مغربی دنیا کے لبرل ازم کی آخری حد


غلاموں کا ایک گروہ کئی سال سے ایک پنجرے میں قید ہے، پنجرے کے مالکان اِن غلاموں کو صرف اپنے کام کاج کی غرض سے پنجرے سے باہر نکالتے ہیں، اُن سے مشقت کرواتے ہیں، انہیں بلاوجہ مارتے پیٹتے ہیں اور کبھی کبھار کسی غلام کو ذرا سی غفلت پر قتل بھی کر دیتے ہیں۔ ایک دن کچھ غلام فیصلہ کرتے ہیں کہ وہ پنجرے میں مزید زندگی نہیں گزار سکتے، انہیں اِس خوف اور دہشت کی زندگی سے آزاد ہونا چاہیے، اور اِس آزادی کے لیے ضروری ہے کہ وہ مالکان کے خلاف بغاوت کر دیں۔

پنجرے میں قید زیادہ تر غلام اِس تجویز کی تائید کرتے ہیں مگر چند جہاندیدہ غلاموں کو یہ بات پسند نہیں آتی، وہ اپنے ساتھیوں کو اِس سے باز رہنے کا مشورہ دیتے ہیں اور کہتے ہیں کہ تم اِس بغاوت میں کبھی کامیاب نہیں ہو پاؤ گے، ہمارے مالکان بے حد طاقتور لوگ ہیں، اُن کے پاس جدید ہتھیار ہیں، اُن کے حامیوں کی تعداد بھی بہت زیادہ ہے لہذا کسی بھی طرح یہ دانشمندی نہیں کہ اُن سے بھِڑا جائے، عافیت اسی میں ہے کہ چپ چاپ کام کرو اور گاہے بگاہے مالکان کے سامنے پُر امن انداز میں اپنا احتجاج ریکارڈ کرواتے رہو، اِس کا بہت اثر ہو گا اور ہم اِن مالکان کے حامیوں کو اپنا ہمنوا بنا لیں گے جن کے بل بوتے پر انہوں نے ہمیں قید کر رکھا ہے۔

جہاندیدہ غلاموں کی دلیل تسلیم کرلی جاتی ہے۔ اگلے روز جب مالکان اِن غلاموں کو پنجروں سے باہر نکال کر کام کے لیے لے جاتے ہیں تو یہ غلام پُر امن انداز میں مطالبہ کرتے ہیں کہ اُن کے بچوں سے زیادہ مشقت نہ کروائی جائے، انہیں وقت پر کھانا دیا جائے اور ہفتے میں ایک دن آرام کا مقرر کیا جائے۔ مالکان اُن کی یہ مانگیں سُن کر ایک دوسرے کی طرف دیکھ مسکراتے ہیں، پھر اُن میں سے ایک شخص اپنی بندوق تان کر غلاموں پر اندھا دھُند گولیوں کی بوچھاڑ کر دیتا ہے، نتیجے میں چار بچے اور اٹھارہ جوان ہلاک ہو جاتے ہیں۔

یہ اُس ظلم کی تمثیل ہے جو گزشتہ پچھتر برس سے اسرائیل فلسطینیوں پر ڈھا رہا ہے۔ تاہم اگر آپ میں سے کسی کو یہ تمثیل مبالغہ آمیز لگے تو اسے چاہیے کہ وہ اپنی پسند کی کوئی لغت نکالے اور اُس میں نسل کُشی، جنگی جرائم، حراستی مراکز، اجتماعی سزا اور مرگ انبوہ جیسی تراکیب کے مطلب تلاش کر کے انہیں اسرائیل کی فلسطینیوں کے خلاف موجودہ جنگی کارروائی پر منطبق کر کے دیکھے، معاملہ صاف ہو جائے گا۔ جو کچھ اِس وقت اسرائیلی فوج غزہ میں کر رہی ہے وہ ٹیکسٹ بُک جنگی جرائم سے کم کچھ نہیں ہے، آپ اِس معاملے کو سیدھا کر لیں، اُلٹا کر لیں، حماس کی مذمت کر لیں یا فلسطینیوں کی حکمت عملی پر تنقید کر لیں، ہر لحاظ سے مجرم اسرائیل ہی ثابت ہو گا۔ تادم تحریر اسرائیل اپنی نام نہاد ’دفاعی کارروائی‘ میں ساڑھے سات سو فلسطینی بچوں کو ہلاک کر چکا ہے اور غزہ کو تقریباً کھنڈر بنا چکا ہے، اِس کے باوجود امریکہ، یورپی یونین، برطانیہ اور اُس کے ہمنوا بدمعاش مغربی ممالک کا اصرار ہے کہ اسرائیل مظلوم ہے اور فلسطینی دہشت گرد۔

اصل میں مغربی ممالک حماس کی آڑ میں فلسطینیوں کو ہی دہشت گرد کہتے ہیں، یہی وجہ ہے کہ بی بی سی نے فلسطینیوں کے حق میں نکالی جانے والی ایک ریلی کے بارے میں کہا کہ وہ حماس کی حمایت میں تھی اور پھر اگلے دن کچھ شرم و حیا کر کے اِس بات کی تردید جاری کردی۔ اسی طرح مغربی میڈیا نے یہ جعلی خبریں بھی پھیلائیں کہ حماس نے چالیس چھوٹے بچوں کے سر کاٹ دیے ہیں اور پھر اِس خبر کی تردید بھی کی۔ اسرائیل کی اندھا دھُند حمایت کا اندازہ اِس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ امریکہ صدر نے بھی اِس خبر کو درست سمجھ کر بیان جاری کر دیا جسے بعد ازاں وہائٹ ہاؤس نے واپس لے لیا۔

اسرائیل کی جارحیت نے اِس مرتبہ جس طرح مغرب کے لبرل ازم کو بے نقاب کیا ہے وہ ناقابل یقین ہے۔ اِن تمام مغربی ممالک کی تاریخ، فلسفہ، تہذیب، انسان دوستی، مساوات، جمہوریت، بنیادی حقوق، قانون کی پاسداری اور نا انصافی سے متعلق بلند بانگ دعوے، جن سے ہمارے لکھاری بہت متاثر تھے (ہیں ) اپنی موت آپ مر گئے ہیں، آج مغربی حکمرانوں نے ثابت کر دیا ہے کہ اُن کی آنکھوں پر تعصب کی پٹی بندھی ہے جس کی وجہ سے انہیں اسرائیل کی مظلومیت کے سوا کچھ نظر نہیں آتا۔ دراصل اسرائیلی ریاست نے اپنے قیام سے اب تک جس طرح ہولوکاسٹ کی مارکیٹنگ کی ہے اُس نے مغربی دنیا کو بہت متاثر کیا ہے، ستّر لاکھ یہودیوں کا قتل اسرائیل کے قیام کا سب بنا اور آج یہ اسرائیل کا سب سے بڑا ہتھیار ہے۔

اب حالات تبدیل ہو رہے ہیں، اسرائیل کی مارکیٹنگ کا یہ حربہ اب کام نہیں کر رہا، یہی وجہ ہے کہ حماس کے حملوں کے باوجود پوری دنیا میں اسرائیلی جارحیت کے خلاف مظاہرے ہو رہے ہیں۔ مسلمان ممالک میں تو پہلے ہی فلسطینیوں کی حمایت موجود تھی مگر اِس مرتبہ مغربی ممالک کے عوام سب سے آگے ہیں، فرانس نے فلسطینیوں کے حق میں مظاہروں پر پابندی لگا دی تھی مگر اِس کے باوجود وہاں لاکھوں کی تعداد میں لوگ جمع ہوئے اور یہی حال یورپ کے دیگر ممالک اور امریکہ اور برطانیہ کا ہے۔ کولمبیا نے اسرائیلی سفیر کو ملک بدر کر دیا ہے جبکہ سپین کی ایک وزیر نے نتن یاہو کے خلاف جنگی جرائم کا مقدمہ چلانے کا مطالبہ کیا ہے۔ ایسا کیوں ہو رہا ہے؟

اِس کی وجہ یہ ہے کہ آج سے پندرہ بیس سال پہلے تک اسرائیلی کے لیے میڈیا منیجمنٹ آسان ہوا کرتی تھی، مگر ٹویٹر اور فیس بُک کی آمد کے بعد یہ ممکن نہیں رہا، لوگ اسرائیل کے حق میں یک طرفہ پروپیگنڈا سُن سُن کر عاجز آ گئے تھے، سوشل میڈیا پر جب انہیں تصویر کا دوسر رُخ دیکھنے کو ملا تو انہیں علم ہوا کہ اصل مجرم تو اسرائیل ہے، فلسطینیوں پر بمباری کی تصاویر جس انداز میں اِس مرتبہ سوشل میڈیا نے دکھائیں وہ آج سے دس بیس برس پہلے ممکن نہیں تھا۔

اب ملین ڈالر سوال یہ ہے کہ کیا اسرائیل اپنے جنگی اقدامات سے فلسطینیوں کو کُچل کر رکھ دے گا اور کیا حماس کا یہ حملہ فلسطینیوں کی ’کاز‘ کو نقصان پہنچانے کا سبب بنا؟ میری رائے میں اسرائیل وقت کو شکست دینے کی کوشش کر رہا ہے اور یہ کوشش کامیاب نہیں ہوگی۔ یہ محض جذباتی بات نہیں ہے۔ اگر آپ اسرائیل کا نقشہ نکال کر دیکھیں تو پتا چلے گا کہ اسرائیلی ایک پٹی پر آباد ہیں، شمال سے جنوب تک یہ 263 میل لمبی ہے جبکہ چوڑائی میں یہ 71 میل ہے اور ایک جگہ تو محض 6 میل رہ جاتی ہے، باقی سارا اسرائیل صحرا ہے، ارد گرد فلسطین کا مغربی کنارا، غزہ اور رملہ ہیں۔ اسرائیل دنیا کا واحد ملک ہے جس پر باآسانی راکٹ داغے جا سکتے ہیں کیونکہ اِس کا جغرافیہ ہی ایسا ہے کہ ارد گرد کی آبادی سے اِس کے شہروں پر راکٹ پھینکے جا سکتے ہیں اور حماس نے یہی کیا۔ کیا اسرائیل کے شہری اِس ماحول میں رہنا چاہتے ہیں؟ سادہ جواب ہے کہ نہیں۔

سو، اسرائیل کے پاس دو آپشن ہیں، پہلا یہ کہ دو ریاستوں کے قیام پر آمادہ ہو جائے، اِس میں اسرائیل کا نقصان ہے کیونکہ جس لمحے فلسطین کو باقاعدہ ریاست تسلیم کر لیا گیا تو اسے مغربی کنارے اور غزہ کے درمیان راستہ دینا ہو گا، ایک آزاد ریاست کے طور پر فلسطین کسی بھی دوسری ریاست سے دفاعی معاہدے کر سکے گا، یہ بات اسرائیل کے وجود کے لیے خطرہ ہوگی، اسی لیے اسرائیل نے معاہدہ کرنے کے باوجود اِس آپشن پر عمل نہیں کیا۔ دوسرا آپشن ایک ہی ریاست میں اسرائیلیوں اور فلسطینیوں کو ضم کرنا ہے، لمحہ موجود میں یہ بھی ممکن نہیں رہا کیونکہ اِس وقت فلسطینیوں کی آبادی اسرائیلیوں سے تجاوز کر چکی ہے، جونہی یہ ضم ہوئے، اسرائیل میں فلسطینیوں کی حکومت جمہوری اصول کے تحت قائم ہو جائے گی۔

یہی وجہ ہے کہ اسرائیل آئے روز فلسطینیوں کو اُن کے گھروں سے بے دخل کر کے یہودیوں کو آباد کرتا ہے تاکہ آبادی کا یہ تناسب بہتر کیا جا سکے ورنہ اسرائیل میں کوئی لُٹا پُٹا بے گھر یہودی نہیں ہے۔ مصر اور اردن بھی اسی وجہ سے اپنی سرحدیں فلسطینیوں کے لیے نہیں کھولتے کیونکہ ایک مرتبہ اگر فلسطینی اپنا علاقہ چھوڑ کر باہر چلے گئے تو آزاد فلسطین کا خواب کبھی پورا نہیں ہو سکے گا۔ ایسے میں اسرائیل کے پاس صرف ایک آپشن بچتا ہے کہ وہ فلسطینیوں کی پوری آبادی کو اسی طرح ہلاک کردے جیسے دوسری جنگ عظیم میں ہٹلر نے یہودیوں کو کیا تھا۔ کیا اِس طریقے سے اسرائیل یہ جنگ جیت سکتا ہے؟ میرا جواب ناں میں ہے!

یاسر پیرزادہ

Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

یاسر پیرزادہ

Yasir Pirzada's columns are published at Daily Jang and HumSub Twitter: @YasirPirzada

yasir-pirzada has 482 posts and counting.See all posts by yasir-pirzada

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments