برطانوی کرنسی پر نمایاں سیاہ فام، اشیائی اور اقلیتی گروہوں سے تعلق رکھنے والے افراد کی شمولیت کا عندیہ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

سیاہ فام، ایشیائی اور اقلیتی گروہوں سے تعلق رکھنے والی شخصیات پہلی بار برطانوی کرنسی نوٹوں اور سکوں پر نمایاں ہوں گی۔ برطانوی اخبار سنڈے ٹیلی گراف کے مطابق چانسلر رشی سونک اس سلسلے میں قانونی ٹینڈر کے لیے ایک مہم چلانے والے گروپ کی تجاویز پر غور کر رہے ہیں۔

رشی سونک نے رائل منٹ سے کہا ہے کہ ان شخصیات کو اس اعزاز سے نوازنے کے لیے نئے ڈیزائن پیش کریں۔ اس سلسلے میں جن شخصیات کے ناموں پر غور کیا جا رہا ہے، ان میں ملٹری نرس میری سیول اور دوسری عالمی جنگ کی جاسوس نور عنایت خان شامل ہیں۔

 

زیرہ زیدی

BBC
زہرہ زیدی

بینک نوٹ آف کلر کمپین کی سربراہی سابقہ کنزرویٹو پارلیمانی امیدوار زہرہ زیدی کر رہی ہیں۔ وہ کہتی ہیں کہ برطانوی کرنسی پر آج تک سفید فام افراد کے علاوہ کسی اور رنگ و نسل کے فرد کو شامل نہیں کیا گیا ہے۔

انھوں نے بی بی سی نیوز کو بتایا ’ہمارے قانونی ٹینڈر، ہمارے نوٹ اور ہمارے سکوں پر کون ہے، یہی چیزیں بحثیت ایک قوم ہماری شناخت کرتی ہیں۔‘

’ہر طرح کا پس منظر رکھنے والے لوگوں نے برطانیہ کی تعمیر میں مدد کی۔ اقلیتی گروہوں سے تعلق رکھنے والے افراد وہ ہیں جنھوں نے قوم کی خدمت کی ہے ۔ جیسے فوجی شخصیات اور نرسیں ۔ ایسی شخصیات کے ناموں کو مجوزہ سکوں کے سیٹ کے لیے آگے بھیج دیا گیا ہے۔‘

دو سال قبل زہرہ زیدی نے برطانوی خفیہ ایجنٹ نور عنایت خان کی شکل سکّوں پر لانے کے لیے مہم شروع کی تھی، لیکن کسی کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگی۔

نور عنایت خان کون تھیں؟

نور

Getty Images

نور النسا یا نور عنایت خان برطانیہ کی ایک خفیہ ایجنٹ تھیں جنھوں نے عالمی جنگ میں اہم کارنامے سرانجام دیے۔ نور عنایت خان سنہ 1914 میں ماسکو میں یکم جنوری کو پیدا ہوئیں۔ ان کے والد ہندوستانی تھے جبکہ ان کی والدہ کا تعلق امریکہ سے تھا۔

نور عنایت کا تعلق ہندوستان کے ایک شاہی خاندان سے بھی تھا۔ وہ 18 ویں صدی کے میسور کے مسلمان حکمران ٹیپو سلطان کی براہ راست اولاد تھیں۔

نور کے والد ایک موسیقار اور صوفی استاد تھے۔ وہ اپنے کنبے کو لے کر پہلے لندن اور پھر پیرس منتقل ہوئے نور نے تعلیم حاصل کی اور بعد میں وہ بچوں کی کہانیاں لکھنے کا کام بھی کرتیں تھیں۔

میڈل

BBC

فرانس کے زوال کے بعد نور انگلینڈ فرار ہو گئیں اور نومبر 1940 میں وہ ویمنز معاون ایئر فورس میں شامل ہوگئیں۔ 1942 کے آخر میں وہ ریڈیو آپریٹر کے طور پر ایس او ای میں شامل ہونے کے لیے بھرتی کی گئیں۔

زہرہ بتاتی ہیں کہ ’وہ پہلی خاتون ریڈیو آپریٹر تھیں جو دشمن کے زیر قبضہ فرانس میں بھیجی گئیں۔‘ نور عنایت خان تاریخ کی ان چار خواتین میں شامل ہیں جنھیں جارج کراس سے نوازا گیا تھا۔

میری سیول

میری

Getty Images
میری سیول

جمیکا میں پیدا ہونے والی نرس میری سیول کے نام پر بھی غور کیا جا رہا ہے۔ سیول کیریبیئن میں پیدا ہوئیں۔ ان کے والد سکاٹ لینڈ سے تعلق رکھتے تھے جبکہ ان کی والدہ جمیکن تھیں۔

کرائی میئن جنگ کے آغاز پر، فلورنس نائٹنگیل کی نرسوں کی ٹیم میں شامل ہونے کی امید پر انھوں نے انگلینڈ کا سفر کیا۔

لیکن جب انھیں نرسوں کی ٹیم میں شامل نہیں کیا گیا تو سیول نے خود کریمیا کا سفر کیا اور وہاں ایک ’برٹش ہوٹل‘ قائم کیا جہاں فوجی آرام کرنے کے علاوہ اچھے کھانوں سے لطف اندوز ہوسکتے تھے۔

مئی کے مہینے میں ایک کمیونٹی ہسپتال کا نام سیول کے نام پر رکھا گیا تھا۔

ماضی میں یادگار سکوں پر برطانوی فوج کے پہلے سیاہ فام افسر، والٹر ٹول جیسی شخصیات کی نمائش کی گئی ہے۔

زیرہ کہتی ہیں ’لیکن یادگاری سکے قانونی ٹینڈر کی طرح نہیں ہیں کیونکہ قانونی ٹینڈر پاسپورٹ، سرکاری نمائندہ یا سفیر کے طور پر کام کرتا ہے۔‘

’ہمیں ایسی غیر معمولی شخصیات کی داستانیں سنانی چاہییں کیونکہ یہ ہم آہنگی اور بحثیت قوم ہماری شناخت کے لیے بہت اہمیت رکھتا ہے۔‘

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 16550 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp