امریکا میں پانچ منٹ میں کرونا ٹیسٹ ڈیوائس بنانے والا سائنسدان پاکستانی سندھی ہے

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

آج کل پاکستان سمیت دنیا کے دیگر ملکوں میں، میڈیا پر پانچ منٹ میں کرونا ٹیسٹ کرنے والی جس امریکی ڈیوائس لا ذکر ہو رہا وہ ڈیوائس امریکا میں مقیم سندھی پاکستانی سائنسدان جمیل شیخ نے بنائی ہے۔ صدر ڈونلڈ ٹرمپ آج اس کا افتتاح کریں گے۔ کل اس کرونا لیب ٹیسٹ ڈیوائس کو امریکی سرکاری ادارے فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن نے منظور کر لیا ہے۔

دنیا میں اس وقت سے زیادہ جس کی ضرورت ہے وہ ہے کرونا وائرس کی تلاش اور اس کا علاج۔ کرونا وائرس کی تلاش کے سلسلے میں پوری دنیا میں ایک ڈیوائس کا ذکر ہو رہا ہے جو امریکا میں بنی ہے اور اس سے پانچ منٹ کے اندر مریض کی کرونا ٹیسٹ ہو جائے گی۔ یہ کرونا لیب ٹیسٹ ڈیوائس پوری دنیا میں میڈیا پر دکھائی جا رہی ہے۔

جمیل شیخ کا تعلق سندھ کے ضلع لاڑکانہ کے شہر باڈھ سے ہے اور وہ اس وقت امریکا کے شہر سان ڈیاگو میں مقیم ہیں۔ کراچی کے این جے وی اسکول سے میٹرک، دہلی کالج سے انٹر اور این ای ڈی یونیورسٹی سے ان کی گریجویشن ہے۔

وہ امریکا اور کینیڈا میں ورلڈ سندھی کانگریس اور سندھی ایسوسی ایشن آف نارتھ امریکا میں بھی کافی سرگرم ہیں۔

جمیل شیخ کی ایجاد کردہ یہ ٹیسٹنگ ڈیوائس ایبٹ کمپنی لیبارٹریزنے متعارف کرایا ہے جس سے وائرس کی تشخیص صرف پانچ منٹ میں ہوسکتی ہے۔ کمپنی یکم اپریل سے روزانہ پچاس ہزار ٹیسٹ کٹس مہیا کرے گی۔ یہ ٹیسٹنگ کٹ آئندہ چند ہفتوں میں دنیا بھر میں فروخت کے لیے پیش کی جائے گی۔

ڈیاگنوسس ڈیوائس فرام سان ڈیاگو نامی پراجیکٹ، خالصتاً جمیل شیخ کا پراجیکٹ ہے امریکی ادارے فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن نے اسے اسی نام سے رجسٹر کیا ہے۔ جمیل شیخ، امریکا اور کینیڈا میں کام کرنے والی ایک جرمن کمپنی میں انجنئر ہیں جو میڈیکل انسٹرونٹ بناتی ہے۔ اور یہ ڈیوائس خالصتاً ان کا پراجیکٹ ہے۔ جو انھوں نے ڈزائین کر کے، فارماسوٹیکل کمپنی ایبٹ کو دیا ہے۔

نئی ٹیسٹ کٹ کا سائز چھوٹا رکھا گیاہے اور کٹ پورٹیبل بھی ہے جسے کسی بھی جگہ استعمال کیا جاسکتا ہے یہ کرونا لیب ٹیسٹ ڈیوائس شگر کے ٹیسٹ کرنے کے طرز پر صرف پانچ منٹ میں بتا دے گی کہ مریض کرونا پازیٹو ہے کہ نیگیٹو۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

3 thoughts on “امریکا میں پانچ منٹ میں کرونا ٹیسٹ ڈیوائس بنانے والا سائنسدان پاکستانی سندھی ہے

  • 30/03/2020 at 5:09 pm
    Permalink

    حیدرآباد سندہ کے ایک اور نوجوان علی مرتضئ سولنگی، جس نے آمریکی ریاست کیلیفورنیا سے انجنئرنگ پاس کی ہے۔ دنیا کا چیپیسٹ، آٹومیٹیڈ پورٹیبل وینٹیلٹر بنایا ہے جسے پاکستان انجینئرنگ کائونسل نے بھی دیکھا ھے۔ انکا کہنا ھے حکومت کے گوھیڈ ملنے پر وہ مختصرعرصے میں 10 ھزار وینٹیلیٹر بناسکتے ھیں۔ ایک اورکئنیڈا میں مقیم سندھی ڈاکٹرکامران احمد خان نے دنیا میں سبھ سے پہلے کرونا ڈٹیکشن اور الرٹ ڈیٹا کمپنی بلیو ڈاٹ کے اونر ھیں، جو دنیا کے کتنے ھی ملکوں کو یے سروس دے ریے ھیں۔

  • 31/03/2020 at 9:00 pm
    Permalink

    کسی بھی عالمی اخبار یا چینل نے یہ خبر نہیں دی ابھی تک

    پاکستانی سائنسدان چاہے پاکستان میں ہو یا کسی اور ملک میں کچھ نہیں ایجاد کر سکتا صرف مولوی اور مدرسے کو برا بھلا کہہ سکتے ہیں

Leave a Reply