شہباز گِل، معید یوسف، ندیم بابر، تانیہ آئدروس اور زلفی بخاری دہری شہریت کے حامل نکلے

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

وزیراعظم عمران خان کی کابینہ میں شامل 15 معاونین خصوصی اور مشیراں کی شہریت کی تفصیلات جاری کر دی گئیں، جن میں سے 5 معاونین خصوصی دہری شہریت کے حامل نکلے جبکہ مشیران میں سے کوئی بھی دہری شہریت کا حامل نہیں ہے۔ کابینہ میں شامل شہباز گِل، معید یوسف، ندیم بابر، تانیہ آئدروس اور زلفی بخاری غیر ملکی شہریت بھی رکھتے ہیں۔

کابینہ ڈویژن کی جانب سے جاری کردہ دستاویزات کے مطابق معاون خصوصی برائے سیاسی روابط شہباز گل امریکی گرین کارڈ ہولڈر نکلے۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے نیشنل سیکیورٹی ڈویژن معید یوسف کی امریکا کی رہائش ہے اور معاون خصوصی برائے پیٹرولیم ندیم بابر بھی امریکی شہریت کے حامل ہیں۔

کابینہ ڈویژن کی دستاویزات کے مطابق معاون خصوصی اوورسیز پاکستانی زلفی بخاری بھی دہری شہریت کے حامل ہیں جو مستقل برطانوی شہریت رکھتے ہیں۔ معاون خصوصی برائے ڈیجیٹل پاکستان تانیہ آئدروس کے پاس کینیڈا اور سنگاپور کی شہریت ہے۔

وزیراعظم کے معاونین خصوصی اور مشیران کے اثاثوں کی تفصیلات بھی جاری کردی گئی ہیں۔ دستاویزات کے مطابق معاون خصوصی برائے پیٹرولیم ندیم بابر کے اثاثوں کی مالیت 2 ارب 75 کروڑ 28 لاکھ ہے۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے اطلاعات لیفٹیننٹ جنرل (ر) عاصم سلیم باجوہ کے اثاثوں کی مالیت 16 کروڑ 10 لاکھ سے زائد ہے۔ دستاویز میں بتایا گیا ہے کہ معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبر کے اثاثوں کی مالیت 7 کروڑ 23 لاکھ سے زائد ہے۔

معاون خصوصی برائے اوورسیز پاکستانیز ذلفی بخاری کی پاکستان میں 1300 کنال سے زائد اراضی ہے اور اسلام آباد میں زلفی بخاری کے 34 کنال اراضی پر مشتمل پلاٹس ہیں۔ دستاویز کے مطابق ذلفی بخاری لندن میں 48 لاکھ 50 ہزار پاؤنڈز کی جائیداد کے بھی مالک ہیں جبکہ ان کے پاس بیرون ملک 5 کمپنیوں کے شیئرز بھی ہیں۔

زلفی بخاری کی اہلیہ کے پاس 5 لاکھ پاؤنڈ مالیت کا سونا ہے، جبکہ ان کے اور ان کی اہلیہ کے پاکستان میں 24 لاکھ روپے بینکوں میں موجود ہیں۔ دستاویز کے مطابق زلفی بخاری کی بیرونِ ملک بینکوں میں 17 لاکھ پاؤنڈز رقم بھی موجود ہے۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی روابط شہباز گِل کے ذمے 2 کروڑ 42 لاکھ کے واجبات ہیں۔ دستاویز کے مطابق شہباز گل کے موجودہ اثاثوں کی مالیت 9 کروڑ 44 لاکھ روپے ہے، ان کا پاکستان میں ایک پلاٹ، فارم ہاؤس اور بیرون ملک ایک گھر ہے۔

معاون خصوصی برائے امورِ نوجوانان عثمان ڈار نے اثاثوں کی مالیت 6 کروڑ روپے ظاہر کی ہے۔ کابینہ ڈویژن کی جانب سے جاری دستاویز میں بتایا گیا کہ معاون خصوصی صحت ڈاکٹر ظفر مرزا 5 کروڑ 70 لاکھ روپے اثاثوں کے مالک ہیں۔ ان کے پاس 2 کروڑ روپے مالیت کا گھر اور 3 کروڑ روپے مالیت کے پلاٹس ہیں جبکہ ان کی اہلیہ کے پاس 20 لاکھ روپے مالیت کے زیورات بھی موجود ہیں۔

معاونِ خصوصی ڈیجیٹل پاکستان ڈاکٹر ثانیہ نشتر کے اکاؤنٹس میں ایک کروڑ 48 لاکھ روپے موجود ہیں۔ کابینہ ڈویژن کے مطابق ڈاکٹر ثانیہ نشتر کے پاس پانچ لاکھ روپے مالیت کی جیولری ہے، جبکہ ان کے پاس ایک گاڑی ہے جو ان کے شوہر کے نام ہے۔

مشیر موسمیاتی تبدیلی امین اسلم نے اہلیہ کے نام پر 50 لاکھ کی سرمایہ کاری شئیرز کی مد میں کر رکھی ہے۔ ملک امین اسلم کی اہلیہ کے نام پر 92 لاکھ روپے کی تین گاڑیاں ہیں، جبکہ ایک لاکھ کے زرعی آلات، ڈیڑھ لاکھ روپے کے فرنیچر بھی ان کی ملکیت میں ہیں۔ دستاویز کے مطابق ملک امین اسلم نے ایک کروڑ 47 لاکھ روپے کا بینک بیلنس بھی اثاثہ جات میں ظاہر کیا ہے۔ ملک امین اسلم نے اہلیہ کے نام پر 10 لاکھ 75 ہزار روپے کی جائیداد بھی ظاہر کی ہے، جبکہ وہ وراثتی طور پر حاصل کی گئی 15 جائیدادوں کے بھی مالک ہیں۔

دستاویز کے مطابق معاون خصوصی ندیم افضل چن کے اثاثوں کی مالیت 3 کروڑ 80 سے زائد ہے۔

وزراعظم کے معاون خصوصی بابر اعوان وراثتی طور پر حاصل کی گئی ساڑھے 16 کروڑ روپے کی جائیداد کے مالک ہیں جبکہ انھوں نے اسپین میں ایک کروڑ روپے کی جائیداد بھی ظاہر کی ہے۔ دستاویز کے مطابق مشیر پارلیمانی امور بابر اعوان نے اپنے کاروبار میں 47 لاکھ روپے کی سرمایہ کاری کر رکھی ہے، ان کے پاس ایک کروڑ 68 لاکھ روپے مالیت کی 6 گاڑیاں ہیں۔ مشیر پارلیمانی امور 20 لاکھ روپے کے زیورات اور لاکھ روپے کے فرنیچر کے بھی مالک ہیں۔ بابر اعوان کے پاس 18 لاکھ کے زرعی آلات، تین لاکھ روپے کی کلب ممبر شپ بھی حاصل کر رکھی ہے۔

دستاویز کے مطابق معاون خصوصی برائے سی ڈی اے علی نوازا عوان 4 کروڑ روپے کے اثاثوں کے مالک ہیں۔

دستاویز کے مطابق وزیر اعظم کے مشیر عشرت حسین مجموعی طور پر 29 کروڑ 42 لاکھ 22ہزار کے اثاثوں کے مالک ہیں۔ وہ امریکا میں تین جائیدادوں کے مالک ہیں۔

دستاویز کے مطابق مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ کے پاس 2 کروڑ کی زرعی اراضی ہے، عبدالحفیظ شیخ نے دبئی میں اہلیہ کے نام پر 13 کروڑ کا گھر ظاہر کیا ہے، اُن کے پاس 50 لاکھ مالیت کی گاڑی اور 20 لاکھ کے زیورات ہیں، جبکہ مشیر خزانہ نے 13 کروڑ 50 لاکھ کا بینک بیلنس ظاہر کیا ہے۔

دستاویز کے مطابق عبدالرزاق داؤد 1 ارب 75 کروڑ 68 لاکھ 39 ہزار 276 کے اثاثوں کے مالک ہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *