ڈارون، بیوی اور خدا


جب ایک خدا کو ماننے والا ایک خدا کو نہ ماننے والے کے عشق میں گرفتار ہو جائے تو ان کی محبت دو آتشہ ہو جاتی ہے۔ جب چارلز ڈارون کی ایما سے ملاقات ہوئی تو وہ ان کی زلف کے اسیر ہو گئے۔ پہلے ایما ان کی محبوبہ، پھر بیوی اور آخر میں ان کے دس بچوں کی ماں بنیں۔ ایما ایک راسخ العقیدہ عیسائی تھیں اور ڈارون ایک پکے دہریہ تھے۔ میں نے جب ڈارون کی خود نوشتہ سوانح عمری پڑھی تو مجھے اندازہ ہوا کہ ڈارون کے نظریہِ ارتقا نے نہ صرف ان کا خدا کے ساتھ بلکہ اپنی بیوی کے ساتھ بھی ایک تضاد پیدا کر دیا تھا۔

ڈارون ایک سائنسدان تھے۔ وہ بچپن سے ہی چٹانوں، پرندوں اور جانوروں میں خاص دلچسپی رکھتے تھے۔ جب وہ جوان ہوئے تو انہیں اپنے ایک دوست کے ساتھ بیگل جہاز میں سمندروں اور جزیروں کے سفر کا موقع ملا۔ اس سفر کے دوران انہوں نے بہت سے پودے، چٹانیں اور فوسلز جمع کیے جن کا وہ اگلے بیس سال تک تجزیہ کرتے رہے۔ اسی تجزیے کی بنیاد پر انہوں نے اپنی معرکۃ الآرا کتاب THE ORIGIN OF SPECIES لکھی جس میں انہوں نے نظریہِ ارتقا کا سائنسی ثبوت مہیا کیا۔ اس تحقیق سے انہوں نے ثابت کیا کہ زندگی سمند کی گہرائیوں میں پیدا ہوئی تھی پھر وہ زمین پر آئی اور چاروں طرف پھیل گئی۔

جب ڈارون نے سائنسی تحقیق سے یہ ثابت کیا کہ انسان لاکھوں برس کے ارتقا کا نتیجہ ہے تو ان کے دور کے پادری بہت ناراض ہوئے۔ ان کا کہنا تھا کہ بائبل نے ہمیں بتایا ہے کہ انسان کرہِ ارض پر صرف چند ہزار سال سے موجود ہے۔ عیسائی پادریوں نے سائنس سے لاعلمی اور ناواقفیت کی وجہ سے نظریہ ارتقا کو رد کر دیا۔ چونکہ ڈارون ایک صلح جو انسان تھے اس لیے وہ پادریوں سے نہ الجھے لیکن ان کے چند جذباتی دوستوں نے پادریوں سے اس موضوع پر بہت سے مباحثے اور مناظرے کیے۔

ڈارون منطقی سوچ رکھتے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم خدا کو منطق سے ثابت نہیں کر سکتے۔ ڈارون کا موقف تھا کہ خدا موجود نہیں ہے۔ ڈارون کی بیوی کو ان کا یہ موقف بالکل پسند نہ تھا کیونکہ وہ خدا کو مانتی اور پوجتی تھیں۔ وہ ایک عیسائی عورت تھیں اور خدا کے ساتھ ساتھ جنت اور دوزخ پر بھی ایمان رکھتی تھیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ڈارون دماغ سے سوچتے ہیں دل سے محسوس نہیں کرتے۔ ڈارون کی بیوی کو یہ فکر دامن گیر رہتی تھی کہ کہیں مرنے کے بعد اپنے اعتقادات کی وجہ سے ڈارون جہنم میں نہ چلے جائیں۔ ڈارون کو حیات بعد الموت کی کوئی فکر نہ تھی کیونکہ وہ اس پر ایمان نہ رکھتے تھے۔

ڈارون نے اپنی موت سے کچھ عرصہ پہلے اپنی سوانح عمری لکھی جس میں انہوں نے اپنی دہریت کا اعلان اور اعتراف کیا۔ اتفاق سے کتاب چھپنے سے پہلے ہی ڈارون فوت ہو گئے۔ ڈارون کی بیوی نے جب سوانح عمری پڑھی تو انہوں نے کتاب سے وہ اقتباسات نکال دیے جن میں ڈارون نے اپنے دہریہ ہونے کا ذکر کیا تھا۔

ڈارون کے بچے ایک دوراہے پر کھڑے تھے۔ ان کا باپ پکا دہریہ تھا اور ماں سخت مذہبی۔ وہ دونوں سے محبت کرتے تھے۔ وہ اپنی ماں کا دل نہ دکھانا چاہتے تھے اس لیے وہ عیسائی بن گئے۔ انہوں نے اپنی والدہ کی خواہشات کا احترام کرتے ہوئے ڈارون کی سوانح عمری سے دہریہ اقتباسات نکالنے میں اپنی والدہ کا ساتھ دیا۔ اس طرح ڈارون کی بیوی اور بچوں نے ان کا سچ چھپا دیا۔

ڈارون کے بچوں نے تو ان کی دہریت پر پردہ ڈال دیا لیکن ان کی پوتی نورا بارلو نے خاندان کا راز فاش کر دیا۔ انہوں نے ڈارون کی سوانح عمری کو دوبارہ انیس سو اٹھاون میں چھاپا اور وہ تمام اقتباسات کتاب میں واپس ڈال دیے جو ان کی دادی نے نکالے تھے۔

THE AUTOBIOGRAPHY OF CHARLES DARWIN
1809—1882 BY NORA BARLOW WW NORTON AND COMPANY NEW YORK USA 1958

ڈارون نے اپنی سوانح میں لکھا ہے کہ انہیں جوانی میں ہی اندازہ ہو گیا تھا کہ بائبل دیومالائی کہانیوں کا مجموعہ اور لوک ورثہ کا حصہ ہے وہ خدا کی کتاب نہیں ہے۔ ڈارون نے اعتراف کیا کہ انہیں اپنے الحاد پر کبھی افسوس یا پچھتاوا نہیں ہوا۔ انہیں اپنے الحاد میں ذہنی سکون ملتا تھا۔

ڈارون کا مذہب پر سب سے بڑا اعتراض جہنم کے تصور پر تھا۔ ان کی نگاہ میں یہ کہنا کہ کہ جو لوگ خدا اور مذہب کو نہیں مانتے وہ جہنم میں جلیں گے بہت ہی ظالمانہ تصور تھا۔ ڈارون کی بیوی ان سے کہتی تھیں کہ جو لوگ اپنے گناہوں کی معافی مانگتے ہیں انہیں خدا معاف بھی کر دیتا ہے۔

ڈارون کی زندگی کا ایک دلچسپ پہلو یہ تھا کہ ان کی جوانی میں ان کے والد کی خواہش تھی کہ وہ بائبل کا مطالعہ کریں اور ایک پادری بنیں۔ انہیں کیا خبر تھی کہ ڈارون جوں جوں بائبل پڑھیں گے وہ خدا کے قریب آنے کی بجائے اس سے دور ہوتے جائیں گے۔ ڈارون نے خدا کو تو خدا حافظ کہہ دیا لیکن اپنی بیوی کو خدا حافظ نہ کہہ سکے کیونکہ وہ ان سے محبت کرتے تھے۔ ڈارون کی بیوی نے ساری عمر بہت کوشش کی کہ ڈارون خدا پر ایمان لے آئیں لیکن انہیں کامیابی حاصل نہ ہوئی۔ ڈارون کی بیوی کا مذہبی موقف تھا کہ انسان آسمانوں سے اترا ہے اور ڈارون کا سائنسی موقف تھا کہ انسان سمندر کی گہرائیوں سے ابھرا ہے۔

ڈارون کو اس بات کا ساری عمر دکھ رہا کہ ان کی بیوی ان کے اعتقادات اور نظریات کی وجہ سے دکھی رہتی ہیں۔ انہوں نے ایک خط میں انہیں لکھا کہ میرے مرنے کے بعد یہ نہ بھولنا کہ میں تمہاری محبت کی وجہ سے دکھی رہتا ہوں۔ ڈارون کی اپنی بیوی سے محبت آنسوؤں اور بوسوں کا حسیں لیکن تکلیف دہ امتزاج تھی۔ ڈارون کی شادی کی کہانی ایسی محبت کی کہانی ہے جس میں برسوں کی رفاقت کے باوجود دماغ اور دل کبھی یکجا نہیں ہو پاتے۔ ڈارون اور ان کی بیوی دریا کے دو کناروں کی طرح زندگی گزارتے رہے۔ وہ رومانوی طور پر ایک دوسرے کے بہت قریب لیکن نظریاتی طور پر ایک دوسرے سے بہت دور تھے۔ ان کا ساتھ دھوپ چھاؤں کا ساتھ تھا۔

ڈاکٹر خالد سہیل

Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

ڈاکٹر خالد سہیل

ڈاکٹر خالد سہیل ایک ماہر نفسیات ہیں۔ وہ کینیڈا میں مقیم ہیں۔ ان کے مضمون میں کسی مریض کا کیس بیان کرنے سے پہلے نام تبدیل کیا جاتا ہے، اور مریض سے تحریری اجازت لی جاتی ہے۔

dr-khalid-sohail has 711 posts and counting.See all posts by dr-khalid-sohail

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments