متناسب نمائندگی کا طریقہ انتخابات


متناسب طریقہ انتخابات دنیا بھر کے کئی ممالک میں نافذالعمل ہے، ور اسے کئی ممالک میں نافذ مختلف النوع نظام ہائے انتخابات اور حکومت میں نسبتاً زیادہ منصفانہ اور زیادہ جمہوری سمجھا جاتا ہے۔ اس نظام کی سب سے بڑی خوبی یہ ہے کہ ایک تو اس میں ووٹ ضائع نہیں ہوتا، دوم اس میں پاکستان جیسے معاشروں میں سیاسی اور انتخابی نظام کے لیے زہر قاتل سمجھے جانے والے الیکٹبلز کو انتخابی و سیاسی نظام کو یرغمال بنانے کا موقع نہیں ملتا۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کے اعداد و شمار کے مطابق 2018 کے عام انتخابات میں ہمارے ہاں رجسٹرڈ ووٹرز کی تعداد تقریباً 106 ملین تھی۔ ان رجسٹرڈ ووٹرز میں سے تقریباً 50 ملین نے ووٹ دیا جس کا مطلب ہے کہ تقریباً ہر دوسرے شخص نے اپنا ووٹ نہیں ڈالا اس طرح ان انتخابات کا مجموعی ٹرن آؤٹ 50 فیصد سے بھی کم رہا جو کہ دراصل موجودہ انتخابی نظام پر عدم اعتماد کا مظہر ہے۔ پاکستان کے 2018 کے عام انتخابات کے برعکس اگر ہم دیکھیں تو 2020 کے امریکی صدارتی انتخابات میں ڈالے گئے کل ووٹوں کی شرح 66.4 فیصد رہی، 2019 میں برطانیہ کے پارلیمانی انتخابات میں ووٹوں کا تناسب 67.3 فیصد رہا، 2019 کے بھارتی عام انتخابات میں ووٹوں کی مجموعی شرح 67.4 فیصد رہی، 2018 میں برازیل کے عام انتخابات میں پولنگ کا تناسب 79.7 فیصد جب کہ 2017 کے فرانسیسی صدارتی انتخابات میں یہ شرح 74.6 فیصد رہی، ان انتخابی نتائج سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں ہے کہ دنیا کے ترقی یافتہ اور ترقی پذیر جمہوریتوں پر ان ممالک کے ووٹرز کا اعتماد کس سطح کا ہے۔

یہ صورتحال پاکستان جیسی نوزائیدہ جمہوریت کے لیے تشویش کا باعث ہے کیونکہ 2018 کے انتخابات میں قومی اسمبلی کے جیتنے والے تمام امیدواروں کے حاصل کردہ ووٹوں کو ملا کر صرف 22 ملین ووٹ پول ہوئے تھے جس کا مطلب ہے کہ یہ منتخب نمائندے الیکشن کمیشن کے پاس رجسٹرڈ 5 میں سے صرف 1 ووٹر کی نمائندگی کرتے تھے۔ اگر ان اعداد و شمار کی روشنی میں ہم 2018 کے انتخابات کے فوری بعد برسراقتدار آنے والی حکومتی پارٹیوں کا جائزہ لیں تو ہمیں معلوم ہو گا کہ قومی اسمبلی میں ان جماعتوں کو صرف 12 ملین ووٹ ملے تھے جو کل رجسٹرڈ ووٹرز کا تقریباً 11 فیصد بنتے تھے یعنی ہمارے موجودہ انتخابی نظام کے تحت 10 فیصد لوگ 90 فیصد لوگوں پر حکومت کر سکتے ہیں اور ایسا عملاً پہلے بھی ہوتا رہا ہے اور اب بھی ہو رہا ہے۔

یہ صورت حال ان ووٹرز کے موجودہ انتخابی نظام پر سے ان کا اعتماد اٹھانے کے لیے کافی ہے جنہوں نے برسراقتدار آنے والی جماعتوں کی بجائے دیگر جماعتوں کو ووٹ دیے ہوتے ہیں، اس صورتحال سے انہیں ایسا محسوس ہوتا ہے گویا وہ اکثریت میں ہونے کے باوجود انتخابی عمل سے باہر کر دیے گئے ہیں جس کا نتیجہ سیاسی فرسٹریشن اور مروجہ انتخابی نظام پر عدم اعتماد کی صورت میں سامنے آتا ہے۔ لہٰذا یہ صورتحال ہمارے ارباب اختیار کے لیے ایک بڑا چیلنج ہے کہ وہ اس گمبھیر اور مایوس کن حالات سے قوم کو کس طرح نکالتے ہیں۔

اس ضمن میں ایک بہترین اور قابل عمل مثال متناسب طریقہ ہائے انتخابات کی دی جا سکتی ہے جس میں نہ تو کوئی ایک بھی ووٹ ضائع ہوتا ہے اور نہ ہی یہ نظام اتنا پیچیدہ اور ناقابل عمل ہے کہ اس پر پاکستان جیسے پارلیمانی جمہوری ملک میں عملدرآمد ممکن نہیں ہے۔ درحقیقت متناسب ووٹنگ ایک ایسا نظام ہے جس میں جماعتوں کو انتخابات میں حاصل کردہ ووٹوں کی تعداد کے تناسب سے نشستیں دی جاتی ہیں۔ متناسب طریقہ انتخابات میں اس بات کو یقینی بنایا جاتا ہے کہ مقننہ میں تمام سیاسی نقطہ ہائے نظر کی نمائندگی موجود ہو، اس نظام میں نشستوں کی تقسیم رائے عامہ کی تقسیم کی عکاسی کرتی ہے۔

متناسب نمائندگی کے نظام میں ووٹر انفرادی امیدواروں کی بجائے کسی سیاسی جماعت کو ووٹ دیتے ہیں۔ اس نظام میں ہر پارٹی الیکشن سے پہلے اپنے امیدواروں کی ایک فہرست الیکشن کمیشن کو پیش کرتی ہے اور اس طرح پارلیمنٹ میں تمام جماعتوں کو حاصل کردہ ووٹوں کی مجموعی شرح سے پہلے سے جمع شدہ پارٹی فہرستوں کے مطابق نشستیں الاٹ کی جاتی ہیں، دلچسپ امر یہ ہے کہ اس نظام کے استحکام اور اسے معتبر بنانے کے لیے پارلیمنٹ میں نمائندگی کے لیے ہر پارٹی کے لیے کم از کم 5 فیصد ووٹ لینا لازمی ہوتا ہے۔

اس نظام کو پاکستان میں متعارف کرنے کا فائدہ یہ ہو گا کہ یہاں پارٹی امیدواروں اور نام نہاد الیکٹبلز کی اجارہ داری کی بجائے صرف رجسٹرڈ پارٹیوں کو الیکشن لڑنے کی اجازت ہوگی جس سے نہ صرف ووٹرز کو ووٹ ڈالنے میں آسانی ہوگی بلکہ وہ امیدواران کے بلند بانگ دعوؤں اور ان کے استحصال سے بھی بچ جائیں گے۔ ووٹوں کی گنتی کے بعد پارٹیوں کو حاصل کردہ ووٹوں کے تناسب کی بنیاد پر قومی اسمبلی میں بعینہ اسی طرح نشستیں تفویض کی جائیں گی جس طرح آج کل خواتین اور اقلیتوں کو الاٹ کی جاتی ہیں۔

متناسب نظام کا ایک اہم پہلو یہ ہے کہ اس سے اگر ایک جانب پارٹیوں کی جان الیکٹیبلز کی بلیک میلنگ سے چھوٹ جائے گی تو دوسری جانب اس سے جمہوریت کی نرسریاں سمجھی جانے والی سیاسی جماعتوں کے پنپنے اور سیاسی استحکام کے امکانات بھی پیدا ہوں گے جب کہ اس نظام کا ایک اور مثبت پہلو انتخابی اخراجات میں کمی کی صورت میں بھی سامنے آئے گا۔


Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments