آصف علی زرداری


آصف علی زرداری کی شخصیت پر اگر نظر دوڑائی جائے تو یہ کہنا غلط نہیں ہو گا کہ انہوں نے ہمیشہ اپنے نام اور اپنی شخصیت کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنے سیاسی فیصلے کیے ۔ ایک طرف اپنی جوانی کے اہم دن انہوں نے جیل میں گزار دیے عوام و پی ٹی آئی کے نعرے مارنے والوں کو یہ بات یاد کروانے کی اشد ضرورت ہے کہ آصف علی زرداری کو جب جیل میں رکھ کر تشدد کیا جاتا تو ان کا سر پکڑ کر دیوار میں مارا جاتا حتی کہ ان کو کرنٹ لگا کر مجبور کیا جاتا کہ وہ اپنے سر ہر وہ الزام لیں جو انہوں نے کبھی کیا نہیں اور بھٹو خاندان کے خلاف اسٹیبلشمنٹ کا ایک مہرہ بن جائیں تاکہ آنے والے وقت میں باقاعدہ طور پر بھٹو خاندان کے خلاف نفرت بھرے باب کتابوں میں پڑھائے جائیں لیکن آصف علی زرداری نے محترمہ بینظیر بھٹو شہید سے شادی کے وقت کیا وعدہ وفا کیا اور ہر مشکل میں ان کے آگے دیوار بن کر کھڑے رہے۔

آصف علی زرداری کو جیل میں رکھ کر جو تشدد ہوا اس پر محترمہ بینظیر بھٹو شہید کو پیغام بھجوا کر یہ تاثر دیا جاتا رہا کہ آصف علی زرداری کو جان سے مار دیا جائے گا زرداری صاحب پر انتہاء کا ظلم کیا جاتا رہا ان کی زبان کاٹنے کی کوشش کی جاتی کبھی ان پر ڈنڈے برسا کر ان کو لہو لہان کیا گیا لیکن محترمہ عورت ہو کر ظالم و جابر کے آگے نہیں جھکی اور یہ مرد ہو کر۔ آصف علی زرداری کے معصوم بچوں کو اپنے باپ سے ملاقات کے لئے روکا جاتا رہا۔

آصف علی زرداری جن کی جان اپنے بچوں میں بستی تھی ان کو اپنے بچوں سے دور رکھ کر ان پر یہ ظلم بھی کیا کہ باپ کو بچوں اور بچوں کو باپ کی شفقت سے دور رکھا۔ تاریخ میں یہ حروف لکھے جا چکے ہیں۔ محترمہ سے شادی سے پہلے آصف علی زرداری کا لائف سٹائل بالکل ایک منفرد اور اعلی طرز کا تھا۔ اپنی زندگی میں گھوڑے پالنے کا شوق رکھنے والے رئیس زادے آصف علی زرداری کو محترمہ سے شادی کے بعد مسلسل تھریڈ کیا جانے لگا کبھی ان پر کرپشن کے کیس کبھی ان پر قتل کبھی کوئی الگ کیس بنا کر ان کی کردار کشی کی جاتی رہی لیکن ان کا حوصلہ کبھی پست نہ ہوا فاروق لغاری سے لے کر آج عمران خان تک کے آمروں کی کٹھ پتلیوں نے بہت کوشش کی لیکن آصف علی زرداری پر ایک بھی کیس ثابت نہ کر سکے۔

دور حاضر میں اگر کوئی اللہ اور اس کے رسول ص کے حکم کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنے مخالفین سے اچھے سلوک کے لئے میدان میں آیا تو اس شخص کا نام بھی آصف علی زرداری ہے جس نے اپنے دور حکومت میں اپنے مخالفین کو بھی معاف کر کہ ان کو اپنے ساتھ ملا کر چلنے کو ترجیح دی۔ جب شریف خاندان پر مشکلات آئیں تو آصف علی زرداری نے اس کی بھی مذمت کی اور آج جب عمران خان کو گرفتار کرنے کے لئے ایف آئی آر درج ہوئی تو اس پر بھی آصف علی زرداری کا بیان سامنے آیا کہ عمران خان کو گرفتار نہیں کرنا چاہیے۔ بیشک عزت دینے والی اللہ کی ذات ہے لیکن اللہ کے اس درویش بندے نے اپنے مخالفین سے بھی اچھا سلوک کر کہ ثابت کیا کہ بطور مسلمان ہمارا مذہب پیار محبت اور بھائی چارے کا درس دیتا ہے۔


Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments