پاکستانی ڈاکٹر عافیہ صدیقی، اپنے حقِ آزادی کی منتظر

امریکہ کی قید میں پاکستانی ڈاکٹر عافیہ صدیقی، معاشرے کے اندھیروں کو دور کرنے والا ایسا چراغ ہے جس کو بجھانے میں عالمی مُنصِفوں نے کوئی کسر نہ چھوڑی۔ ”عافیہ صدیقی اپنی ذات میں ادارے کی حیثیت رکھتی ہے۔ وہ جہاں جائے گی تبدیلی لائے گی۔ “ پروفیسر نوم چومسکی کا یہ قول عافیہ صدیقی…

Read more

پاکستانی ڈاکٹر عافیہ صدیقی، اپنے حقِ آزادی کی منتظر

امریکہ کی قید میں پاکستانی ڈاکٹر عافیہ صدیقی، معاشرے کے اندھیروں کو دور کرنے والا ایسا چراغ ہے جس کو بجھانے میں عالمی مُنصِفوں نے کوئی کسر نہ چھوڑی۔ ”عافیہ صدیقی اپنی ذات میں ادارے کی حیثیت رکھتی ہے۔ وہ جہاں جائے گی تبدیلی لائے گی۔ “ پروفیسر نوم چومسکی کا یہ قول عافیہ صدیقی کی قابلیتوں اور کارناموں سے بھرپور مختصر زندگی کو واضح کرنے کے لیے کافی ہے۔

ڈاکٹر عافیہ صدیقی بیک وقت اعلیٰ تعلیم یافتہ اور بہترین تحریری و تقریری صلاحیتوں کی مالک تھی۔ قرآن اور دینی علوم سے دلچسپی اور ان پر عبور اس کی اضافی قابلیت تھی۔ گلستان شاہ لطیف اسکول سے لے کر ایم آئی ٹی (MIT) برینڈیز (Brandeis) جیسی امریکہ کی بہترین جامعات سے پی ایچ ڈی کی ڈگری کے حصول تک ان کا تعلیمی ریکارڈ نہایت شاندار رہا ہے۔ اعلیٰ تعلیم کے لیے ان کا مضمون ”ایجوکیشن“ تھا۔ دین کے علم کی پیاس بجھانے وہ خاص طور پر امریکہ سے پاکستان آئی۔ شوق کے ساتھ قرآن حفظ کیا۔ قابل شخصیات کی معاونت کے ساتھ ”اسلام، عیسائیت اور یہودیت“ کے موضوع ہر تحقیق کی۔ انہوں نے ”پاکستان میں اسلامی نظام کے نفاذ اور خواتین پر اس کے اثرات“ کے موضوع پر بھی تحقیق کی اور کیرول وِلسن ایوارڈ حاصل کیا۔

Read more

سادہ شادی عام کرو

”جہیز خوری بند کرو“ کے سلوگن کے ساتھ جہیز مخالف مہم سوشل میڈیا پر جاری ہے۔ سیلبریٹیز اس سلوگن کے ٹھپے لگے ہاتھوں کے ساتھ اپنی تصویروں کے ذریعے اپنا احتجاج ظاہر کر رہے ہیں۔ اقوام متحدہ کے ادارہ برائے تحفظِ نسواں کے پاکستان چیپٹر نے اس مہم اور سلوگن کو متعارف کروایا ہے۔ حیرت…

Read more

خواتین، مسجد میں

”مسجد اللّٰہ کا گھر ہےـ یہاں ادب سے رہتے ہیں ـ شور نہیں کرتے۔“ ماوں کی زبانی مسجد کے احترام کے اس قسم کے جملے اور ان پر عمل کی لگن کا یہ منظر ہمارے لیے ہمیشہ دل چسپی کا باعث رہا۔ چند سالوں سے مسجد میں عشا اور نمازِ ترایح کی سعادت حاصل ہو…

Read more