ڈاکٹر یاسمین راشد: کیسنر سے جنگ کے دوران فرائض سرانجام دینے پر وزیرِ صحت کے حوصلے کی تعریف، صحتیابی کی دعائیں

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

پاکستان کے صوبہ پنجاب کی وزیرِ صحت ڈاکٹر یاسمین راشد چند ماہ قبل بریسٹ کینسر میں مبتلا ہو گئی تھیں جس کے ساتھ ان کی جنگ تاحال جاری ہے۔

آج کل وہ سرجری کروانے کے بعد اب کیموتھیراپی سے گزر رہی ہیں اور ساتھ ساتھ اپنی پیشہ وارانہ ذمہ داراییاں بھی نبھا رہی ہیں۔ حال ہی میں یاسمین راشد محکمہ صحت کے دیگر حکام کے ہمراہ لاہور میں کورونا وائرس کی تیسری لہر کے حوالے سے حکومتی انتظامات پر پریس کانفرنس کر رہی تھیں۔

بی بی سی کے نامہ نگار عمر دراز ننگیانہ کے مطابق اس موقعے پر ان کی آواز میں وہی رعب اور دبدبہ قائم تھا اور ان کے چہرے پر کسی قسم کی تھکن کے آثار نظر نہیں آ رہے تھے۔ انھوں نے سر پر کالے رنگ کا سکارف پہن رکھا تھا جو دوپٹے کے نیچے سے جھلک رہا تھا۔ دو ہی روز قبل وہ گیارہویں مرتبہ کیمو تھیراپی کے عمل سے گزریں تھیں۔

کیمو تھیراپی کے طریقہ علاج میں مریض کے سر کے بال مکمل طور پر جھڑ جاتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

پنجاب کی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد کا انٹرویو

کیا یاسمین راشد این اے 120 کی تاریخ بدل سکیں گی؟

یاسمین راشد کے بیان پر ’لاہوری‘ ناراض

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے ڈاکٹر یاسمین راشد نے بتایا کہ گذشتہ برس دسمبر میں ان کا بریسٹ کینسر کا آپریشن ہوا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ ’میری بارہ کیمو تھیراپیز ہونا تھیں جن میں سے گیارہ مکمل ہو چکی ہیں۔‘

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ’بہت جلد یہ عمل مکمل ہو جائے گا اور میں نارمل ہو جاؤں گی۔‘

ڈاکٹر یاسمین راشد نے بتایا کہ ان میں بیماری کی تشخیص بہت جلد ہو گئی تھی جس کی وجہ سے ان کا کامیاب آپریشن بھی ہو گیا اور اب ان کی صحت تیزی سے بحال ہو رہی ہے۔

تاہم کیمو تھیرپی کے عمل کے بارے میں تاثر یہی ہے کہ یہ بیماری سے بھی زیادہ تکلیف دہ ہوتا ہے۔ تاہم ڈاکٹر یاسمین راشد کا کہنا تھا کہ وہ اپنے فرائض جاری رکھے ہوئے ہیں اور انھیں کسی دقت کا سامنا نہیں ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ یوں تو ان کی بیماری کا معاملہ ذاتی نوعیت کا ہے تاہم انھوں نے ان تمام افراد کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے دعاؤں میں انھیں یاد رکھا اور نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ اب ہم سب نے مل کر کورونا جیسی وبا کو بھی شکست دینا ہے۔

’ڈاکٹر یاسمین راشد صحیح معنوں میں خاتونِ آہن ہیں‘

سوشل میڈیا پر وزیر صحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد کے حوصلے کو داد دی جا رہی ہے اور بے شمار صارفین انھیں خراج تحسین پیش کر رہے ہیں۔

پاکستان تحریکِ انصاف کے علاوہ ملک کی دوسری سیاسی جماعتوں کی جانب سے بھی ان کی صحت یابی کے لیے نیک تمناؤں کا اظہار کیا جا رہا ہے۔

پاکستان مسلم لیگ نواز کی نائب صدر مریم نواز نے بھی ڈاکٹر یاسمین راشد کے لیے نیک تمناؤں کا اظہار کرتے ہوئے ٹویٹ کیا ’ڈاکٹر یاسمین راشد کی صحت کے لیے دعا گو ہوں۔ میری والدہ نے اس موذی مرض کا سامنا کیا ہے اور میں جانتی ہوں یہ کتنی تکلیف دے بیماری ہے۔ ڈاکٹر صاحبہ بھی ماں ہیں۔ اللّہ ماؤں کو سلامت رکھے۔ آمین۔‘

مسلم لیگ نواز کی مائزہ حمید نے بھی اپنے والد کی بیماری کا ذکر کرتے ہوئے لکھا ’میرے والد کو بھی کینسر تھا مجھے اندازہ ہے کہ کتنی تکلیف ہوتی ہے۔ یاسمین راشد صاحبہ جو کہ کینسر کے موذی مرض میں مبتلا ہیں دعا ہے خدا ان کو رمضان کے بابرکت مہینے کے صدقے شفائے کاملہ اور صحت کے ساتھ لمبی عمر عطا فرمائے۔‘

عوامی نیشنل پارٹی کے میاں افتخار حسین نے ان کی صحت کے لیے دعا کرتے ہوئے لکھا کہ ڈاکٹر یاسمین راشد کی پانچ مہینے قبل کینسر سرجری ہوئی تھی اور وہ کیموتراپی کے تکلیف دہ مراحل سے گزر رہی ہیں لیکن پھر بھی کورونا وبا کی روک تھام اور متاثرین کی دیوانہ وار خدمت کررہی ہے۔ یقیناً وہ اپنا کرب محسوس کرتے ہوئے دوسروں کی تکلیف کو اتنی شدت سے محسوس کرتی ہیں۔‘

زاہد علی صادق نے لکھا ’ہم آپ کی خدمات کا بدل تو نہیں دے سکتے لیکن دعا دے سکتے ہیں کہ خدا ڈاکٹر یاسمین راشد صاحبہ کو کینسر جیسی بیماری سے جلد از جلد صحت کاملہ عطا فرمائے۔‘

گل نامی صارف نے انھیں خاتونِ آہن قرار دیتے ہوئے لکھا ’ڈاکٹر یاسمین راشد صحیح معنوں میں خاتون آہن ہیں۔‘

اس کے ساتھ انھوں نے لکھا ’جن کے پیارے کینسر کی ٹریٹمنٹ سے گزر رہے ہوں ان کو پتہ ہے کہ یہ ٹریٹمنٹ کتنی تکلیف دہ اور سفاک ہے، لیکن یہ خاتون ایک شفیق ماں کی طرح اپنی تکلیف پیچھے کر کے دن رات کورونا کے متاثرین کے لیے کام کر رہی ہیں۔‘

کئی صارفین یہ بھی کہتے نظر آئے کہ آئرن مین کی کسے ضرورت ہے جب خدا نے ہمیں آئرن لیڈی سے نوازا ہے۔‘

کئی افراد وزیرِ صحت کو آرام دینے کی تجویز دے رہے ہیں۔

آمنہ امن نامی صارف نے وزیِر اعظم عمران خان کو ٹیگ کرکے لکھا ’ہمیں علم ہے کہ یاسمین راشد محنتی اور دیانتدار خاتون ہیں مگر بہرحال انسان ہیں اور آج کل صوبے کے حالات کورونا کی وجہ سے شدید خراب ہیں اور ڈاکٹر صاحبہ کینسر کے موذی مرض سے لڑ رہی ہیں، کیمو تھراپی کی شدت سے ان کے بال جھڑ چکے ہیں لہذا ایسے میں انھیں آرام دیا جائے۔‘

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 18943 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp