’کچا بادام‘: ایک پھیری والا جس کی زندگی سوشل میڈیا نے راتوں رات بدل کر رکھ دی


سوشل میڈیا راتوں رات کسی کی زندگی کیسے بدل سکتا ہے، اس کی حالیہ مثال انڈیا میں مغربی بنگال سے تعلق رکھنے والے بھوبن بدایاکار ہیں۔

بھوبن کا تعلق بیر بھوم ضلع ہے اور وہ وہاں سائیکل پر گھوم پھر کر گلی محلوں میں مونگ پھلی فروخت کیا کرتے تھے۔ مگر مونگ پھلی بیچنے کا ان کا انداز نرالہ تھا کیونکہ وہ گانے کی شکل میں اپنی مونگ پھلی کی تشہیر کیا کرتے تھے۔ ان کا ’کچا بادام‘ گانا اتنا مقبول ہوا کہ اس گانے پر بنی ہر دوسری ویڈیو انسٹاگرام کی ریلز میں اب بھی نظر آتی ہے۔

بھوبن کا تعلق انڈیا میں جس علاقے سے ہے وہاں کچی مونگ پھلی کو ’کچا بادام‘ کہا جاتا ہے۔

اس گانے پر نہ صرف انڈیا والے بلکہ غیر ملکی بھی ڈانس کر رہے ہیں۔ بالی وڈ کی کئی مشہور شخصیات نے بھی ’کچا بادام‘ گانے پر انسٹا ریلز بنائی ہیں۔

کولکتہ کے مقامی اخبار دی ٹیلی گراف انڈیا نے بھوبن سے انھیں راتوں رات ملنے والی شہرت کے بارے میں پوچھا اور یہ جاننے کی کوشش کی ہے کہ اُن کی زندگی کیسے دیکھتے ہی دیکھتے بدل گئی۔

بھوبن کی زندگی کتنی بدل گئی؟

بھوبن کا کہنا ہے کہ انھیں اندازہ نہیں تھا کہ لوگ اس گانے کو اتنا پسند کریں گے۔ وہ کہتے ہیں کہ یہ سب کچھ ان کی سمجھ سے بالاتر ہے۔ لیکن یہ بھگوان کے فضل اور لوگوں کی محبت کی وجہ سے ممکن ہوا ہے۔

وہ اس شخص کا شکریہ ادا کرتے ہیں جس نے پہلی بار ان کے گانے کی ویڈیو شوٹ کی اور اسے سوشل میڈیا پر پوسٹ کیا۔ بھوبن کا کہنا ہے ’میں نہیں جانتا کہ وہ شخص کون تھا لیکن میں اس کے لیے دعاگو ہوں۔‘

بھوبن نے ٹیلی گراف کو اپنے پس منظر اور خاندان کے بارے میں بھی بتایا۔ وہ کہتے ہیں کہ ’میں بیر بھوم کے ایک چھوٹے سے گاؤں سے تعلق رکھتا ہوں اور میرا خاندان اس گانے کی کامیابی سے بہت خوش ہے۔‘

وہ کہتے ہیں کہ ’میں جب بھی گھر سے باہر جاتا ہوں (جیسے میں ابھی پروگرام کے لیے کولکتہ آیا ہوں) میری بیوی بہت پریشان ہو جاتی ہے۔ میرا بیٹا بھی پریشان رہتا ہے کہ میں سفر کیسے کروں گا اور کہاں رہوں گا۔ لیکن مجھے یقین ہے کہ اگر خدا نے آپ کو راستہ دکھایا ہے تو وہ آپ کی رہنمائی بھی کرے گا۔‘

https://twitter.com/NehaSharma0202/status/1492765857570717696?s=20&t=VXFdgcqhNv-a_HY-u_0bNg

کچی مونگ پھلیاں بیچنے کے متعلق بھوبن کہتے ہیں ’کچے بادام (مونگ پھلی) بیچنے کے پیچھے بہت سی وجوہات ہیں۔ میرے پاس اسے بھوننے کا وقت نہیں ہوتا تھا اور ویسے بھی کچی مونگ پھلی زیادہ غذائیت سے بھرپور ہوتی ہے اور یہ ہمارے بالوں اور نظامِ ہضم کے لیے بھی اچھی غذا ہے۔‘

وہ کہتے ہیں بھنی ہوئی مونگ پھلی لذیذ ہوتی ہے لیکن کچی مونگ پھلی صحت کے لیے زیادہ بہتر ہے۔

یہ بھی پڑھیے

دنانیر مبین: ’پارری‘ کرنے والی وہ لڑکی جو ایک وائرل میم بن گئی!

’ترچھی نظروں والی کلوئی‘ اپنی وائرل میم فروخت کر رہی ہیں

’دوستی ختم‘: انٹرنیٹ پر وائرل پاکستانی میم لاکھوں روپے میں فروخت

بھوبن نہ صرف پیسوں بلکہ پرانے اور ناکارہ موبائل فونز اور دیگر کاٹھ کباڑ کے عوض بھی مونگ پھلی بیچتے تھا۔ وہ کہتے ہیں کہ اگر میں صرف پیسوں کے عوض مونگ پھلی بیچتا تو آمدنی کم ہوتی تھی۔

’لیکن ٹوٹی ہوئی اشیا کی بدلے مونگ پھلی بیچنے سے ڈھائی روپے کی بجائے پانچ روپے آمدن ہوتی تھی۔‘

بھوبن بتاتے ہیں کہ مونگ پھلی بیچتے ہوئے وہ بھجن اور روحانی کلام بھی گاتے تھے۔

ان کا کہنا ہے کہ ’میری زندگی میں جو تبدیلی آئی ہے وہ میرے تصور سے بہت زیادہ ہے۔ سمجھ نہیں آ رہا کہ لوگ مجھے اتنا پسند کیوں کر رہے ہیں۔‘

بھوبن بتاتے ہیں کہ حکومت اور ریاستی پولیس نے بھی ان کی بہت مدد کی ہے اور سنیما اور فلم کی دنیا سے لوگوں نے بھی اُن سے بات کی ہے۔


Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 24794 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments