نیا روڈ میپ: دل کا بہلاوا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  


ملکی سیاست کے اسرار و رموز تک رسائی کے لئے 25 سے زیادہ برس دن رات ایک کیے تھے۔ تحریک انصاف کے سوشل میڈیا کی بدولت بالآخر دریافت کیا کہ ہمارے ہاں جس شے کو ”صحافت“ کہا جاتا ہے درحقیقت ”چور اور لٹیرے“ سیاست دانوں کے دیے ”لفافوں“ کی محتاج ہے۔ ”سچ“ ’تو وہ ہے جو عمران خان صاحب بیان کرتے ہیں۔ اگست 2018 میں لیکن وزیر اعظم کے منصب پر فائز ہونے کے بعد وہ اہم ذمہ داریاں نبھانے میں مصروف ہو گئے۔ ہماری رہ نمائی اب ان کے ترجمانوں کی فوج ظفر موج فرماتی ہے۔ ”لفافہ صحافت“ کے پھیلائے ”جھوٹ“ کے مقابلے میں ”حقائق“ کی تلاش میں یوٹیوب سے رجوع کرنا بھی ضروری ہے۔ میں بہت لگن سے اس ایپ کے ذریعے بتائی ”خبروں“ کے ذریعے ملکی سیاست کے اتار چڑھاؤ کو گرفت میں لانے کی کوشش کرتا ہوں۔

یوٹیوب پر مقبول ترین صحافیوں کی اکثریت جن کی دیانت اور حب الوطنی پر سوال اٹھانے کی گنجائش ہی موجود نہیں اصرار کر رہی ہے کہ اپوزیشن کا حال ہی میں قائم ہوا اتحاد پی ڈی ایم ”اڑنے بھی نہ پائے تھے کہ گرفتار ہم ہوئے“ والے عالم میں مبتلا ہو چکا ہے۔ نواز شریف کی مبینہ طور پر ”وطن دشمن“ تقاریر اس کا سبب بتائی جا رہی ہیں۔ دعویٰ ہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی برطانیہ میں پناہ گزیں ہوئے ”مجرم“ کے مرتب کردہ بیانیے کا ساتھ دینے کو تیار نہیں۔

اسفند یار ولی خان کی اے این پی کو بھی اس کے بارے میں ہزاروں تحفظات ہیں۔ حتیٰ کہ مولانا فضل الرحمن کی جمعیت العلمائے اسلام میں بھی ”بغاوت پھوٹ پڑی ہے“ ۔ اس کے علاوہ نواز شریف کے نام سے منسوب ہوئی پاکستان مسلم لیگ کے سنجیدہ اور تجربہ کار اراکین پارلیمان بھی ”تاحیات قائد“ کو اپنی جماعت پر ناقابل برداشت بوجھ شمار کرنا شروع ہو گئے ہیں۔ ایسے حالات میں پی ڈی ایم ” اگلا قدم“ اٹھانے کے قابل نہیں رہی۔ عمران حکومت کے لئے لہٰذا ستے خیراں ہیں۔

”ستے خیراں“ کے اس ماحول میں لیکن ہمارے ایک بہت ہی نامور اور ”اندر کی خبر“ لانے میں لاثانی انصار عباسی صاحب نے اپنے یوٹیوب چینل کے ذریعے دو روز قبل اطلاع یہ دی ہے کہ اپوزیشن کی تینوں بڑی جماعتوں کے چند اہم افراد سے حال ہی میں چند ”ملاقاتیں“ ہوئی ہیں۔ نواز شریف کی حالیہ تقاریر اگرچہ ایسی ”ملاقاتوں“ سے اجتناب کی خواہاں تھیں۔ ”ملاقاتیں“ مگر جاری رہیں۔ ان ”ملاقاتوں“ کے نتیجے میں بالآخر ایک ”روڈ میپ“ تیار ہوا نظر آ رہا ہے۔

اپوزیشن جماعتوں کو تقریباً قائل کر دیا گیا ہے کہ پاکستان کے مختلف شہروں میں جلسوں کے انعقاد کے بعد اسلام آباد کی جانب کسی مارچ کی صورت بڑھنے کے بجائے وہ پارلیمان ہی کے ذریعے ”تبدیلی“ کی راہ نکالیں۔ آغاز اس عمل کا پنجاب سے ہو۔ نواز شریف کی مسلم لیگ چوہدریوں کی ”قاف“ کے ساتھ مل جائے تو پیپلز پارٹی کی حمایت سے عثمان بزدار کو پاکستان کے آبادی کے اعتبار سے سب سے بڑے صوبے کی وزارت اعلیٰ کے منصب سے تحریک عدم اعتماد کے ذریعے ہٹایا جاسکتا ہے۔ اٹک سے رحیم یار خان تک پھیلے صوبے پر اپنی گرفت کھو دینے کے بعد وفاقی حکومت حواس باختہ ہو جائے گی۔ عمران خان صاحب کے خلاف اس کے بعد تحریک عدم اعتماد کو قومی اسمبلی سے منظور کروانا آسان ہو جائے گا۔

عملی صحافت سے ریٹائر ہو کر گوشہ نشین ہوا مجھ جیسا کالم نگار مذکورہ ”روڈ میپ“ پر تبصرہ آرائی کے قابل نہیں۔ متحرک اور باخبر صحافیوں کی بات کو مگر سنجیدگی سے لیتا ہوں۔ ٹھوس حقائق سے قطعی لاعلم اور ”ذرائع“ کی معاونت سے یکسر محروم ہونے کے باعث یہ جان ہی نہیں سکتا تھا کہ ”کن لوگوں“ کی کون سے سیاستدانوں کے ساتھ ”ملاقاتوں“ کے بعد ایک نیا ”روڈ میپ“ تیار ہوا ہے۔

مذکورہ ”روڈ میپ“ پر غور کرتے ہوئے مگر 2019 کی آخری سہ ماہی یاد آ گئی۔ ان دنوں اپوزیشن کی دونوں بڑی جماعتوں یعنی مسلم لیگ (نون) اور پیپلز پارٹی نے یکجا ہو کر عمران حکومت کو وہ قانون تاریخی عجلت میں پاس کروانے کی سہولت فراہم کی جس نے ایک اہم ریاستی ادارے کے سربراہ کی میعاد ملازمت میں توسیع کو قانونی چھتری فراہم کی۔ یوں اپنے تئیں ”جمہوری نظام“ کو بچا لیا۔ پارلیمان کو ”بچانے“ کے بعد اس میں سے ”تبدیلی“ کی امید بھی باندھ لی گئی تھی۔

مسلم لیگ (نون) میں موجود میرے کئی ”دوست“ ان دنوں پارلیمان کی راہداریوں میں بقول غالبؔ ”اتراتے پھر“ رہے ہوتے تھے۔ محض ایک رپورٹر کی حیثیت میں ان سے فقط یہ سوال کرتا کہ وہ عمران خان صاحب کو تحریک عدم اعتماد کے ذریعے کیسے ہٹا سکتے ہیں تو ناراض ہو جاتے۔ مہاتما بدھ کی طرح ان کی خاموشی یہ بتاتی کہ ان کی آنکھ جو رونما ہوتا دیکھ رہی ہے مجھ جیسے ”دو ٹکے کے صحافی“ سوچ بھی نہیں سکتے۔

میعاد ملازمت والے قانون کے بعد اپوزیشن کی دونوں بڑی جماعتوں نے پاکستان کو فنانشل ایکشن ٹاسک فورس ( ایف اے ٹی ایف ) کی گرے لسٹ سے نکلوانے کے لئے بنائے قوانین کو بھی تاریخی عجلت میں منظور کروایا۔ پاکستان اس کے باوجود گرے لسٹ ہی میں موجود رہا۔ شہباز شریف اور ان کی اولاد البتہ نیب اور شہزاد اکبر صاحب کے غضب کی زد میں آ گئے۔ اپوزیشن کو اپنے ساتھ ”ہتھ“ ہوا محسوس ہوا۔ پی ڈی ایم کی تشکیل اسی باعث ممکن ہوئی۔ نواز شریف کی جانب سے ہوئی دھواں دھار تقاریر اس تناظر میں ”جوابی وار“ سنائی دیں۔ پنجاب اور وفاق میں تحریک عدم اعتماد کے ذریعے ”تبدیلی“ کی دوبارہ امید میری رائے میں قطعاً وہی مقام ہے ”گزرے تھے ہم جہاں سے“ ۔

میں یہ تسلیم کرنے سے قاصر ہوں کہ عمران خان صاحب کو وزارت عظمیٰ سے موجودہ اسمبلی میں پیش ہوئی تحریک عدم اعتماد کے ذریعے ہٹایا جاسکتا ہے۔ ستمبر 1989 میں محترمہ بے نظیر بھٹو صاحبہ کے خلاف ایسی ہی ایک تحریک پیش ہوئی تھی۔ ان دنوں کے صدر غلام اسحاق خان جن کے پاس آٹھویں ترمیم کے ذریعے میسر قومی اسمبلی توڑنے والا اختیار بھی تھا دل و جان سے اس تحریک کے حامی تھے۔ جنرل اسلم بیگ نے بھی بطور آرمی چیف اس کو مناسب پشت پناہی فراہم کی۔

پنجاب کے وزیر اعلیٰ ہوتے ہوئے نواز شریف صاحب نے صوبائی حکومت کے تمام تر وسائل اس تحریک کی کامیابی کے لئے وقف کر دیے تھے۔ ان دنوں ”فلور کراسنگ“ کو مشکل ترین بنانے والا قانون بھی موجود نہیں تھا۔ ان تمام حقائق کے باوجود تحریک عدم اعتماد پر گنتی ہوئی تو اپوزیشن کے چار اراکین اسمبلی پیپلز پارٹی کے حامی ہو گئے۔ محترمہ سے ”نجات“ کے لئے بالآخر صدر اسحاق خان نے 6 اگست 1990 کے روز اسمبلی توڑنے والا اختیار استعمال کیا۔

عمران خان صاحب اگر نام نہاد ”One Page“ پر نہ رہے۔ پنجاب ان کے ہاتھ سے نکل گیا تب بھی وہ وفاقی حکومت کی Buy or Bullyوالی قوت کو بے دریغ استعمال کرتے ہوئے اپنے خلاف پیش ہوئی تحریک عدم اعتماد کو ناکام بنا دیں گے۔ اس تحریک کے پیش ہونے سے قبل اگر پنجاب بھی ان سے ”چھین“ لیا گیا تو خان پنجابی فلم والے جاٹ کی طرح ”وحشی“ ہو جائے گا۔ اپنے اختیارات کو حیران کن انداز میں ان افراد کے خلاف استعمال کرنے میں دیر نہیں لگائے گا جو ان کی دانست میں پنجاب میں لگائی ”گیم“ کو کامیاب کروانے کا سبب ہوئے۔

پنجاب ”مافیا کی سازش“ کی بدولت گنوا دینے کے بعد وہ جلسے جلوسوں میں خود کو ”مظلوم“ بنا کر پیش کریں گے۔ اپنے حامیوں کی Core Constituency کو ہمہ وقت متحرک رکھنے میں جت جائیں گے۔ ”سازشوں کا شکار“ ہونے کی دہائی انہیں یقیناً ایک نیا جنم دے گی۔ اس ”جنم“ کی بدولت فرض کیا ان کے خلاف پیش ہوئی تحریک عدم اعتماد کامیاب ہوئی تو خواجہ آصف یا احسن اقبال کی قیادت میں بنائی نئی حکومت کو وہ ایک دن بھی چین سے رہنے نہیں دیں گے۔

ان سے ”بے وفائی“ کرنے والے تحریک انصاف کے اراکین قومی اسمبلی بھی ”نئے حاکموں“ کی بدولت ”سب کچھ لٹا کے۔“ والے غم اور احساس جرم میں مبتلا ہوجائیں گے۔ جس ”روڈ میپ“ کا چرچا ہو رہا ہے وطن عزیز کو کسی صورت سیاسی استحکام کی جانب لے جاتا لہٰذا نظر نہیں آ رہا۔ جی کو بہلانے والا کھلونا ہے۔ اس کے سوا کچھ نہیں۔
بشکریہ نوائے وقت۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •