قائداعظم کے افکار اور آج کا پاکستان

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

”میں نے ایک ٹائپ رائٹر اور کلرک کی مدد سے پاکستان جیت لیا“ یہ جملہ محمد علی جناحؒ کا ہے۔ ہندوستان کے سابق وزیر خارجہ جسونت سنگھ اپنی کتاب ”جناح: اتحاد سے تقسیم“ میں لکھتے ہیں کہ گاندھی اور محمد علی جناحؒ کی پیدائش کاٹھیاواڑ کے پیشہ ور تاجر طبقے میں ہوئی۔ لیکن ان دونوں میں اس کے علاوہ اور کوئی مماثلت نہیں تھی۔ گاندھی ایک باعمل ہندو تھے جبکہ ثانی الذکر یعنی جناح اسلام کے ایک بے پرواہ پیروکار۔ جناح نے مذہب کو سیاسی مقاصد کی حصول یابی کا ذریعہ بنایا تو گاندھی کی زیست اور سیاست دونوں کی بنیاد مذہب اور عقیدہ ہی رہا۔

گاندھی پر تھورو اور ٹالسٹائی کا گہرا اثر تھا جبکہ جناح پر گھوکھلے اور دادا بھائی کا وہ بھی صرف سیاسی اثر تھا۔ ان دونوں نے کسی نہ کسی حیثیت سے نہ صرف واقعات سے بھرپور تحریک آزادی کی دہائیوں کو زبردست طور سے متاثر کیا بلکہ اس جنگ کو ایک خاص شکل بھی دی۔ گاندھی نے اپنی تلاش کی ناکامی تسلیم کر لی، جبکہ دوسری طرف جناحؒ نے کہا تھا کہ میں نے ایک ٹائپ رائٹر اور کلرک کی مدد سے پاکستان جیت لیا۔

امریکی مورخ سٹینلے والپرٹ اپنی شہرہ آفاق کتاب ”جناح آف پاکستان“ کی شروعات ان الفاظ سے کرتا ہے ”بہت کم شخصیات تاریخ کے دھارے کو قابل ذکر انداز سے موڑتی ہیں اس سے کم وہ افراد ہیں جو دنیا کا نقشہ بدلتے ہیں اور ایسا تو شاید ہی کوئی ہو جسے ایک قومی ریاست تخلیق کرنے کا اعزاز حاصل ہو۔“

جناح نے 11 اگست 1947 کو دستور ساز اسمبلی سے خطاب میں کہا کہ آپ اپنے مندروں، مسجدوں اور اپنی عبادت گاہوں میں (عبادت کی غرض سے ) جانے کے لیے بالکل آزاد ہیں چاہے آپ کا تعلق کسی بھی مذہب، قوم یا ذات سے ہو اس (نئی) ریاست کو اس حوالے سے کوئی مسائل نہیں ہوں گے۔

14 نومبر 1946 ء کو محمد علی جناحؒ نے نئی دہلی میں ایک پریس کانفرنس کی جب ان سے ابھی تک پیدا نہ ہونے والے فرقہ وارانہ صورتحال اور اقلیتوں کے حوالے سے پوچھا گیا تو انھوں نے دو ٹوک انداز میں جواب دیا کہ ایک دوسرے ملک کا اقتدار آئے گا تو کشیدگی تھم جائے گی۔ یہ اقلیت اس وقت اقلیت کی حیثیت سے آباد ہو جائیں گے۔ جناح نے اعلان کیا کہ پاکستان میں اقلیتوں کے ساتھ اگر ممکن ہوا تو مسلمانوں سے بھی بہتر انداز میں پیش آیا جائے گا۔ کسی کو کم اور کسی کو زیادہ حقوق نہیں ملیں گے ریاست برابری کی سطح پر برتاؤ کرے گی۔

فروری 1948 ء میں ریاست ہائے متحدہ امریکا کے نام نشری تقریر میں محمد علی جناحؒ نے فرمایا ”مجھے یقین ہے کہ دستور جمہوری طرز کا ہو گا جس میں اسلام کے لازمی بنیادی اصول شامل ہوں گے وہ اصول جو آج بھی حقیقی زندگی میں اسی طرح نافذ العمل ہیں جس طرح چودہ سو سال پہلے تھے۔ اسلام اور اس کے تصورات نے ہمیں جمہوریت سکھائی ہے اس نے ہمیں تعلیم دی ہے مساوات انسانی کی، عدل کی اور ہر ایک کے ساتھ انصاف برتنے کی۔ ہم لوگ وارث ہیں ان شاندار روایات کے اور پاکستان کا آئین تیار کرتے وقت اپنی ذمے داریوں اور فرائض کے معاملے میں پوری طرح بیدار ہیں۔“

بانی پاکستان آمریت کے شدید مخالف تھے وہ آمریت کی تمام تر شکلوں کو ناپسند کرتے تھے۔ وہ فوجی آمریت ہو یا جمہوریت کے نام پر شخصی آمریت وہ فوج کی سیاست میں دلچسپی لینے کے اس درجہ مخالف تھے کہ جب سبھاش چندر بوس نے جاپان کی مدد سے انڈین نیشنل آرمی قائم کی تو قائداعظم نے یہ کہہ کر اس کی شدید مذمت کی کہ فوج کو سویلین اتھارٹی کی حکم عدولی کا اختیار حاصل نہیں ہے۔ قیام پاکستان کے بعد جون 1948 میں اسٹاف کالج کوئٹہ میں خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ فوج پر لازم ہے کہ وہ دستور کا احترام کرے۔ جس پاکستان کا خواب قائداعظم نے دیکھا تھا اس میں عوام مقتدر اعلی کی حیثیت رکھتے تھے۔

بد قسمتی سے محمد علی جناحؒ کے پاکستان پر فوج زیادہ عرصہ اقتدار میں رہی۔ چار دہائیوں تک تو فوج سیاہ و سفید کی مالک رہی فوج نے نہ صرف بانی پاکستان کی سوچ و فکر کو بوٹوں تلے روندا بلکہ جمہور کے ارمانوں کا بھی خون کیا پاکستان میں کبھی بھی حقیقی جمہوریت نہیں آئی۔ عوام کے ووٹوں سے جو بھی سیاست دان اقتدار میں آئے ان کی گردنوں پر بندوق تنی رہی۔ اگر کسی سیاست دان نے ہمت کر کے جمہوریت کا سبق پڑھنا شروع کیا تو اس پر غداری کا لیبل لگا کر ملک بدر کر دیا گیا یا پھر بھٹو کی طرح راستے سے ہٹا دیا گیا۔

قائد محمد علی جناحؒ کے ان افکار کے بعد بڑی حد تک واضح ہو جاتا ہے کہ وہ پاکستان کو کیسی ریاست بنانا چاہتے تھے۔ یہاں سوال کلبلا رہا ہے کہ کیا آج کا پاکستان قائد اعظم کے افکار سے مطابقت رکھتا ہے تو دکھی دل کے ساتھ یہ کہنا پڑتا ہے کہ اگر پاکستان اپنے بانی کے تصورات کا آئینہ دار ہوتا تو ان تصورات کا زبانی تذکرہ کرنے کی بجائے ہم اپنے ملک کو عملی نمونہ بناتے اپنے گردوپیش پر نظر دوڑاتے اور بڑے فخر کے ساتھ دنیا کو بتاتے کہ یہی بانی پاکستان کے تصورات کی تصویر اور ان کی عملی تعبیر ہے۔ مگر ہمارے ہاں نہ آزادی فکر کسی شعبے میں ہے اور نہ رواداری، نہ سیاسی طور پر رواداری نظر آتی ہے اور نہ مذہبی حلقوں میں اس کا عکس نظر آتا ہے۔ رہ گئی آزادی فکر اس کا تو نام و نشان نہیں ہاں فکر پر بندشیں بہت لگتی ہیں۔

مملکت خداداد پاکستان کو اگر باوقار ملکوں کی صف میں شامل کرنا ہے تو سیاستدانوں کو مل بیٹھ کر محمد علی جناح کے افکار کی روشنی میں ایک نیا عمرانی معاہدہ کرنا ہو گا۔ اداروں کو اپنی حدود میں واپس جانا ہو گا۔ سویلین سپر میسی کو فوقیت دینا ہو گی۔ اصل حکمرانی جمہور کی ہو گی تو ملک ترقی کی شاہراہ پر سرپٹ دوڑے گا۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بشارت راجہ

بشارت راجہ شہر اقتدار سے پچھلی ایک دہائی سے مختلف اداروں کے ساتھ بطور رپورٹر عدلیہ اور پارلیمنٹ کور کر رہے ہیں۔ یوں تو بشارت راجہ ایم فل سکالر ہیں مگر ان کا ماننا ہے کہ علم وسعت مطالعہ سے آتا ہے۔ صاحب مطالعہ کی تحریر تیغ آبدار کے جوہر دکھاتی ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ وسعت مطالعہ کے بغیر نہ لکھنے میں نکھار آتا ہے اور نہ بولنے میں سنوار اس لیے کتابیں پڑھنے کا جنون ہے۔

bisharat-siddiqui has 125 posts and counting.See all posts by bisharat-siddiqui