پرانا پاکستان واپس لوٹا دو

دنیا میں کل ایک سو پچانوے ممالک ہیں، مگر صرف پاکستان کو مملکت خداداد کہلانے کا اعزاز حاصل ہے۔ مُطالعہ پاکستان کے مطابق کیوں کہ یہ ملک دو قومی نظریے کی بنیاد پر بنا تھا اس وجہ سے کہ ہندو اور مسلمان دو الگ قومیں ہیں جن کا ساتھ رہنا ناممکن تھا۔ پاکستان چودہ اگست…

Read more

ماحولیاتی تبدیلی اور پاکستان

ہماری زمین کا موسم پچھلے کچھ سالوں سے تبدیل ہو رہا ہے، تکنیکی الفاظ میں اسے ”ماحولیاتی تبدیلی“ کا نام دیا جاتا ہے۔ ماحولیاتی تبدیلی کا مطلب ہے، موسمی پیٹرن میں تبدیلی آنا، نہ صرف موسم کا انتہائی گرم ہونا بلکہ بہت ٹھنڈا ہونا، خشک سالی، سیلاب، اور طوفان باد و باراں بی اس میں شامل ہیں۔ ہماری فضا سانس لینے کے قابل نہیں رہی، 2 سال کے بچے سے لیں کر 65 سال کے بوڑھے تک، الرجی، دمہ اور متعدد سانس کی بیماریوں میں مبتلا ہیں۔ ہمارے پانی کے ذخائر میں نہ صرف سال با سال کمی آتی جا رہی ہے، بلکہ موجودہ ذخائر آلودہ ہونے کی وجہ سے پینے کے قابل نہیں رہے، شہروں میں سموگ کاروبار زندگی کو متاثر کر رہی ہے۔

Read more

کیا ہم ذہنی طور پر اپاہج قوم ہیں؟

15 جون کو ڈان اخبار میں ڈاکٹر پرویز ہودبھائی کا کا لم پڑھا، عنوان تھا ”بیڈ میتھ۔ بگ بلنڈر“۔ ہمیشہ کی طرح تلخ حقاحق پر مبنی تحریر تھی۔ اس کا لم میں پرویز ہودبھائی نے کسی بھی ناکام منصوبے کی وجہ حکومتی فیصلوں میں ما ہرین کو شامل نہ کرنا لکھا ہے، اور ساتھ ہی…

Read more

بجٹ تماشا

تحریک انصاف کا پہلا بجٹ پیش کرنے جا رہی تھی، اپوزیشن نے حسب عادت بجٹ آنے سے پہلے ہی، اِسے عوام دشمن اور آئی ایم ایف کی سخت شرائط پر پورا اترتا قرار دیا، اس کا موقف ہے کہ اگر عمران خان پہلے ہی آئی ایم ایف کے پاس چلا جاتا تو نرم شرائط پر قرض مل سکتا تھا اور حالات اتنے برے نہ ہوتے۔ خیر پچھلی ستر سالہ تاریخ اِس بات کا ثبوت ہے کہ ہر حکومت نے خسارے کا بجٹ ہی بنایا، لیکن تحریک انصاف کی حکومت نے پاکستانی عوام کو اپنے بلند و بالا دعووں اور پِھر یو ٹرن لینے پر کافی مایوس کیا ہے۔

Read more

ناقص ڈیٹا اور ناکام حکمت عملی

اردو زبان میں ڈیٹا کی تعریف ہے، اعداد و شمار کا مجموعہ۔ ہماری زیادہ تر مستقبل کی پالیسییاں ناکام کیوں ہوتی ہیں؟ کیوں کہ جس ڈیٹا کو بنیاد بنا کر یہ بنائی جاتیں ہیں، وہ نہ تو مکمل ہوتا ہے اور نہ ہی درست۔ ہمارا ہر شعبہ زوال کا شکاربی غلط پالیسیوں کی وجہ سے ہے ہے، ایک تو ہمارے پاس پہلے ہی فنڈز کی کمی ہے، اوپر سے جن پروجیکٹس پر دستیاب فنڈز خرچ کیے جا رہے ہیں، وہ مستقبل کی منصوبہ بندی کیے بنا کچھ ہی سالوں میں کسی کام کے نہیں رہنے ۔

Read more

ہمارے اساتذہ سوالات سے ڈرتے کیوں ہیں

کیا آپ جانتے ہیں، سوال پوچھنا کیوں ضروری ہے ۔ کیوں کے سوال وہی پوچھتا ہے جو سوچتا ہے، سائنسدانوں کے مطابق سوال پوچھنے والے بچے زہین ہوتے ہیں ۔کوئی بی کرپٹ بندہ سب سے زیادہ کس چیز سے ڈرتا ہے؟ جی ہاں سوال اٹھانے سے ۔ آپ لوگوں نے اکثر مشاہدہ کیا ہو گا، کہ کیسے آج کل کے ڈبا بینڈ علماء جب کوئی دلیل نہیں پا تے، تو سوال کرنے والے پر کفر و گستاخ کا فتویٰ لگا دیتے ہیں ۔ یہ شیوہ صرف بے علم علماء کا ہی نہیں بلکہ بہت سے نام نہاد اساتذہ کا بی ہے۔

Read more