چند مقبول عام فلمی سین

محبت کا سین مجنوں، مجھے تم سے کچھ کہنا ہے لیلیٰ۔ لیلیٰ، یہی نا کہ تمہیں مجھ سے محبت ہے۔ مجنوں، محبت نہیں بلکہ۔۔۔ لیلیٰ، (بات کاٹ کر)والہانہ عشق ہے۔ لیلیٰ، شکریہ، لیکن مجھ سے بغلگیر ہونے کی کوشش مت کرو، وہیں کھڑے کھڑے میری طر ف دیکھ کر مسکراتے رہو۔ مجنوں، مگر کیوں؟ لیلیٰ،…

Read more

سائیں بابا کا مشورہ

میرے پیارے بیٹے مسٹر غمگین! جس وقت تمھارا خط ملا، میں ایک بڑے سے پانی کے پائپ کی طرف دیکھ رہا تھا جو سامنے سڑک پر پڑا تھا۔ ایک بھوری آنکھوں والا ننھا سا لڑکا اس پائپ میں داخل ہوتا اور دوسری طرف سے نکل جاتا، تو فرطِ مسرت سے اس کی آنکھیں تابناک ہو…

Read more

کامریڈ شیخ چلی – بابا کے مزار پر

عظیم راہ نما :۔ ملک کو آزاد کرنے والے بابا تم پر لاکھوں سلام! آج کے دن میں اپنے گناہوں کا کفارہ ادا کرنے آیا ہوں، سنا ہے ایسا کرنے سے روح پاکیزگی سے روشناس ہوتی ہے۔ آپ نے مجھے اپنا جانشین مقرر کیا تھا۔ ”مجھے یاد ہے جب آپ نے میری آپ نے میری جانشینی کا اعلان کیا تو ایک ستم ظریف نے ایک کا رٹون میں مجھے دائیں ہاتھ میں گائے کی رسی اور بائیں میں اونٹ کی نکیل تھامے ہوئے دکھایا تھا۔ میں نے ملک کو آپ کے بتائے ہوئے راستے پر چلانے کی بھر پور کوشش کی۔

Read more

روٹی تو کس طور ۔ ۔ ۔

” منحصر مرنے پہ ہو جس کی امید! “ میں وہ بدقسمت انسان ہوں جس کی امید مرنے پر منحصر ہے، اپنے مرنے پر نہیں، دوسروں کے مرنے پر۔ ہر رات سونے سے پہلے دعا مانگتا ہوں۔ یا رب العالمین! فلاں شاعر، محب وطن اب تو کافی بوڑھا ہو گیا، پچھلے دس برس سے قبر میں پاؤں لٹکا ئے بیٹھا ہے، اب تو اسے اٹھا لے، اب تو بیچارے کے نہ ہاتھوں میں جنبش ہے نہ آنکھوں میں دم! اسے جنت میں جگہ دے یا جہنم میں، کم از کم مجھے اس کے نام پر چند ے کا ایک نیا فنڈ کھولنے کا موقع دے میں اس کا بت نصب کروں گا، اس کی یاد میں عظیم الشان لائبریری قائم کرنے کے لیے اپیل کروں گا، اس کی پسماندگان کی امداد کے لیے قوم سے خیرات مانگوں گا، پانچ ہزار۔ دس ہزار۔ پندار ہزار۔ اخر کچھ تو قوم کی جیب سے نکلے گا ہی، اے ذوالجلال۔

کل کے اخبار میں پہلی سر خی جو پڑھوں وہ کسی بڑے لیڈر کی موت سے متعلق ہو۔ خدا وندا! میری مالی مشکلات تجھ سے پوشید ہ نہیں، لڑکے کو ولایت بھیجنا ہے، لڑکی کی شادی نزدیک آ رہی ہے، کم از کم پندار ہزار روپیہ چاہیے۔ اگر اس مہینے تین لیڈروں کو قید حیات سے نجات دلانا تیرے لیے چنداں مشکل نہیں۔ اگر یہ کسی طرح ناممکن ہے تو پھر کوئی قحط، سیلاب یا بھونچال ہی بھیج، بنگال کا قحط تو پرانا ہو چکا۔ اب تو کسی نئی آفت کی ضرورت ہے۔ کوئی وبا، کوئی طوفان، پلیگ، ہیضہ، نڈی دل، کوئی مصیبت جس کے نام پر سنگدل سے سنگدل انسان چندہ دینے پر مجبور ہو جائے۔

Read more

وزیر ٹیکس – کنہیا لال کپور

اس سال میں نے نئے وزیر مقرر کیے۔ دس نئے سفیر غیر ممالک میں بھیجے، پانچ سو نئے سیکرٹری تعینات کیے۔ ساڑھے سات سو ڈپٹی سیکرٹری پندرہ سو اسسٹنٹ ڈپٹی سیکرٹری اور اگر سب اسسٹنٹ ڈپٹی سیکرٹریوں کی تعداد پوچھو تو شاید بتا بھی نہ سکوں۔

آپ چونکہ ذہین آدمی ہیں، اس یے ذرا اپنے دماغ سے کام لیجیے اور مجھے بتائیے کہ ننانوے کروڑ روپے کے خسارے کو پورا کرنے کے لیے کون کون سے نئے ٹیکس لگائے جائیں؟

نئے ٹیکس! گستاخی معاف! میں نے ذرابھنا کر کہا۔ پہلے ہی آپ نے ٹیکس لگالگا کر عوام کی کمر کبڑی کر دی ہے، خدا را نئے ٹیکس لگانے کے اراد ے سے باز آئیے۔
عوام پر ٹیکس ؟ کیسی باتیں کرتے ہیں آپ۔ میں نے تو عوام پر کوئی ٹیکس نہیں لگایا۔ یہ صحیح ہے میں نے تمباکو پر ٹیکس لگایا، پان پر لگایا لیکن عوام تمباکو ہیں نہ پان۔

جو شخص بکری پالے، اس پر ٹیکس لگایا جائے۔ آپ جانتے ہیں کہ آج کل گائے یا بھینس پالنے کی بہت کم لوگوں کو توفیق ہے۔
ٹھیک ہے، ٹھیک ہے، لیکن میرے خیال میں اس ٹیکس کا دائرہ ذراوسیع ہونا چاہیے۔ کتنے ہی لوگ مرغیاں، بٹیریں، بطخیں، طوطے، کتے، بلیاں اور چوہے بھی تو پالتے ہیں۔

Read more