نو سے چھے کی نوکری کا نشہ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

قارئین کرام ک چھ روز قبل حلقہء یاراں میں نشست ہوئی تو ایک موضوع زیرِ بحث آیا کہ کون سا نشہ زیادہ پر اثر ہے کسی دوست نے چرس کسی نے افیم کسی نے بھنگ کہا۔ کوئی شراب کو نمبرون مانتا تھا تو کوئی ہیروئن کو۔ کسی کو عشق میں نشہ نظر آیا تو کسی کو طاقت میں۔ جب باری مابدولت کی آئی تو عرض کیا کہ ہوگا نشہ جن کا نام آپ سب نے لیا لیکن اصل نشہ ”نو سے چھے کی نوکری کا ہے“۔

قارئین کرام اِس م نفرد نشے کے عادی ہوئے ہوئے سترہ سال سے ا وپر بیت گئے ہیں لیکن مجال ہے کہ کبھی یہ نشہ ہرن ہوا ہو۔ باقی جو بھی نشے ہیں ا ن کا کوئی وقت مقرر نہیں لیکن اس نشے کا وقت ہے ہر مہینے کی شروع کی تاریخ۔ اس نشے کا راشن مہینے کے شروع میں ختم ہوجاتا ہے لیکن اگلی خوراک کا انتظار ہی اس کو دوآشتہ رکھتا ہے۔ اور اسی چکر میں زندگی کے ماہ و سال نکل جاتے ہیں۔

ہمارے سب سے پہلے باس کا قولِ زریں ہے کہ نوکری چاہے پندرہ ہزار کی ہو یا پندرہ لاکھ کی ہوتی نوکری ہے۔ ا ن کے نوکری کے بارے میں ک چھ لغو قسم کے بھی فرمودات ہیں جن کو ہم یہاں لکھ نہیں سکتے لیکن اتنا اعتبار کریں کہ وہ فرمودات بالکل صحیح ہیں۔

جب ہماری نوکری کا پہلا دِن تھا تو ایچ آر کی دِلکش نازنیں نے کہا کہ حارث آپ کو سال میں 12 دفعہ بیمار ہونے کی اجازت ہے، 12 دفعہ آپ ایسے ہی بتا کر چ ھٹی کر سکتے ہیں، 12 سالانہ چ ھٹیاں ا س کے علاوہ ہیں۔ اگر والد بنتے ہیں تو 3 چھٹیاں بھی ملیں گی۔ اندر کے ریاضی دان نے ا سی وقت حساب لگایا کہ ہفتہ وار تعطیلات، تہوار اور سرکاری تعطیلات اور کمپنی کی نازنیں ایچ آر کی بتائی ہوئی تعطیلات کو جمع کیا جائے تو ہم 12 مہینے کی تنخواہ لے کر تقریباً دو ماہ چ ھٹیوں پر گ زاریں گے لیکن جنابِ من پرائیویٹ نوکری میں چ ھٹی لینا جوئے شیر لانے کے م ترادف ہے۔

جب بھی اپنے ٹیم لیڈر کے پاس چ ھٹی مانگنے گئے تو ا ن کے چہرے کے تغّیر دیکھ کر ایسا لگتا تھا جیسے ایک چ ھٹی نہیں گویا ا ن سے ا ن کا گ ردہ مانگ لیا ہو۔ مزے کی بات ہے کہ کم و بیش سترہ سال گ زرنے کے بعد ابھی بھی باس کو ئی بھی ہو ا ن کا ردِّعمل وہی ہوتا ہے جو سترہ سال پہلے ہوتا تھا۔ ا ن کا بیانیہ یہ ہوتا تھا/ہے کہ ت م چ ھٹی پر جاؤ گے تو ت مہارا کام کون کرے گا۔ اور سالانہ ریویو کے موقع پر کہا جاتاہے کہ ت م کرتے ہی کیا تھے پ ورا سال۔

غرض اب چ ھٹی پر جا کر ایک الگ سی شرمندگی ہی ہوتی ہے۔ ہمارے بہت سے عزیز اپنا کاروبار کرتے ہیں۔ چونکہ ہمیں ہفتہ وار دو تعطیلات ملتی ہیں تو اس کو وہ رشک کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ ا ن کو خام خیالی ہوتی ہے کہ ہم لوگ جب دِل چاہے جا کر اپنے باس کے پاس جا کر بول دیتے ہیں کہ فلاں دن ہم نہیں آئیں گے اپنا انتظام کر لو۔ حالانکہ چ ھٹی مانگنے میں جو محنت کرنی پڑتی ہے وہ آپ کو اوپر کی سطور سے سمجھ آ ہی گیا ہو گا۔

اس کارپوریٹ سمندر میں تیرتے ہوئے لمبا عرصہ بیت گیا ہے۔ جب نوکری شروع کی تھی تو سمجھیں ہم ایک معصوم سی ننھی سی مچھلی کے مانند تھے لیکن اب ایک تنومند قسم کے مگرمچھ میں تبدیل ہو گئے ہیں۔ پہلے جِن باتوں کو دِل پر لے کر گھنٹوں افس ردہ رہتے تھے اب ا ن کو ہنسی میں ا ڑا دیتے ہیں۔ ک چھ باتیں کارپوریٹ مزدور کو جتنی جلدی سمجھ میں آ جائے ا تنا مفید ہوتی ہیں وہ یہ ہیں کہ عزت بے وفا ہے اور بے عزتی وفادارہے۔ آپ کی بڑی کامیابی ا تنا شور و غوغا نہیں کرتی جتنا آپ کی معمولی غلطی۔ کام سے زیادہ کام کی فکر اور فکر سے زیا دہ فکر کاذکر مفید ہوتا ہے۔

کارپوریٹ شیر اپنے گھر میں شریک حیا ت کا جنم دن، شادی اور بچّوں کی سالگرہ بھلے یاد رکھیں نہ رکھیں لیکن یہ کبھی نہیں ب ھولیں گے کہ آپ نے کب ا ن کی کسی بات کی م خالفت کی تھی، کب آپ نے اکھّٹے تین چ ھٹیاں لی تھیں۔ اور ستم ظریفی دیکھیے اِس طاقتور یاداشت کا مظاہرہ بھی کسی ایسی میٹنگ میں ہوتا ہے جہاں بات ا وپر تک جاتی ہے۔ آپ نے جنوری میں کوئی غلطی کی ہو تو ا س کا خمیازہ آپ پورا سال ب ھگتے رہتے ہو، چاہے آپ اگلا پورا سال بغیر غلطی کے نکال دو۔ یہ شیر آپ کو ا س ساس کی طرح لگتے ہیں جو بہو کو یہ طعنہ دیتی ہے کہ آٹا گوندھتے ہوئے ہلتی کیوں ہو۔

کارپوریٹ دنیا چلتی ہی ”ای میل“ پر ہے۔ لوگ بات بے بات ای میل نکال دیتے ہیں۔ اور پھر گھنٹوں ا س میل کا چرچا بھی کرتے ہیں۔ چائے کی پتی سے لے کر انکریمنٹ کی اطلاع، سب ای میل کی م حتاج ہیں۔ ہر چھوٹی بڑی بات کا اعلامیہ ای میل پر نکلتا ہے۔ کبھی ای میل آپ کو عظیم الشان بے عزتی سے بچا لیتی ہے اور کبھی ایسا پھنسا لیتی ہے کہ الامان الحفیظ۔

کارپوریٹ دنیا میں بھلے آپ کو یہ بارہا باور کرایا جاتا ہے کہ آپ سے زیادہ نکّما اور س ست انسان پوری کمپنی میں نہیں لیکن دو مواقع ایسے ہوتے ہیں جن میں ایچ آر یہ یقین دلاتا ہے کہ آپ سے زیادہ کوئی قابل اور محنتی انسان کمپنی کیا پوری دنیا میں کوئی نہیں۔ اور وہ دو مواقع ہوتے ہیں جب آپ چ ھٹی مانگیں یا م ستعفی ہو جائیں۔ ا س کی وجہ یہ ہے کہ ایک اور کارپوریٹ مزدور اسی تنخواہ پر ڈھونڈنا کوئی آسان کام نہیں اور آپ کی چ ٹھی میں آپ کا کام کیا آپ کا باس کرے گا۔

اِن سب م شکلات کے باوجود کارپوریٹ دنیا ابھی بھی لوگوں کے لئے وسیلہءروزگار ہے۔ اور نوجوانوں کی اکثریت وہیں جانا چاہتی ہے۔ جو میرے جیسے پ رانے چاول ہیں وہ بھی اِس کو چھوڑنے کو تیار نہیں۔ یہی وجہ ہے کہ میں اِس کو نشہ کہتا ہوں۔ وجہ یہ ہے کہ سب کے زندگی کا پہیہ کارپوریٹ کے پہیے کے ساتھ چلتا ہے۔ ہم رسک لینے سے ڈر تے ہیں اور ڈر کے دائرے سے نکلنے کو تیار نہیں ہیں۔ ہم سب لوگ پہلی تاریخ کو اپنے اکاؤنٹ میں تنخواہ آنے کا انتظار کرتے ہیں اور آخری تاریخوں میں پہلی تاریخ کا انتظار کرتے ہیں۔

یہی کارپوریٹ دنیا کا مایا جال ہے جس میں آپ کی صلاحیتوں کو گروی رکھا جاتا ہے۔ یہی طبقہ ہے جو کمانے سے پہلے ٹیکس دیتا ہے اور پھر سال کے اختتام پر اگر ٹیکس دینے کے بعد بھی گوشوارہ نہ بھرے تو معطوب ہوتا ہے۔ یہی وہ طبقہ ہے جو تنخواہ آنے سے پہلے ٹیکس دیتا ہے، تنخواہ بینک سے نکلوانے پر ٹیکس دیتا ہے۔ پھر سوئی سے لے کر موٹر کار تک ہر چیز کی خریداری پر ٹیکس دیتا ہے۔ البتہ ا س کو یہ سب بیچنے والے ٹیکس دیں نہ دیں ا س سے کسی کو سروکار نہیں۔

اِس طبقے کی غلط فہمی ہوتی ہے کہ وہ بچت کرکے امیر ہو گا۔ اس مقصد کے لئے کمیٹیاں بھی ڈالتا ہے لیکن چنداں فرق نہیں پڑتا۔ اور آخر میں سالوں کی بچت اپنے علاج پر لگا کر راہیءعدم ہو جاتا ہے۔ اسی طبقہ کے بارے میں کارل مارکس نے کہا تھا کہ انقلاب کی راہ میں سب سے بڑی م خالفت متوسط طبقہ کرتا ہے جس کے قدم کیچڑ میں اور نگاہ ستاروں پر ہوتی ہے۔

آخر میں ایک پ رانا قول ہی دہراؤں گا جو اپنے بڑوں سے سنتا آیا ہوں کہ بھائی نوکر کی تے نخرہ کی (نوکر کیا اور نخرہ کیا) ۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply