سندھی ادب کے افق کا قطب تارہ۔ منظر جو رہ گیا

یہ اس دور کی بات ہے جب ہم بچے ہوا کرتے تھے۔ غالبن ٹین ایج کے ایام تھے۔ ہمارے گھر میں ادبی کتب آتی بھی تھیں اور چھوٹے بڑے سب بڑے شوق و ادراک کے ساتھ انھیں پڑھتے بھی تھے۔ میں چونکہ سب بھائی بہنوں میں چھوٹی تھی تو آنکھیں پھاڑ کے ان کی باتیں سنتی ہی رہتی تھی اور کوشش کرتی تھی کہ وہ جو کتابیں پڑھتے ہیں وہ میں بھی پڑھوں اور پھر ان کے ساتھ اپنی ماھرانہ رائے کا اظھار بھی کروں۔ بس اسی لگن میں کافی کتابیں پڑھ ڈالیں۔

Read more

ایم آر ڈی تحریک اور سندھ کی سورما بیٹیاں: زندانوں کی خیر نہیں

1980 کی دہائی کا زمانہ تھا۔ مارشل لا کا کالا قانون اپنے آب و تاب سے ملک پر حکمرانی کر رہا تھا۔ بیچارے عوام سہمے اور خوفزدہ سے اپنے گھروں کے اندر محصور ہوکر رہ گئے تھے۔ سیاسی سرگرمیاں تو کجا سیاست پر بات کرنے پر بھی کوڑے لگنے کا ڈر رہتا۔ پاکستان کا مطلب…

Read more

مینگروو کا کیس عوامی عدالت میں

میں ایک مینگروو درخت ہوں۔ میں وہاں پایا جاتا ہوں جہاں دریا اور سمندر کا میلاپ ہوتا ہے۔ دنیا میں میری بہت سی اقسام پائی جاتی ہیں، پر یہاں ایرڈ زون میں پائے جانے والی اقسام میں میرا شمار سب سے بڑے مینگروو کے جنگلات میں ہوتا ہے۔ مجھے سندھو دریا سیراب کرتا ہے۔ یہاں…

Read more