کراچی کچرا کنڈی سے ملنے والی جھلسی لاش کا معمہ حل: محبوبہ نے ساتھی کے ساتھ مل کر نوجوان کو قتل کیا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

کراچی میں تین ماہ قبل کچرا کنڈی سے ایک جھلسی ہوئی نعش برامد ہوئی تھی۔ اس لاش کی شناخت کے بعد تحقیقات سے معلوم ہوا کہ قتل میں ایک لڑکی اور اُس کا ساتھی ملوث تھا۔ لڑکی کی مقتول سے واٹس ایپ پر دوستی ہوئی تھی ۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے علاقہ کچرا کنڈی سے ملنے والی لاش لاش کو ٹھکانے لگانے کے لیے ملزمہ کو ایم کیو ایم لندن گروپ کے فلاحی ادارے کی گاڑی فراہم کی گئی تھی جسے قتل کی اس لرزہ خیزواردات میں ملوث ساتھی ملزم خلیل چلا رہا تھا۔

ملزم خلیل ایف سی ایریا میں الحبیب کا شیلٹر ہوم چلا رہا ہے۔ واٹس ایپ پر دوستی کرنے والے علی حمزہ کو اس کی محبوبہ شبانہ نے عید الفطر سے تین روز قبل سعودی عرب سے کراچی بُلوایا ۔ ملزمہ شبانہ نے پیسوں کے لالچ میں عیدالفطر کی چاند رات کو نیند کی گولیاں کھلا کرعلی حمزہ کے گلے میں پھندا لگایا اور اُسے قتل کر دیا جس کے بعد لاش عید الفطر کے پہلے روز کچرے کے ڈھیر میں پھینکی گئی۔ عید کے دوسرے روز ملزمہ شبانہ نے پیٹرول پمپ سے پیٹرول خریدا اور ساتھی ملزم خلیل کے ہمراہ دوبارہ کچرا کنڈی پہنچ کر لاش کو آگ لگا دی۔ مقتول علی حمزہ گوجرانوالہ کا رہاشی تھا جو سعودی عرب میں ملازمت کرتا تھا ۔ ملزمہ شبانہ ساتھی ملزم خلیل کے ہمراہ واردات کے بعد فرار ہو گئی۔

تفتیشی پولیس اور قانون نافذ کرنے والے ادارے نے ملیرجعفرطیار سوسائٹی میں بھی چھاپہ مار کر قاتل محبوبہ شبانہ کو ساتھی ملزم خلیل کے ہمراہ گرفتار کر لیا گیا۔ قتل کی واردات سے قبل لالچی محبوبہ نے عاشق کے ساتھ سیلفیاں بھی بنوائیں۔ لاش کی شناخت مقتول کے ایک دانت کی مدد سے ہوئی ، شبانہ کا آبائی تعلق ڈیرہ اسماعیل خان سے ہے۔ ملزمہ کا ساتھ دینے والے متحدہ لندن کے کارندے خلیل کے فلاحی ادارے کے دفترمیں کُھدائی بھی کی گئی جبکہ ملزمان سے تفتیش کا سلسلہ جاری ہے۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •