیے پارلیمنٹ کی اکثریت نئی ترمیم سے یہ سیاسی یا دیگر اہم قیدیوں کو جو اے یا بی کیٹاگری جیل دی جاتی ہے وہاں سے سہولیات کا خاتمہ کیا جاسکے۔

اس کے لیے ممبران پارلیمنٹ کی اکثریت کا ووٹ چاہیے جو اول تو اس حکومت کے اپنے لوگ مخالفت کریں گے کیونکہ اکثریت تو لوٹوں کی پائی جاتی ہے، کیونکہ لوٹوں کا ٹھکانہ آج کہاں کل کہاں۔

تو وزیراعظم صاحب کے ایسے بیانات پر خوش ہونے سے پہلے کبھی آئینی و قانونی حیثیت بھی کہیں سے جان لیا کریں بلکہ ہوسکے تو جلسوں سے پہلے وزیراعظم صاحب کو کوئی بتلا بھی دیا کرے کہ خان صاحب کچھ پڑھ لکھ کر بھی جایا کریں دوسرا اب آپ ملک کے وزیراعظم ہیں اب صرگ تحریک انصاف کے لیڈر نہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •