بیٹ، بیلٹ پیپر اور بچہ جمہورا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

“بچہ جمہورا۔”

“جی استاد۔”

“ادھر آ۔”

“آ گیا۔”

“گھوم جا۔”

“گھوم گیا۔”

“جو پوچھے گا، سچ بولے گا؟”

“ہاں استاد، سو فیصد ہم سچ بولے گا۔”

“کہاں پہ ہو؟”

“اپنے وطن میں۔”

“وطن میں کیا ہے؟”

“غصہ ہے۔۔۔”

“کس کا غصہ؟”

“سب کا ہے۔۔۔”

“غصے کے پیچھے کیا ہے؟”

“خاموشی ہے۔۔۔!”

“کیسی خاموشی ۔۔۔!؟”

“وہ خاموشی۔۔۔ جس کے پیچھے طوفان ہوتا ہے۔۔۔!”

“تجھے کچھ سنائی دیتا ہے؟”

“ہاں استاد۔”

“کیا سنتا ہے؟”

“تبدیلی۔۔۔ تبدیلی۔۔۔ تبدیلی۔۔۔”

“کیسی تبدیلی۔۔۔؟”

“نعرے والی تبدیلی نہیں۔۔۔ آگے خود سمجھ جا استاد ۔۔۔!”

“ذرا کھل کے بتا کیسی تبدیلی۔۔۔!؟”

“میرے عزیز ہم وطنو والی۔۔۔!”

“بچہ جمہورا۔”

“جی استاد۔”

“میرے قریب تو آ۔۔۔”

“نہیں استاد۔”

“بچہ جمہورا۔۔۔!!”

“جی استاد۔”

“میرے ہاتھ میں کیا ہے؟”

“کچھ بھی نہیں ہے ۔۔۔!”

“بچہ جمہورا۔۔۔”

“جی استاد۔”

“اب ہم کیا کرے۔۔۔!؟”

“جو کرنا تھا تم کر بھی چکا۔۔۔”

“کیا کیا ہم نے۔۔۔؟”

“کھیل کو کھلواڑ نہ کرتے۔۔۔ غلطی کر گئے، ہیرو سے زیرو بن گئے۔۔۔”

“بچہ جمہورا۔۔۔!”

“جی استاد۔”

“وہ کیسے۔۔۔!؟”

“بیٹ کو میدان سے اٹھا کر، بیلٹ پیپر پہ لا کر۔۔۔:”

“بچہ جمہورا۔”

“جی استاد۔”

” ذرا قریب تو آ۔۔۔”

“نہیں استاد۔۔۔ دور سے بات کر۔”

“قریب کیوں نہیں آئے گا؟”

“خطرہ ہے کورونا کا۔۔۔ تم نے احتیاط نہیں کیا استاد۔۔۔!”

“بچہ جمہورا۔”

“جی استاد۔”

“اب کیا ہوگا۔۔۔۔!!؟”

“جو ہوگا وہ تو ہی بھگتے گا۔۔۔۔!”

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *