چاند ریما بہادری

یوں تو ماضی میں ہندی فلم انڈسٹری میں ماں کے کردار میں نروپا رائے اور للیتا پور کو زیادہ شہرت ملی لیکن ایک اور گمنام اداکارہ بھی تھی جس کا کسی کو کوئی خاص علم نہیں ہے۔ میں بات کررہا ہوں کریکٹر رول نبھانے والی ماضی کی اداکارہ چاند ریما بہادری کی، جو کہ معروف اداکارہ ریٹا بہادری کی ماں تھیں۔ چاند ریما بہادری کا تعلق ایک بنگالی پس منظر رکھنے والے خاندان سے تھا۔ ان کے شوہر شری رامیش چندرہ بہادری سنٹرل انڈیا میں بطور کمشنر تعینات تھے۔

ان کا مختف شہروں میں تبادلہ ہوتا رہتا تھا جب ان کا تبادلہ اندور شہر میں ہوا تو وہاں ان کی بیٹی ریٹا بہادری کا جنم ہوا۔ چاند ریما بہادری اور ان کے شوہر سیر و سیاحت کے شوقین تھے چھٹیوں میں دونوں بچوں کے ساتھ گھومنے نکل جایا کرتے تھے۔ ایک بار جب چھٹیوں میں ان کا جانا ممبئی ہوا تو ممبئی انہیں اتنا پسند آیا کہ مستقبل میں انہوں نے ممبئی میں رہنے کا من بنا لیا۔ اور پھر کچھ سال بعد 1957 میں ممبئی منتقل ہوگئے۔

Read more

فحش نگار منٹو اور نئے پاکستان کے وکیل

منٹو نے بہت پہلے کہہ دیا تھا، اگر آپ میرے افسانوں کو برداشت نہیں کر سکتے، تو اس کا مطلب یہ ہے کہ زمانہ ہی نا قابل برداشت ہے۔ آج منٹو کی وفات کی چھہ دہائیوں بعد بھی، پاکستان سے وہ زمانہ نہیں گزرا، جس میں منٹو کو برداشت کیا جا سکے۔

پڑوس میں نندیتا داس نے اردو میں لکھنے والے سعادت حسن منٹو پر فلم بنائی، ہمارے یہاں ہوا یہ کہ پہلے سینسر بورڈ نے نندیتا داس کی فلم ’’منٹو‘‘ کی ریلیز پر پاپندی عائد کر دی، اور اب پنجاب کے وزیر اطلاعات فیاض الحسن چوہان نے الحمرا آرٹس کونسل کی انتظامیہ کو یہ کہتے ہوئے، منٹو فیسٹیول کینسل کرا دیا ہے، کہ جب تک میں وزیر ہوں، تب تک منٹو یا اس جیسے دوسرے فحش نگاروں کے ڈراموں کی نمایش ’الحمرا‘ میں نہیں کرائی جائے گی۔ یہ بحث ایک بار پھر سر اٹھانے لگی ہے، کہ آیا منٹو فحش نگار تھا، یا ایک جراح جو کہ معاشرے کے زخموں کی جراحی کرتا تھا۔ ذہن نشیں رہے، کہ ’منٹو فیسٹیول‘ میں ’اجوکا تھیٹر‘ منٹو کی حیات اور اُن کی کہانیوں پر چار ڈرامے پیش کرنے جا رہا تھا۔

Read more

دلیپ کمار کے عاشقوں کے خیر

آج دلیپ کمار کے جنم دن پر میں اپنے دوست ورنیت کمار تیاگی کی داستان سنانے جا رہا ہوں۔ ورنیت کمار میری طرح دلیپ کمار کا بہت بڑا مداح ہے اور میری طرح وہ بھی دلیپ کمار سے مل چکا ہے۔ ورنیت کی دلیپ کمار سے ملاقات کی داستان بھی بڑی عجیب وغریب ہے۔ اور اس سلسلے میں، دلیپ کمار کی اہلیہ سائرہ بانو کا عمر بھر احسان مند ہوں کیوں کہ انھوں نے اپنے شوہر دلیپ کمار سے مجھے ملنے دیا اور میں اج بھی وہ دن نہیں بھولتا، جس دن ہم دلیپ کمار سے ملنے پشاور سے ممبئی پہنچے تھے اور اس دن ان کی طبیعت بھی نا ساز تھی اور وہ اس وقت سو رہے تھے، لیکن سائرہ بانو نے انھیں ہمارے لیے نیند سے جگا دیا تھا۔ سائرہ بانو سے رابطے میں رہنے کی وجہ سے دلیپ کمار کے بہت سارے مداحوں نے سائرہ بانو سے سفارش کرنے کا کہا لیکن میں نے کبھی کسی کو اتنا سنجیدہ نہیں لیا؛ ہاں! البتہ اپنے دوست ورنیت کے لیے میں نے ضرور سائرہ بانو سے سفارش کی تھی۔

Read more

چاکلیٹی ہیرو، پشاوری ششی کپور

قصہ خوانی بازار سے ملحق گلی ڈھکی نعل بندی میں، ان کا آبائی گھر ’کپور حویلی‘ کے نام سے جانا جاتا ہے۔ یہ حویلی  تین منزلہ ہے اور پچاس کمروں پر مشتمل ہے۔ ششی کپور کی پشاور آمد پر شہر کو اس وقت دُلھن کی طرح سجایا گیا تھا، اور اہل پشاور نے تب اپنے پشاوری ششی کپور کا عظیم الشان استقبال کیا تھا۔ ششی کپور نے اہل پشاور سے، ایک جلسے میں، اپنے مادری زبان ہندکو میں خطاب کیا، جو ان کے اعزاز میں منعقد کیا گیا تھا۔ اس دوران کچھ منچلوں نے ششی کپور سے شرارتاً پوچھا:
’’کیا کرشمہ کپور کو بھی ہندکو زبان آتی ہے‘‘؟

ششی کپور مسکرائے اور بولے، ’’ہم سب اپنے گھر میں اپنی مادری زبان ہندکو ہی بولتے ہیں۔ جو کہ ہم پشاوریوں کی اپنی زبان ہے‘‘۔
اس وقت ششی کپور نے جذباتی ہو کر کہا، ’’میں نے پشاور آ کر دوسرا جنم لے لیا ہے‘‘۔ یہ سنتے ہی پشاوریوں نے ’’ہندو مسلم بھائی بھائی‘‘ کے نعرے لگانا شروع کردیے۔

Read more

کرکٹر سے نغمہ نگار تک کا سفر

جلیس شیروانی کے قلمی سفر کی ابتدا بہت دل چسپ ہے؛ بچپن میں علی گڑھ میں ان کے پڑوس میں مجروح گورکھپوری، آل احمد سرور اور بشیر بدر سے ملنے بہت سارے لوگ آیا کرتے تھے؛ یہ چہل پہل دیکھ کر ان کا بھی من ہوا کہ میری بھی ٹھیک اسی طرح لوگوں میں عزت…

Read more

راج کشور: شعلے کا ہیجڑا یا پڑوسن کا لاہوری؟

ممبئی سے ہمارے دوست دریندر جین نے، راج کشور کے انتقال کے موقع پر بتایا، کہ کچھ سال پہلے جب وہ مجھے ایک بس اسٹینڈ پر کھڑے نظر آئے، تو میں نے انھیں پہچاننے کی کوشش کرتے ہوئے نادانی سے پوچھ لیا۔ ’’آپ شعلے والے راج کشور ہی ہیں ناں‘‘؟ وہ تھوڑی ناراضی کے ساتھ…

Read more

حیدرآباد دکن، کے معروف شاعر مضطر مجاز

حیدرآباد دکن، کے معروف شاعر اور ماہر اقبالیات مضطر مجاز 83 سال کی عمر میں انتقال کرگئے۔ مضطر مجاز 21 سال سے روزنامہ منصف حیدرآباد کے ادبی ایڈیشن کے مدیر رہے۔ انتقال سے دو دن قبل بھی وہ روزنامہ منصف کے دفتر پر موجود تھے اور 18 اکتوبر کا شمارہ بھی ترتیب دیا تھا۔ مضطر…

Read more

زندگی کے خلاف مظاہرے میں شرکت

غریب کی زندگی کالی چھپکلی کے مانند ہوتی ہے، کالی چھپکلی جو مر کر بھی دیوار سے چپکی رہتی ہے، ہمیں ڈراتی ہے۔ ”صاب مجھے جاگیرداروں سے ڈر لگتا ہے۔ اس لیے میں ان کے خلاف مظاہرہ نہیں کرپاتا، اور پھر جاگیردار دیوتا سمان ہوتا ہے، جسے پوجا جاتا ہے۔ دیوتاوں کی طرح اس کے…

Read more

فیمنسٹ فلم میکر کلپنا لاجمی: فن اور زندگی پر ایک نظر

کلپنا لاجمی کا جنم 31 مئی 1954 بمبئی (حال ممبئی) میں ہوا۔ اُن کے والد گوپی لاجمی، نیوی میں کیپٹن تھے، جب کہ ماں للیتا لاجمی مشہور مصورہ، اور ایک اسکول میں بطور آرٹ ٹیچر پڑھایا کرتی تھیں۔ للیتا لاجمی، اداکار گرو دت کی بہن تھیں؛ اس ناتے سے کلپنا لاجمی گرو دت کی بھانجی…

Read more

الہ آباد اب پریاگ راج ہو گیا ہے

بھارت، اترپردیش یعنی یوپی میں ہندو انتہا پسند سیاست دان یوگی ادیتا ناتھ نے الہ آباد کا نام تبدیل کر کے پریاگ راج رکھ دیا ہے۔ اب جگہ جگہ نصب الہ آباد کے سرکاری سائن بورڈز تبدیل کیے جا رہے ہیں۔ ویکیپڈیا پر امیتابھ بچن، نہرو اور اندرا گاندھی وغیرہ کی جائے پیدائش کا نام…

Read more