سانحہ بلدیہ فیکٹری اور حکومت سندھ کا جھوٹا وعدہ

ہمارے یہاں شہید کا لقب تو جلد مل جاتا ہے، مگر شہید اور ان کے اہلہ خانہ کے ساتھ انصاف صرف اور صرف لفظوں میں نظر آتا ہے۔ حقیقت میں تو شہید اس کی بیوہ اور اہل خانہ ہیں جنہیں صرف اتنظار ہی نصیب ہوتا ہے، سانحہ 12 مئی کے 5 سال بعد 2012 میں کراچی میں ایک بار پھر ایک بڑا سانحہ پیش آیا، کراچی بلدیہ کے علاقے میں قائم گارمنٹس کی فیکٹری کو کچھ شر پسند لوگوں نے چند روپوں کا بھتا نہ دینے پر آگ لگا دی، فیکٹری میں لگائی گئی آگ کچھ دیر بعد تو بجھ گئی مگر لے گئی اپنے ساتھ 250 سے زائد معصوم زندگیاں۔

Read more

جھکڑ جو دڑو

دنیا میں چار بڑی تہذیبیں ہیں۔ جس میں میسوپٹیم، مصر چائنا اور سندھو تہذیب شامل ہے۔ ہر تہذیب دریا کے کنارے پر قائم ہوا کرتی ہے۔ اس طرح سندھو تہذیب سندھو دریا کے کنارے پر آباد تھی۔ سندھو تہذیب کو چاروں تہذیبوں میں اعلی مقام حاصل تھا اس لیے سندھو تہذیب کو تہذیبوں کی ماں کہا جاتا ہے۔ جب بھی سندھ تہذیب کا نام زبان پر آتا ہیں تو ہمارے دماغ میں موئن جو دڑو کا تصور چھا جاتا ہے۔ جی بالکل موئن جو دڑو جو موجود دور کے ضلع لاڑکانہ میں شھر سے 25 کلو میٹر کے فاصلے پر موجود وہ شھر سندھ تہذیب کا سب سے بڑا کاروباری مرکز تھا۔

Read more