ہوش کے ناخن کہاں سے لیں؟

یہ 6 اگست 1945 کا دن تھا ”لٹل بوائے“ نام کا ایک ایٹمی بم ہیروشیما نام کے ایک شہر پے گرتا ہے اور چند ہی لمحوں میں ایک لاکھ پچاس ہزار کے قریب انسانی زندگیوں کو لقمہ اجل بنا دیتا ہے، اس درد ناک دن کو گزرے ابھی تین ہی دن ہوئے ہوتے ہیں کہ 9 اگست 1945 کو ناگا ساکی نام کے شہر کو ”فیٹ مین“ کے نام کا ایک بم تباہ و برباد کر دیتا ہے۔ یوں تین ہی دنوں میں اڑھائی لاکھ جانیں دوسری عالمی جنگ میں ایٹم بم کی نظر ہو جاتی ہیں اور تاریخ گواہ ہے اتنی جانوں کے ضیائع کے بعد پھر یہی عالمی طاقتیں بات چیت سے اپنے مسائل حل کر لیتی ہیں۔

برصغیر پاک و ہند کی تاریخ بہت پرانی ہے اس دھرتی پہ جنگ و جدل ہمیشہ سے رہا ہے آج کل یہ دھرتی ایک مرتبہ پھر جنگ کا سماں پیش کر رہی ہے۔ اس دھرتی پے رہنے والے دو انتہائی اہم ملک پاکستان اور بھارت ہیں جن کے درمیان تقسیم کے بعد سے لے کر آج تک کشمیر سب سے بڑا تنازعہ رہا ہے اس کی وجہ سے یہ دونوں ممالک 1947 سے لے کر آج تک تین بڑی جنگیں لڑ چکے ہیں۔ لیکن مسئلہ کشمیر جوں کا توں ہے۔ حالیہ تنازعہ کی وجہ بھی کشمیر ہی ہے اور خدشہ ہے کہ اس مسئلہ کشمیر کی وجہ سے پھر کوئی بڑی جنگ نا چھڑ جائے۔

Read more

اگر پاکستان نے بھارت پے قبضہ کر لیا تو؟

پلوامہ حملے کے بعد پاک بھارت ماحول بہت گرم ہے، دونوں طرف تندوتیز جملوں کا تبادلہ خوب ہو رہا ہے۔ نیوز چینلز کے تو جیسے وارے ہی نہارے ہو گئے ہیں۔ اس وقت ریٹنگز میں نیوز چینلز ڈراموں اور فلموں والے چینلز سے بھی آگے جارہے ہیں۔

انڈین میڈیا دیکھیں تو ایسے محسوس ہوتا ہے آپ میدان جنگ میں ہیں اور اگلے ہی لمحے پاکستان کا تقریباً ہر حصہ بھارت کے قبضے میں آنے والا ہے۔

پاکستان میں اس کے برعکس ماحول ہے، اقبال کے بعض شاہین تو آج کل پاکستان سپر لیگ دیکھنے میں مشغول ہیں ان کو ڈرانے میں بھارتی میڈیا مکمل طور پے ناکام نظر آ رہا ہے۔ اور باقی شاہین بھارت کی ٹماٹروں والی دھمکی سن کے ابھی تک سکتے میں ہیں۔ بقول ان کے

”ایسا نشہ ہم نے بھی کرنا ہے“

Read more

انسانیت پہ ظلم آخر کب تک

یہ 2003 کی بات ہے بھارت کے ضلع امرتسر کی تحصیل تارن تارن کے ایک چھوٹے سے گاؤں گاندھیوند کا ایک 19 سالہ نوجوان ملک کی سب سے بڑی پولیس فورس میں بھرتی ہوتا ہے۔ خاندان کی خوشی دیدنی ہوتی ہے کیونکہ گھر کا سارا بوجھ یہ نوجوان سنبھالنے جا رہا ہوتا ہے۔ ملازمت پکی ہونے کے بعد نوجوان کی شادی کر دی جاتی ہے۔ شادی کو سات سال بیت جاتے ہیں نوجوان کے گھر میں اولاد نہیں ہوتی ان سات سالوں میں بڑی منتیں مرادیں کی جاتی ہیں۔ سات سال بعد قدرت مہربان ہوتی ہے اور نوجوان کو چاند سا بیٹا عطا کرتی ہے اس دوران وہ نوجوان ملازمت میں ترقی پا کے کانسٹیبل سے ہیڈ کانسٹیبل بن چکا ہوتا ہے اوپر سے بیٹے کی سات سال بعد پیدائیش سونے پے سہاگا ہوجاتا ہے اس خوشی کے موقع پے سرکار اس نوجوان کو پورے ایک مہینے کی چھٹی عنایت کرتی ہے۔

نوجوان بڑا خوش ہوتا ہے، ہوتا بھی کیوں ناں؟ گاؤں جا رہا ہوتا ہے وہ بھی اتنے عرصے بعد اور پھر پورے ایک مہینے کے لیے، اس مہینے یعنی جنوری کی 13 تاریخ کو تو ”لوہری“ کا میلہ بھی ہوتا ہے۔ (لوہری ہندوستانی پنجاب میں ایک عرس ہوتا ہے جسے ہر سال 13 جنوری کو منایا جاتا ہے جس میں سکھ، ہندو اور مسلمان سبھی شرکت کرتے ہیں ) ۔

Read more

اک مسلم کی مسیحی شادی میں شمولیت

بروز اتوار ہم لوگ کارڈ میں درج پتے پر پہنچ گئے، یہ شہر کا ایک قدیم چرچ تھا جسے بہت ہی خوبصورتی کے ساتھ سجایا گیا تھا برقی قمقمے رات کی تاریکی کو دھوکہ دے کے دن کا ساماں باندھے ہوئے تھے، ہر طرف پاکستان کے قومی پھول چنبیلی سے پروئی لڑیاں منظر اور ہی دلکش بنا رہی تھیں۔ مہمانوں کی آمد جاری تھی میرے دوست کو جیسے ہی میری آمد کی خبر ہوئی ایک شاندار استقبال کے لیے حاضر ہو گیا میں اور میری بیگم وہاں اس خوش فہمی کا شکار ہوتے رہے کہ ہم صرف مہمان نہیں بلکہ مہمان خصوصی بھی ہیں۔

چرچ کے اندرونی مناظر بالکل ویسے ہی تھے جیسے ہم لوگ ہالی وڈ اور بالی وڈ کی فلموں میں دیکھتے چلے آئے ہیں۔ تھوڑی ہی دیر میں نکاح کی رسم ادا ہونا شروع ہوئی۔ سب سے پہلے پادری صاحب سٹیج پہ آئے سب مہمانوں کا شکریہ ادا کیا اور آغاز سے ہی سب عالم کے لیے دعائیں مانگنا شروع ہو گئے۔ میں اور میری بیگم ایک دوسرے کا منہ تکتے رہے کہ یہ کیسا پادری ہے اور یہ کیسی دعا ہے جس میں سب عالم کے لیے دعا خیر مانگی جا رہی ہے کسی فرقے کو کافر نہیں کہا جا رہا کسی مذہب کو گالی نہیں دی جا رہی، کسی گرو کو نیست و نابود کرنے کی باتیں نہیں ہو رہیں، نا ہی مسلمانوں اور یہودیوں کو برباد کرنے کا پکارا جا رہا ہے، نا ہی امریکہ اور اسرئیل کے مقابلے میں ایران اور سعودی عرب کو فساد کی جڑ قرار دیا جا رہا ہے، پاکستان اور پاکستان میں بسنے والے لوگوں کی سلامتی اور بقا کے لیے دعائیں مانگی جا رہی تھیں۔

Read more

ہمیں بیٹے کیوں چاہیے؟

اولاد بے شک بہت بڑی نعمت ہے لیکن جہاں یہ نعمت ہے وہی ساتھ میں یہ فتنہ بھی ہے۔ قرآن پاک میں مال کے ساتھ اولاد کو فتنہ قرار دیا گیا ہے۔ مال کا فتنہ ہونا سمجھ میں جلدی آ جاتا ہے لیکن یہ اولاد کیسے فتنہ ہوتی ہے؟ اسے سمجھنے میں تھوڑا وقت لگتا…

Read more

ایک شعلہ بیان مولوی، بریانی، کشمیری چائے اور قلندرِ لاہوری

آج عشاء کی نماز مسجد میں پڑھی تو نماز کے اختتام پر امام مسجد نے اعلان کیا کہ حضرت علامہ، فخرِ اوکاڑہ، خطیبِ اہل سنت صاحب مسجد میں تشریف فرما ہیں آپ سب سے التماس ہے کہ ان کا بیان سن کر جائیں۔ پہلے تو دل کیا پتلی گلی سے نکل لیا جائے لیکن امام…

Read more