سرکاری حج اور عمرے

ہمیں نہ تو یہ دعویٰ ہے کہ ہم مولوی یا عالم دین ہیں اورنہ ہی ہمیں سیاسی فتویٰ بازی پر دسترس ہے ’ہم تو ٹھہرے سیدھے سادھے قلم کے مزدور‘ لہٰذا آس پاس دیکھنے اورڈھونڈنے کے باوجود ہمیں تو کوئی ایسی سہانی پیشکش نظر نہیں آتی ’سہانی پیشکشیں بھی عجیب ہی ہوا کرتی ہیں اس…

Read more

میں شاعر ہو گیا ہوں 

ہم اپنی بات نہیں کرتے البتہ شعرا کے حوالے سے کہا جاتا ہے کہ یہ حضرات خبطی واقع ہوتے ہیں ’اس کی وجہ نہ تو ہمیں پہلے پتہ تھی اورنہ اب ہے۔ پرانے زمانے میں بیچارے شعرا خواہ مخواہ بدنام بھی توتھے ناں‘ ہم سب کی بات نہیں کرتے البتہ کہاجاتاہے کہ کتابی شعرأگلے فٹ…

Read more

مہاتما گاندھی کی جواہر لعل نہرو کو نصیحت

مہاتما گاندھی نے جواہر لعل نہرو کو نصیحت کی تھی کہ اگر تم فلاحی ریاست چاہتے ہو تو تین چیزیں کبھی مہنگی نہ ہونے دینا "سائیکل، آٹا اور سینما کا ٹکٹ" تینوں کی قیمتوں پر کنٹرول کرنا کیونکہ ان تینوں کا تعلق غریب آدمی ہے۔ غریب آدمی سائیکل پر سفر کرتاہے۔ کھانے کو دو وقت…

Read more

بھیڑوں کا لشکر اور چھوٹی سی دیاسلائی

نپولین نے کہا تھا کہ اگر سو بھیڑوں کی فوج کا سربراہ شیر کومقررکردیاجائے تووہ بھیڑیں شیروں کی طرح لڑیں گی اوراگر سو شیروں کا سربراہ بھیڑ کو مقررکردیاجائے تو وہ شیر بھیڑوں کی طرح جنگ کریں گے۔ ہوسکتاہے کہ نپولین کو خبر نہ ہوکہ وہ کسی ایک خاص ملک یا شہر یا ریاست کے…

Read more

اسلامی معاشی انڈکس: اسلامی ممالک ہی غیر اسلامی ہیں

امریکہ کی جارج واشنگٹن یونیورسٹی کے دو پروفیسروں ڈاکٹر شیرزادے رحمان اور حسین عسکری نے نہایت دلچسپ تحقیق کی ہے۔ انہوں نے ایک اسلامی انڈکس (Islamicity Index) ترتیب دیا ہے جس کے تحت ان ممالک کی فہرست مرتب کی گئی ہے جہاں معیشت، گورننس، انسانی و سیاسی حقوق اور امور خارجہ کے معاملات انسانی قوانین…

Read more

پروفیشنل حلالہ: ایک پھلتا پھولتا حلال کاروبار

”ذیشان کے ساتھ میری شادی شدہ زندگی اچھی بسر ہورہی تھی ’طویل رفاقت کے باوجود ہم دونوں کے درمیان ایک باریک سی لکیر تھی جب ہم اس لکیر کے پاس پہنچتے تو ہمارے لب خود بخود خاموش ہوجاتے اور ہم ایک دوسرے کو مطعون ٹھہرائے بغیر دیکھتے رہتے مگر زبان سے ایک لفظ تک ادا نہ ہوتا۔ وہ لکیر اولاد تھی۔ مجھے پتہ تھا کہ ذیشان اس حوالے سے خالی ہے مگر اس کے باوجود میں رشتے کو نباہ رہی تھی۔ یہ خاموش لکیر بڑھتے بڑھتے ایک خلیج بن گئی اور بالآخر یہ طوفان بھونچال لے آیا۔ ذہنی مریض بنتے ذیشان نے مجھے طلاق دے دی۔

میرے اندر بھی بھونچال آگیا کہ میری قربانیوں کا یہ صلہ ’کئی دنوں کے بعد ذیشان نے رابطہ کیا کہ وہ اپنے کیے پرشرمند ہ ہے۔ میرا خیال تھا کہ وہ بحیثیت مسلمان جانتا ہو گا کہ طلاق کے بعد دوبارہ رجوع کیسے کیا جا سکتا ہے‘ اسے سمجھانے کی کوشش کی کہ شرعی طور پر ایک دوسرے کے رفیق کیسے بن سکتے ہیں مگر وہ بضد رہا ’ایک دن اس نے آئیڈیا پیش کیا کہ اس کا ایک دوست ہے جو باقاعدہ نکاح کرکے مجھ سے شادی کرے گا اور پھر طلاق دے گا تو میں عدت پوری ہونے پردوبارہ رجوع کر لوں گا۔

پھر ایک دن ذیشان نے بتایا کہ میرادوست کم ازکم دو دن تک نکاح میں رکھناچاہتا ہے حالانکہ وہ ایک ہفتے سے کم پر راضی نہ تھا لیکن ذیشان کے زور دینے پر بمشکل دودن بعد طلاق پرراضی ہوا۔ میرا ذہن ماؤف تھا کہ اگر میں دوبارہ ذیشان کی زندگی میں شامل ہوناچاہتی ہوں تو مجھے یہ کام کرنا پڑے گا۔

Read more

ہم احساس کمتری کاشکارہوچکے ہیں

ہم پوری ایمانداری اورصدق دل سے اعتراف کررہے ہیں کہ ان دنوں میں ہم احساس کمتری کاشکارہوچکے ہیں۔ پہلا خیال یہ تھا کہ شاید یہ احساس صرف ہمارے اندر جاگزیں ہے مگر تھوڑے سے مشاہدہ نے ثابت کردیا کہ اس احساس کا شکارہروہ شخص ہے جو اپنے شعبہ کے ماہر مگر ”حقیقی تخلیق کار“ ہے مگر اسے چاپلوسی نہیں آتی یا پھر وہ اپنے شعبہ کے ”بڑوں“ کے آگے پیچھے پھرنے کو عبادت تصور نہیں کرتا یا پھر اپنے متعلقہ کسی بھی شعبہ کے لوگوں کی خوشامد نہیں کرتا۔

Read more

انصاف/ حقوق کی راہ میں حائل رکاوٹیں

پاکستان کا شمار ان ممالک میں ہوتا ہے، جہاں کے باسیوں کو انصاف یا حقوق کے حصول میں مشکلات کا سامنا رہتا ہے، یہ الگ معاملہ کہ یہ مشکلات اداروں کی بدولت ہوتی ہیں یا اس میں عوام کی قوانین یا حقوق کے حصول سے متعلق لاعلمی ہی ذمہ دار ٹھہرائی جا سکتی ہے۔ عام…

Read more