اسلامی ریاست زیرِ تشکیل ہے

جنرل ضیاء الحق کے دور میں جنّات کی طاقت سے بجلی پیدا کر لی گئی تھی اور پھر حضرت عمران خان کے دور میں بجلی چوری کو فتوے کے ذریعے روک بھی لیا گیا تھا۔ جنرل ضیاء الحق کو سائنسدانوں نے یقین دہانی کرائی تھی کہ سر مسئلہ ہی کوئی نہیں، آپ جیسا سوچ رہے…

Read more

اکیسویں صدی کے صحافتی اصول

بھلے وقتوں کی بات ہے جب صحافت مشن ہوا کرتی تھی۔ کئی کئی لوگ خبر ڈھونڈنے کے پیچھے ہوتے تھے۔ خبر ملنے کے بعد پھر کئی کئی لوگ اس کی نوک پلک سنوارنے اور اسے خبریت کے سنگھاسن پر بٹھانے کے قابل بناتے تھے۔

خبروں کا ایسا معیار قائم تھا کہ اس نے سننے دیکھنے والوں کی بھی تربیت کر رکھی تھی۔ کوئی خبر تھوڑی سی بھی ڈھیلی ڈھالی ہوتی تو سننے والوں کو فوراً پتہ چل جاتا کہ ادارے سے یہ خبر اچھی طرح نہیں بنائی گئی یا یہ کہ یہ خبر خبر بنتی ہی نہیں ہے، اسے بس خالی جگہ بھرنے کے لیے ڈال لیا گیا ہے۔ پھر کمرشلزم کا دور آیا، ایشوز اور نان ایشوز جیسی ٹرمز ایجاد ہوئیں، صحافت مشن سے ہٹ کر کاروبار بنا، صحافی ہونا کیرئیر بن گیا، جس نے اس کاروبار میں پیسے لگائے وہ خود ہی ایڈیٹر بن گیا۔ اب کیا خبر ہے اور کیا نان خبر، ہر دو کے درمیان کھینچی گئی لکیر تحلیل ہونے لگی۔ خبر تجزیہ بھی بن گئی، تاثر بھی، جائزہ بھی اور ردعمل بھی۔

Read more

نیّر مسعود کا اندازِ تحریر

محقّق، مترجم اور افسانہ نگار نیّر مسعود 12 نومبر 1936ء کو لکھنؤ میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد پروفیسر مسعود حسین رضوی ادیب، کئی کتب کے مصنّف اور لکھنؤ یونیورسٹی میں فارسی کے صدرِ شعبہ رہے۔ ابتدائی تعلیم لکھنؤ میں حاصل کرنے کے بعد نیّر مسعود 1957ء میں لکھنؤ یونیورسٹی کے شعبہ فارسی سے وابستہ…

Read more