پاکستان میں زہریلی مکڑیوں کی فروخت کا غیر قانونی دھندا جس میں کروڑوں روپے کا لین دین ہوتا ہے

اسلام گل آفریدی - صحافی


’مارچ میں ایک شخص نے لاہور سے فون کیا اور 500 بلیک وڈو مکڑیوں کا آرڈر دیا۔ ہم نے کلرکہار میں ایک شکاری سے بات کی۔ اس نے کہا میرے پاس 200 موجود ہیں۔ لیکن قیمت ایک کروڑ روپے ہوگی اور ایڈوانس میں دینی پڑے گی۔‘

فرمان اللہ (فرضی نام) پاکستان کے شہر پشاور سے تعلق رکھتے ہیں اور ایک ایسے غیر قانونی کاروبار کا حصہ ہیں جس میں نایاب نسل کی مکڑیوں کی خرید و فروخت کی جاتی ہے۔ انھوں نے بی بی سی سے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بات چیت کی اور پاکستان میں وسیع پیمانے پر ہونے والے اس کاروبار کی تفصیلات سے آگاہ کیا۔

پشاور کے 50 سالہ جان محمد (فرضی نام) بھی اسی کاروبار سے جڑے ہیں۔ وہ گذشتہ 10 برسوں سے بچھو اور نایاب نسل کی چھپکلیوں کے علاوہ حالیہ برسوں سے مکڑیوں کا غیر قانونی کاروبار بھی کر رہے ہیں۔

انھوں نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بی بی سی کو بتایا کہ پاکستان بھر میں ایک بڑا نیٹ ورک موجود ہے جس میں پشاور، اسلام آباد، کراچی اور لاہور کے بڑے بیوپاری نایاب نسل کی مکڑیاں خرید کر مہنگے داموں بیرون ملک بھجواتے ہیں۔

محکمہ جنگلی حیات خیبر پختونخوا کے حکام کا کہنا ہے کہ صوبے کے مختلف علاقوں میں ایسے گروہ سرگرم ہیں جو بچھو اور چھپکلی کے علاوہ نایاب نسل کی مکڑیوں کی غیر قانونی خرید و فرخت میں ملوث ہیں۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے سینٹر سرکل پشاور کے کنزرویٹر افتخار زمان نے بتایا کہ ’چند دن قبل ایبٹ آباد میں نایاب نسل کی ٹرنٹولا مکڑی سمگل کرنے کی کوشش کرنے والے تین افراد کو گرفتار کیا گیا جن کو وائلڈ لائف ایکٹ 2015 کے تحت ایک لاکھ روپے جرمانہ ہوا۔‘

’چند مکڑیوں کا ریٹ کروڑوں میں ہوتا ہے‘

جان محمد کے مطابق پاکستان میں تین اقسام کی مکڑیاں ہیں جن میں بلیک وڈو، بلیک اور براؤن کی مانگ کافی زیادہ ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ان مکڑیوں کو خیبر پختونخوا میں چترال اور مانسہرہ جبکہ پنجاب میں کلرکہار اور چکوال سے پکڑا جاتا ہے۔ ’اس کے علاوہ کشمیر اور بلوچستان کے ٹھنڈے علاقوں میں بھی نایاب نسل کی مکڑیاں پائی جاتی ہیں۔‘

جان محمد نے بتایا کہ مکڑی کا ریٹ نسل، وزن اور لمبائی کے حساب سے طے کیا جاتا ہے۔

’100 گرام تک وزن ہو تو چار سے پانچ کروڑ روپے، 200 گرام اور چھ انچ لمبائی والی ہو تو اور بھی زیادہ قیمت مل سکتی ہے۔ لیکن اتنے بڑے سائز کی مکڑیاں بہت کم مقدار میں شکاریوں کے ہاتھ آتی ہیں۔ اگر کوئی ان کو پکڑ بھی لے تو اُن کو لے جانا مشکل ہوتا ہے کیونکہ جگہ جگہ سکیورٹی چیک پوسٹ ہوتی ہیں۔‘

اُن کے بقول دو سے ڈھائی انچ اور 20 سے 30 گرام تک کی مکڑی پانچ لاکھ روپے جبکہ انتہائی چھوٹے سائز کے لیے 10 سے 15 ہزار روپے مل جاتے ہیں۔

جان محمد کے مطابق لوگ زیادہ تر چھوٹے سائز کی مکڑیاں خرید کر کچھ عرصے کے لیے ڈبوں میں رکھ کر مخصوص درجہ حرارت میں پالتے ہیں اور ان کی خوراک کے لیے مارکیٹ سے کیڑے خریدے جاتے ہیں۔

’نایاب نسل کی مکڑیوں کے لیے گرم آب و ہوا بھی جان لیوا ثابت ہو سکتی ہے۔ اسی لیے جب ان کو سرد علاقوں سے گرم علاقوں میں لایا جاتا ہے تو بیوپاری ٹھنڈے ماحول کا انتظام رکھتے ہیں۔‘

مکڑیوں کی مانگ کی وجہ کیا ہے؟

یہ مکمل طور پر واضح نہیں کہ مکڑیوں کے اس غیر قانونی کاروبار کے پیچھے اصل عوامل کیا ہیں لیکن پاکستان میں مکڑیوں کے کاروبار سے وابستہ افراد کا دعویٰ ہے کہ ان کے زہر کے حصول کے لیے لوگ ان کو خریدتے ہیں جس کو بعد میں ادویات بنانے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔

جان محمد کہتے ہیں کہ ’جن مکڑیوں کا کاروبار ہوتا ہے وہ انتہائی زہریلی ہوتی ہیں۔‘ اُن کہنا تھا کہ ’خریدار ہمیں صرف اتنا بتاتا ہے کہ ان کے زہر سے دوائی تیار کی جاتی ہے۔‘

اُنھوں نے کہا کہ ان کی مانگ امریکہ، یورپی ممالک اور روس میں کافی زیادہ ہے۔

اُن کے بقول ’بیرون ملک موجود لوگوں کے مقامی ایجنٹ یہاں اُن کے لیے خریداری کرتے ہیں۔‘ انھوں نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ بعض اوقات ’باہر سے لوگ یہاں آ کر مکڑیوں کو خرید کر اپنے ساتھ ہوائی جہاز میں لے جاتے ہیں۔‘ اُن کے مطابق یہ بااثر لوگ ہوتے ہیں۔

’اس کاروبار میں جھوٹ بہت بولا جاتا ہے‘

یہ کاروبار منافع بخش بھی ہے اور خطرات سے بھرپور بھی۔ ان میں سے ایک خطرہ اس غیر قانونی کاروبار کا وہ پہلو ہے جس میں فروخت کرنے والا اور خریدار دونوں ہی ایک دوسرے کو دھوکہ دینے کی کوشش کرتے ہیں۔

جان محمد بتاتے ہیں کہ ’اس کاروبار میں جھوٹ بہت زیادہ بولا جاتا ہے۔‘

’مثلاً جب کسی کو ویڈیو بھیجیں اور 25 لاکھ ریٹ بتاتے ہیں تو آگے وہ دوسرے بندے کو 80 لاکھ بتاتا ہے اور کہتا ہے کہ یہ میرے پاس موجود ہیں۔‘

انھوں نے بتایا کہ بعض لوگ گاہگ کو دھوکہ دینے کے لیے عام نسل کی مکڑیوں کو کیمیکل کے استعمال سے قیمتی نسل ظاہر کرنے کی کوشش بھی کرتے ہیں جس میں کم تجربہ کار بیوپاری اکثر دھوکہ کھا جاتے ہیں۔

فرمان اللہ (فرضی نام) بتاتے ہیں کہ ’مارچ کے مہینے میں لاہور سے ایک بندے نے ان کو پانچ سو بلیک وڈو کا آرڈر دیا۔‘

’جب ہم نے کلرکہار میں ایک شکاری سے بات کی تو اُس نے کہا کہ میرے پاس 200 تک موجود ہیں لیکن قیمت ایک کروڑ روپے ہے جو ایڈوانس میں ادا کرنی ہوگی۔ ہمارے پاس 40 لاکھ روپے تھے۔‘

’ہم دو دستوں نے اُس حساب سے سودا کیا۔ مکڑیوں کو گاڑی میں ڈال کر جیسے ہی لاہور پہنچے تو گاہگ نے اپنا موبائل بند کر دیا۔ کافی دیر انتظار کرنے کے بعد ہم واپس پشاور آ گئے۔ جب ہم نے شکاری کو مال واپس لینے کا کہا تو اس نے بھی انکار کر دیا۔ ہمیں تو ان کو پالنے کی سمجھ نہیں تھی، ساری مکڑیاں مر گئیں۔‘

یہ بھی پڑھیے

گوادر کی کروکر: ایک اکیلی مچھلی ایک کروڑ 34لاکھ میں

کپڑوں میں سانپ اور چھپکلیاں چھپا کر امریکہ میں داخل ہونے والا شخص گرفتار

پاکستان سے سمگل ہونے والے قیمتی کچھوے کہاں اور کتنے میں فروخت کیے جاتے ہیں

وھیل کی قے سونے سے قیمتی کیوں؟

مکڑی کا شکار کیسے کیا جاتا ہے؟

واجد اللہ (فرضی نام) کا تعلق مانسہرہ کے پہاڑی علاقوں سے ہے۔

گذشتہ ایک سال سے وہ اپنے علاقے سے نایاب نسل کی مکڑیاں پکڑ کر پشاور میں بیوپاریوں کو بھیجتے ہیں۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اُنھوں نے بتایا کہ ’اس علاقے میں دو تین قسم کی مکڑیاں ہیں جو گھنی گھاس اور ویرانوں میں پائی جاتی ہیں۔‘

’ان کو پکڑنا بہت مشکل کام ہے کیونکہ ایک تو یہ نازک ہوتی ہیں اور دوسرا یہ زہریلی بھی ہوتی ہیں۔ خطرہ ہوتا ہے کہ کہیں یہ پکڑنے والے کو ڈنگ نہ مار دیں۔‘

واجد اللہ کے مطابق ’مکڑی کا شکار کرنے سے پہلے ہاتھ پر پلاسٹک کے دستانے چڑھا کر جال سے مکڑی کو پکڑا جاتا ہے اور پھر اس کو ایک ڈسپوزیبل کپ میں ڈال دیا جاتا ہے جس کے اُوپر سے پلاسٹک میں سوراخ کر دیا جاتا ہے۔‘

اُنھوں نے بتایا کہ اس شکار کے لیے بیوپاریوں سے ایڈونس میں پیسے لیے جاتے ہیں۔

واجد اللہ کا دعویٰ ہے کہ وہ مکڑی کے شکار کے لیے محکمہ جنگلات سے باقاعدہ طور پر لائسنس بھی مانگ چکے ہیں لیکن ان کو انکار کر دیا گیا۔

ان کا دعویٰ ہے کہ محکمہ جنگلی حیات کے پاس مکڑیوں کے تحفظ کے لیے قانون میں کوئی دائرہ اختیار نہیں۔

تاہم محکمہ جنگلی حیات خیبر پختونخوا کے افتخار زمان کا کہنا ہے کہ ادارے کے پاس تمام جنگلی حیات کے تحفظ کا قانونی اختیار موجود ہے جس میں مکڑیوں کے شکار پر پابندی بھی شامل ہے۔

غیر قانونی دھندے کو روکنا مشکل کیوں ہے؟

افتخار زمان کے مطابق پاکستان کے ہزارہ ڈویژن کے علاوہ افغانستان کے سرحدی علاقوں سے بھی مکڑیوں کی سمگلنگ کی جاتی ہے اور پورے صوبے میں محکمہ جنگلی حیات کا عملے اس دھندے سے آگاہ ہے لیکن وسائل اور عملے کی کمی ان کے راستے کی ایک روکاٹ ہے۔

اُنھوں نے بتایا کہ مختلف معلومات کی بنیاد پر ادارہ کارروائی کرتا ہے اور قانون کے مطابق ملوث افراد کو تین سال قید اور لاکھوں روپے جرمانہ تک ہو سکتا ہے۔

لیکن دوسری جانب پاکستان میں سوشل میڈیا پر ایسے اکاؤنٹ بھی موجود ہیں جو نایاب قسم کے بچھو، چھپکلیوں اور مکڑیوں کی خرید و فروخت کے لیے چلائے جاتے ہیں تاہم اب تک محکمہ جنگلی حیات نے اس قسم کے آن لائن کاروبار کے خلاف کسی قسم کی کارروائی نہیں کی۔

افتخار زمان کہتے ہیں کہ یہ قانونی طور پر جرم ہے اور اس حوالے سے ان کا ادارہ کسی بھی قسم کی شکایت موصول ہونے کی صورت میں باقاعدہ طور پر ایسے افراد کے خلاف قانونی کارروائی کرے گا۔

مکڑیوں کی فارمنگ؟

جان محمد کہتے ہیں کہ اب پاکستان کے مختلف مقامات پر مکڑیاں پالنے کے رجحان کا آغاز ہو چکا ہے۔

’نہ صرف چھوٹی مکڑیوں کو پال کر بڑا کیا جاتا ہے بلکہ افزائش نسل بھی کی جا رہی ہے لیکن یہ انتہائی حساس اور مشکل کام ہے۔‘

اُنھوں نے کہا کہ ’مادہ مکڑی انڈہ دیتی ہے جس کی وجہ سے ان کا وزن آدھے سے بھی کم ہوجاتا ہے۔‘

’ایک انڈے سے ہزار تک انتہائی چھوٹے بچے پیدا ہوتے ہیں۔۔۔ مکڑیوں کو پالنے کے لیے لوگ خوراک کے طور پر کیڑے مارکیٹ سے خرید کر فراہم کرتے ہیں۔‘

اُن کا کہنا ہے کہ ’مخصوص نسل کے کیڑوں، جن میں پروٹین کی مقدار زیادہ ہوتی ہے، کی بھی فارمنگ ہوتی ہے جو کہ مہنگے داموں فروخت ہوتے ہیں۔‘

لیکن افتخار زمان نے مکڑیوں کی فارمنگ کے دعوے کو رد کرتے ہوئے کہا کہ ’مکڑیوں کی فارمنگ نہیں ہوتی بلکہ ان کو جنگلات سے پکڑ کر ہی فروخت کیا جاتا ہے۔‘

پشاور یونیورسٹی کے شعبہ زولوجی (حیوانیات) کے لیکچرار قیصر جمال بھی افتخار زمان سے اتفاق کرتے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ ’اب تک مکڑیوں کی فارمنگ کے حوالے سے باقاعدہ طور پر کام نہیں ہوا۔‘

مکڑیوں کو درپیش خطرات اور اثرات

ڈاکٹر قیصرجمال کہتے ہیں کہ مکڑی فصلوں کو نقصان پہنچانے والے کیڑوں سے محفوظ رکھنے کے لیے انتہائی اہم ہے۔

’اگر ان کی تعداد کم ہوتی ہے تو اس سے فصل کی پیداواری صلاحیت متاثر ہو گی۔‘

ڈاکٹر قیصر جمال کا کہنا ہے کہ ’مکڑیوں کے مسکن انسان کی وجہ سے غیر محفوظ ہوتے جا رہے ہیں جس کی وجہ سے مکڑیوں کی نسل کو خطرات لاحق ہیں۔‘

’انسانی آبادی میں اضافہ، فصلوں پر کیمیکل سپرے، جنگلات کی کٹائی، زرعی زمینوں کی کمی، کاروباری مقصد کے لیے مکڑیوں کا شکار، ان تمام کی وجہ سے مکڑیوں کو خطرہ ہے۔‘

اُن کے بقول ماحولیاتی تبدیلی اور حشرات پر اس کے اثرات کے حوالے سے مزید تحقیق کی ضرورت ہے تاکہ مستقبل میں پیدا ہونے والے ممکنہ خطرناک اثرات سے بچا جا سکے۔


Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 27626 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments