سونے کے کھیت میں درانتی

گھٹا دیکھ کر عاشق اور کسان دونوں خوش ہوتے ہیں یا اداس! عاشق تو شہروں میں پائے جاتے ہیں‘ مگر کسان کے مسائل شہر والوں کو نہیں معلوم! گندم کٹ چکی ہے۔ کچھ کاٹی جا رہی ہے۔ ابھی ابھی فون پر گائوں بات ہوئی۔ بارش ہو رہی ہے اور موسلا دھار ہو رہی ہے۔ گندم…

Read more

پے کمیشن، چند گزارشات

”نجی شعبہ بہت سے لائق مرد اور عورتیں لے اڑا۔ اس سے حکومت نقصان میں رہے گی“ ۔ جدید سنگاپور کے معمار لی کوان یؤ نے پتے کی یہ بات جان لی تھی کہ حکومتی اہلکاروں کی معاوضے، نجی شعبے کے برابر نہیں ہوں گے تو ٹیلنٹ کا بہاؤ نجی شعبے کی طرف ہوگا۔ اس…

Read more

مولانا طارق جمیل: سنگ ہر شخص نے ہاتھوں میں اٹھا رکھا ہے

آج بھی مولانا طارق جمیل کی بالواسطہ مذمت میں ہمارے قابل احترام دوستوں کے دو کالم چھپے۔ مذمت نہ سہی، ان کے خلاف تو ضرور ہیں! کسی اور موضوع پر لکھنا تھا۔ ایک اور پے کمیشن تشکیل پایا ہے۔ کچھ معروضات اس کی خدمت میں پیش کرنا تھیں۔ دوست گرامی، سابق سفیر جناب جاوید حفیظ…

Read more

کیا خلیج میں بھارت کے چہرے سے نقاب اترنے کو ہے؟

آزاد پاکستان میں جب ہم ان جھگڑوں کو رونق بخش رہے ہیں کہ نماز مسجدوں میں پڑھیں یا گھروں میں، اور جب مولانا کی دعا پر طول و طویل بحث مباحث ہو رہے ہیں اور جب یہ طے کیا جا رہا ہے کہ قوم جھوٹی ہے یا دامن نچوڑ دے تو فرشتے وضو کریں۔ ۔…

Read more

مولانا طارق جمیل سے ایک عقیدت مند کی گزارش

مولانا طارق جمیل صاحب نے غیر مشروط معافی مانگ لی۔ شاید رفعِ شر کے لیے۔ شاید انکسار کے سبب! غلطی کو تسلیم کرنا بڑائی کی علامت ہے۔ اس سے شان میں کمی نہیں، اضافہ ہوتاہے! اس میں کیا شک ہے کہ میڈیا نے قربانیاں دی ہیں۔ اس ملک میں صحافیوں نے جان کی بازی لگائی…

Read more

وبا کے دنوں میں ٹرالی بیگ کی یاد

ٹرالی بیگ ڈھونڈ رہے تھے۔ ہم دونوں میاں بیوی ایک ایک بازار میں، ایک ایک دکان میں! چھوٹے سائز کا ٹرالی بیگ جو ایک تین سالہ بچے کے لیے موزوں ہو، مل نہیں رہا تھا! ٹرالی بیگ کا شوق موصوف کا، اُس وقت سے ظاہر تھا جب مشکل سے دو سال کے تھے۔ جب بھی…

Read more

علماء کرام اور مفتیانِ عظام کی خدمت میں ادب کے ساتھ

بات گھبرانے کی بھی ہے اور فخر کرنے کی بھی! یہ کیسا وقت آن پڑا کہ بے دینی اور اسلام دشمنی کی لہر، عالم اسلام تک آ پہنچی! دشمن کے ایجنٹ ہمارے ملکوں میں گھس آئے۔ کسی نے ایک لبادہ پہنا، کسی نے دوسرا! ہم پہچان ہی نہیں سکتے کہ کون کیا ہے! کورونا کے…

Read more

صدر اور وزیراعظم کا استحصال کیوں کیا جا رہا ہے؟

سردار جی ولایت سے ہو کر آئے تو مرچ مصالحہ لگا کر وہاں کی رنگینیوں کی خوب خوب داستانیں سنائیں۔ آخر میں کہا کہ معاملہ وہاں بھی وہی ہے جو یہاں لدھیانہ میں ہے۔ اس حکومت میں بھی وہی کچھ ہو رہا ہے جو پہلے ہوتا آیا ہے طریقِ کوہکن میں بھی وہی حیلے ہیں…

Read more

ہمارے ملک کی انفرادیت قائم رہنی چاہئے!

غیر کسی سیاسی جرم کے یہ جو گھر میں نظر بندی (ہائوس اریسٹ) ہے اس سے دماغ پر اثر پڑ رہا ہے۔ بہت سی باتیں سمجھ میں نہیں آ رہیں! سوچ رہا ہوں‘ ڈاکٹر کے پاس جائوں یا کسی بابے کے پاس جو تعویذ دے اور پڑھ کر کچھ پھونکے۔ یہ محبت تو ہے نہیں…

Read more

گریبان تو ہماری قمیضوں میں بھی لگے ہیں

آفرین ہے ہم مسلمانوں پر اور شاباش ہے ہم پاکستانیوں کو۔ کہ ان حالوں بھی‘ عبرت کا نشان نیو یارک اور لندن ہی کو قرار دے رہے ہیں۔ جیسے ہم خود دودھ سے دُھلے ہیں! وہ پانچ انگلیاں نظر نہیں آ رہیں جو ایک انگلی دوسروں کی طرف کرتے ہوئے‘ اپنی طرف ہوتی ہیں! یہ…

Read more