جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کا قصور کیا ہے؟

ماضی قریب کی بات ہے کہ مملکت خداداد میں ن لیگ کی حکومت تھی۔ وزارت اعظمی کا تاج شاہد خاقان عباسی کے سر سج چکا تھا۔ قاضی القضاء نے اپنی انا کی تسکین کے لیے میاں نواز شریف کو اقتدار سے علحیدہ کر کے لیگی حکومت اتھل پتھل کر دی تھی میاں نواز شریف کا…

Read more

نواز شریف نے اسد عمر کے استعفے کی پیش گوئی کب کی تھی؟

6  دسمبر 2018 کی بات ہے۔ احتساب عدالت اسلام آباد کے جج ارشد ملک العزیزیہ ریفرنس کی سماعت کر رہے تھے۔ میاں نواز شریف عدالت کے روبرو پیش تھے۔ خواجہ حارث تفتیشی آفیسر پر دھمیے مزاج میں تابڑ توڑ جرح کر رہے تھے۔ سماعت میں وقفہ ہوا۔ میاں نواز شریف رجسٹرار آفس سے متصل کمرہ…

Read more

ایک صاحب اختیار کی باتیں

ہانکا لگایا گیا۔ بھان متی کا کنبہ جوڑا گیا۔ سچائی کا لاشہ بے گوروکفن پڑا ہے اور حکمران سینہ ٹھونک کر کہہ رہے ہیں کہ عوام کی طاقت سے آئے ہیں۔ سب جھوٹ ہے، دھوکہ دہی ہے۔ عوام کے حق پر ڈاکہ مارا گیا اور سچ یہ ہے کہ انتخابات صاف شفاف ہوتے تو نواز…

Read more

نواز شریف کا ”ووٹ کو عزت دو“ کا بیانیہ دم توڑتا دکھائی دے رہا ہے

میاں نواز شریف کا ”ووٹ کو عزت دو“ کا بیانیہ آہستہ آہستہ دم توڑتا دکھائی دے رہا ہے تاریخ شاہد ہے کہ ہر چیز اپنی اصل کی طرف لوٹ کے جاتی ہے اور ن لیگ بھی ماضی کی سیاست کی طرف گامزن ہے انقلابی بننے کے نعرے میں وہ دم خم نہیں رہا جو جی ٹی روڈ پر مجھے کیوں نکالا کے بعد تخلیق کیا گیا تھا۔ ن لیگ جان چکی ہے کہ پاکستان جیسے ملک میں مقتدر قوتوں کے ساتھ ٹکر لینا آسان نہیں اور نہ سیاست ہو سکتی ہے تو دوسری طرف بھی احساس ہو گیا ہے کہ ملک کی بڑی سیاسی شخصیات کو سیاست سے مکمل الگ کر کے بھی نظام نہیں چلایا جا سکتا۔ موجودہ حکومت کی نا اہلی نے بھی مقتدر قوتوں کو اپنے بیانیہ سے پیچھے ہٹنے پر مجبور کیا۔

نیب کی اسیری میں موجود اہم لیگی رہنما سے پوچھا کہ غصہ ٹھنڈا کیوں نہیں ہو رہا تو ترنت جواب ملا کہ غصہ کب کا ٹھنڈا ہو چکا ہے معاملات بہتری کی طرف جا رہے ہیں پھر میں نے اُن پر سوال داغا کہ اگر یہ سب کچھ کرنا تھا تو پھر چوہدری نثار کی کیوں نہیں مانی گئی؟ ان سے ناراضگی کیوں مول لی گئی؟ کہنے لگے کہ کسے پتہ ہوتا ہے کہ جو کچھ کہا جا رہا ہے وہ درست ثابت ہو سکتے ہیں ہاں میں مانتا ہوں کہ ہم سے غلطیاں کوتاہیاں ہوئی ہیں ہمیں دوسروں کی رائے کو اہمیت دینی چاہیے تھی۔

Read more

مسئلہ معیشت کا نہیں، توسیع پسندی کا ہے

ملکی معیشت زبوں حالی کا شکار ہے، تیل کی قیمتیں بڑھ رہی ہیں، سرمایہ کار ملک سے بھاگ رہا ہے، روپیہ تیزی سے تنزلی کی طرف جا رہا ہے، بے روزگاری کا اژدھا پھن پھیلائے کھڑا ہے، افلاس نے ڈیرے ڈالے ہوئے ہیں، بھوک سے لوگ خودکشیاں کر رہے ہیں، تاجر پریشان حال ہیں، نیب…

Read more

آصف زرداری کی عدالت میں پیشی کا احوال

معمول کے مطابق صبح ہائی جانے کا قصد کیا میری اقامت چونکہ راولپنڈی ہے اس لیے ہائی کورٹ اور احتساب کورٹ جاتے ہوئے اسلام آباد اور راولپنڈی کے سنگم پر واقع میاں نواز شریف پارک کے ساتھ ڈبل روڈ والا روٹ استعمال کرتے ہوئے کشمیر ہائی وے سے ہوتا ہوا جی ایٹ کے سنگنل سے اندر کی جانب جاتے ہوئے بائیں طرف سروس روڈ جسے بیلا روڈ کہا جاتا ہے استعمال کرتا ہوں۔ جی ایٹ کے اشارے سے بائیں جانب مڑا تو گاڑیوں کی طویل قطار لگی ہوئی تھی گاڑیاں چیونٹی کی رفتار سے چل رہی تھیں۔

Read more

82 ارب روپے کی بدعنوانی؟ عقیل کریم ڈھیڈی کے لئے حسن کارکردگی ایوارڈ

احتساب عدالت اسلام آباد کورٹ روم نمبر ایک کے جج محمد بشیر نے 22 فروری کو اوگرا کیس میں نامزد ملزم عقیل کریم ڈھیڈی کے ناقابل ضمانت ورانٹ گرفتاری جاری کئے۔ اس موقع پر ان کا غصہ عروج پر پہنچا ہوا تھا۔ کرسی انصاف پر بیٹھ کر احتساب کے جج محمد بشیر نے حکم صادر…

Read more

رانا ثنا اللہ کہتے ہیں، اسٹبلشمنٹ سے لڑائی جیتنا ممکن نہیں

”جتنے لوگ پیپلزپارٹی نے باہر نکالے اس سے کئی گنا زیادہ لوگ ن لیگ نکال سکتی ہے مگر مسئلہ یہ ہے کہ ن لیگ اسٹیبلشمنٹ سے لڑنے کے موڈ میں نہیں۔ پیپلزپارٹی اور ایم ایم اے کے لوگ میاں نواز شریف کے پاس گئے تھے کہ انتخابات میں جو دھاندلی ہوئی ہے اس کے خلاف سڑکوں پر نکلا جائے میاں نواز شریف نے تحمل سے ان لوگوں کی بات سننے کے بعد انھیں جواب دیا کہ آپ بتائیں ہم سڑکوں پر نکلتے ہیں اس کا نتیجہ کیا ہو گا؟ ہمیں کامیابی ملتی ہے ہماری بات مان کر نئے انتخابات کا اعلان ہو جاتا ہے ہم متحمل نہیں ہو سکتے کہ نئے انتخابات میں جائیں۔ ملک کے معاشی حالات دگرگوں ہیں۔ ہم کامیاب ہو جاتے ہیں تو ملک کو کس طرح سنبھالا دیں گے۔ “

Read more

نواز شریف کی بیماری اور عمران خان

اس کالم نگار کا تعلق لکھنے والوں اُس خاموش گروہ سے ہے جس کا کسی سے کوئی لینا دینا نہیں نہ کوئی مفاد وابستہ ہے، قربت شاہی چاہیے نہ محل میں حاضری کا شوق ہے۔ عالی جاہ کے ساتھ بیرونی دوروں کی خواہش ہے اور نہ سلیفیاں بنانے کا شوق، کسی مقتدر سے اپنے کسی عزیز کو کوئی فائدہ دلوانا ہے اور نہ کسی میگا پراجیکٹس کا ٹھیکہ لینا ہے، کسی سے دشمنی ہے نہ کسی سے ایسی وابستگی جو قلم کی روانی میں رکاوٹ بنے، چاپلوسی و کاسہ لیسی میرے خون میں شامل نہیں، میرا یقین مجھے پیدا کرنے والے رب پر ہے جو اُس نے لکھ دیا وہ مل کر رہے گا۔نواز شریف جب اقتدار میں تھے تو اُن کی کچھ پالیسوں کے خلاف کھل کر لکھا، بحمداللہ قلم نے کبھی بخل سے کام نہیں لیا اچھے کاموں پر تحسین بھی کی۔ تحریک انصاف اپوزیشن میں تھی تو اُن کے حق میں لکھتا رہا۔ میرا بڑا مسئلہ ہے کہ میں ہمیشہ پانی کے بہاؤ کے اُلٹ چلتا ہوں۔

Read more

کشمیر کے بارے میں تلخ سچ

پرلے روز دفتر میں اپنے سینئرز کے ساتھ سماج کے ایشوز پر ڈسکس کر رہا تھا گفت و شنید کے درمیان کشمیر کا ذکر چل پڑا میرے ایک سینئر نے ایک جملہ بولا کہ ”کشمیریوں کو لتر پریڈ کرنی چاہیے“ اس جملے سے میرے تن بدن میں آگ لگ گئی بصد احترام کے ساتھ اُن سے گویا ہوا کہ آپ بزرگ ہیں اور آپ نے الفاظ کا چناؤ درست نہیں کیا۔ وہ کہنے لگے کہ کشمیری آج تک خودکُش بمبار پیدا نہیں کر سکے، جنوبی پنجاب سے مجاہد جا کر کشمیر میں لڑتے رہے انھوں نے کشمیریوں کے لیے جانیں قربان کیں، ہمارے ہندوستان کے ساتھ تعلقات خرابی کی بنیادی وجہ کشمیر ہے۔

Read more