ٹرمپ نے قریبی ساتھیوں سمیت مزید 26 افراد کو صدارتی معافی دے دی

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنی انتخابی مہم کے سابق منیجر پال مینافورٹ اور سابق مشیر راجر اسٹون کو بھی صدارتی معافی دے دی ہے۔

یہ وہ افراد تھے جنہیں 2016 کے امریکی انتخابات میں روسی مداخلت کی تحقیقات کے دوران سزائیں سنائی گئی تھیں اور مینافورٹ صدر کے ایسے پہلے قریبی ساتھی تھے جن پر سب سے پہلے اس معاملے پر فردِ جرم عائد کی گئی تھی۔

صدر ٹرمپ نے رئیل اسٹیٹ ڈویلپر چارلس کشنر کو بھی صدارتی معافی دے دی ہے۔ چارلس کشنر صدر کے داماد جیراڈ کشنر کے والد ہیں۔

صدر ٹرمپ کی جانب سے مسلسل دوسرے روز صدارتی معافیاں دینے کا سلسلہ جاری رہا، صدر نے منگل کو بھی 15 افراد کو صدارتی معافی دی تھی۔

بدھ کو صدر نے مجموعی طور پر 26 افراد کو صدارتی معافی دی جب کہ دیگر تین افراد کی سزاؤں میں کمی کر دی۔

بیس جنوری کو اپنا دورِ صدارت ختم ہونے سے قبل اب صدر ٹرمپ نے چار ایسی اہم شخصیات کی سزائیں معاف کر دیں ہیں جنہیں 2016 کے صدارتی انتخابات میں مبینہ روسی مداخلت کی تحقیقات کی روشنی میں سزائیں سنائی گئی تھیں۔

یہ تحقیقات خصوصی تفتیش کار رابرٹ ملر نے مکمل کی تھیں۔

صدر ٹرمپ کا یہ مؤقف رہا ہے کہ اُن کے حامیوں کو غیر منصفانہ طور پر نشانہ بنایا گیا۔
صدر ٹرمپ کا یہ مؤقف رہا ہے کہ اُن کے حامیوں کو غیر منصفانہ طور پر نشانہ بنایا گیا۔

امریکی قانون صدر کو یہ اختیار دیتا ہے کہ وہ مواخذے کے علاوہ امریکہ کے خلاف جرائم کے مرتکب افراد کو معاف کر سکتے ہیں۔ لیکن صدر ٹرمپ کے مخالفین یہ الزام عائد کرتے رہے ہیں کہ صدر ٹرمپ اپنے قریبی ساتھیوں کو نوازنے کے لیے اس اختیار کا غلط استعمال کرتے ہیں۔

مینافورٹ اور اسٹون سے قبل صدر ٹرمپ نے قومی سلامتی کے سابق مشیر مائیکل فلن اور 2016 کی انتخابی مہم کے ایک مشیر جارج پاپا ڈوپلوس کی سزائیں بھی معاف کر دی تھیں۔

مین ہیٹن ڈسٹرکٹ اٹارنی آفس کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ وہ مینا فورٹ کے خلاف فراڈ اور دیگر مبینہ جرائم کی تحقیقات کے لیے دوبارہ اپیل دائر کرے گا جسے پہلے دو مرتبہ خارج کیا جا چکا ہے۔

اٹارنی آفس کے ترجمان ڈینی فراسٹ نے کہا کہ وہ مینافورٹ کی جانب سے نیو یارک کے شہریوں کے ساتھ کیے گئے فراڈ کے لیے اُنہیں انصاف کے کٹہرے میں لانے کی اپنی کوششیں جاری رکھیں گے۔

مینا فورٹ کے وکیل کی جانب سے جاری ایک بیان میں سزا معافی پر صدر ٹرمپ کا شکریہ ادا کیا گیا۔

صدر ٹرمپ نے اپنے داماد جیراڈ کشنر کے والد چارلس کشنر کی سزا بھی معاف کر دی ہے۔
صدر ٹرمپ نے اپنے داماد جیراڈ کشنر کے والد چارلس کشنر کی سزا بھی معاف کر دی ہے۔

مینا فورٹ کا کہنا تھا کہ “جنابِ صدر میرے پاس شکریے کے لیے الفاظ نہیں ہیں، آپ نے مجھ پر میرے خاندان پر بہت بڑا احسان کیا ہے۔”

واشنگٹن جیوری نے نومبر 2019 میں راجر اسٹون کو سات مختلف الزامات کے تحت سزا سنائی تھی جن میں کانگریس کی تحقیقات میں رکاوٹ ڈالنا، پانچ جھوٹے بیانات جمع کرانے اور شواہد میں ردوبدل شامل تھے۔

صدر ٹرمپ نے جولائی میں اسٹون کو دی گئی تین سال چار ماہ قید کی سزا اس وقت ختم کر دی تھی جب وہ جیل کی سلاخوں کے پیچھے جانے والے تھے۔ تاہم اُن کا جرم ختم نہیں ہوا تھا جو صدر کے اس حکم نامے کے بعد ختم ہو گیا ہے۔

ایک بیان میں راجر اسٹون نے بھی صدر کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ وہ صدر کی جانب سے اُن کا ناکردہ جرم مکمل طور پر ختم کرنے پر شکر گزار ہیں۔

صدر ٹرمپ کے داماد جیراڈ کشنر کے والد چارلس کشنر کو سال 2004 سے سال 2018 کے دوران دوران ٹیکس سے بچنے کی کوششوں، شواہد میں ردوبدل اور انتخابی کے لیے فنڈز کی غیر قانونی مہم چلانے کے الزامات کے تحت دو سال قید کی سزا سنائی گئی تھی۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

وائس آف امریکہ

”ہم سب“ اور ”وائس آف امریکہ“ کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے مطابق ”وائس آف امریکہ“ کی خبریں اور مضامین ”ہم سب“ پر شائع کیے جاتے ہیں۔

voa has 997 posts and counting.See all posts by voa