پنجاب اسمبلی کی سابق رکن اور مسلم لیگ ق کی رہنما پروین سکندر گل قتل کر دی گئیں

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

پنجاب اسمبلی کی سابق رکن اور مسلم لیگ ق کی رہنما پروین سکندر گل کو لاہور میں ان کے گھر پر قتل کر دیا گیا ہے۔ پولیس کی بھاری نفری تفتیش کیلئے ان کے گھر پہنچ گئی۔ تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے۔ مقتولہ 2002 سے 2007 تک مسلم لیگ (ق) کے ٹکٹ پر خواتین کی مخصوص نشست پر پنجاب اسمبلی کی ممبر رہ چکی تھیں۔

تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ ق کی رہنما پروین سکندر گل آج لاہور کے علاقے نصیر آباد میں واقع اپنے گھر میں مردہ حالت میں پائی گئیں۔ نامعلوم حملہ آور نے رسی سے گلا گھونٹ کر انھیں قتل کیا ہے۔

ابتدائی تحقیق سے یہ ذاتی دشمنی کا شاخسانہ لگ رہا ہے۔ بتیا گیا ہے کہ ان کا جائیداد کے معاملے کچھ تنازع بھی چل رہا تھا۔ پولیس نے بتایا ہے کہ مقتولہ سکندر پروین گل غیر شادی شدہ تھیں اور گھرکی بالائی منزل پر اکیلی رہتی تھیں۔ گھر کے نیچے والی منزل پر سکندر پروین گل کا بھائی رہتا ہے۔ 64 سالہ پروین سکندر اپنے کمرے میں مردہ حالت میں پائی گئیں۔  ان کے ہاتھ پاؤں رسیوں سے بندھے ہوئے تھے اور پولیس کا کہنا تھا کہ ان کے گلے پر رسی کے نشانات پائے گئے ہیں۔

پروین سکندر گل 12 اکتوبر 1955 کو لاہور میں پیدا ہوئیں۔ ان کے والد کا نام چوہدری سکندر علی گل تھا۔ انہوں نے 1981 میں لاہور کالج برائے خواتین سے بی اے کیا۔ ایک فعال سوشل ورکر ہونے کے علاوہ انہیں کھیلوں میں خاص دلچسپی تھی۔ پروین سکندرگل پنجاب ویمن ہاکی ایسوسی ایشن کی سیکرٹری بھی رہیں۔ پروین سکندر سنہ 2001 میں ضلع کونسل کی ممبر منتخب ہوئی تھیں اور لاہور سٹی کونسل کی ڈپٹی اسپیکر بھی رہیں۔ قبل ازیں وہ لاہور کی بلدیاتی حکومت میں چار بار کونسلر منتخب ہوئی تھیں۔ وہ 2002 سے 2007 تک پنجاب اسمبلی کی رکن رہیں۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •