نوجوانوں کا مسئلہ اور مقتدر اشرافیہ کے مفادات

ہمارے ہاں ’’سیاست‘‘ کا لفظ ایک گالی کی سی حیثیت اختیار کرچکا ہے اور اس کوچہِ خراباں میں نوجوانوں کا قدم دھرنا معیوب سمجھا جاتا ہے۔ تاہم کچھ عرصہ سے پاکستان میں یہ تصور پنپ رہا ہے کہ مقتدر اشرافیہ ملک میں سیاسی سماج کی تشکیل پر یقین رکھتی ہے اور اس مقصد کے لیے…

Read more

لنگر خانے ، بھوک کی سیاست

بظاہر تو حکومت پاکستان کا معصومانہ بیانیہ ایک فلاحی ریاست کا نعرہ ہے مگر یہ صرف عوام کے دل کو بہلانے کے لئے ہی ہے جسے حکومت مصنوعی اقدامات کے ساتھ مذہبی عقائد سے جوڑ کر بڑھا چڑھا کر پیش کرتی ہے۔ احساس سیلانی لنگر خانوں کی سکیم بھی حکومت کے اس طرح کے نمائشی…

Read more

طالبان کی مذاکرات میں نرم لب و لہجہ اختیار کرنے کی یقین دہانی

افغان طالبان ایک بار پھر تاریخ کے ایسے دوراہے پر کھڑے ہیں جہاں انہیں افغانستان میں اپنی عسکری قوت کھوئے بغیر سیاسی حکمت عملی تشکیل دینا ہے۔ ابھی تک تو طالبان کی قیادت کو یہی یقین تھاکہ امن مذاکرات ان کی فتح پر منتج ہوں گے۔ درحقیقت طالبان نے امریکہ سے مذاکرات کا آغاز ہی…

Read more

عزت والے پُروقار خارجہ تعلقات

وقار، عزت نفس اور پسندیدگی کا عام انسانوں کی طرح اقوام کے رویوں پر بھی گہرا اثر ہوتا ہے۔ یہ خواہش توہین کے خوف کی کوکھ سے جنم لیتی ہے۔ وقار ایسا سرمایہ ہے جو اقوام اپنی سیاسی بصیرت، مضبوط معیشت اور جغرافیائی اہمیت کے ذریعے کماتی ہیں۔ دوستوں اور دشمنوں کا تعین بھی اسی…

Read more

کشمیر چیلنج: امریکہ پاکستان کو قربانی کا بکرا بنا سکتا ہے

مقبوضہ کشمیر میں نئے انتفادہ نے سر اٹھایا ہے اکثر ماہرین کا خیال ہے کہ نئی صورتحال اور تنازع کے خطہ کے سیاسی اور جغرافیائی منظر نامے پر گہرے اور دوررس اثرات مرتب ہوں گے۔ البتہ عالمی برادری ابھی تک باریکی بینی سے جائزہ لے رہی ہے اور نئی صورت حال سے نمٹنے کے لئے…

Read more

بدلتا عالمی منظرنامہ اور پاکستان

گزشتہ ہفتے بشکیک میں شنگھائی تعاون تنظیم کے اجلاس کی صورت میں پاکستان اور بھارت نے تناؤ کم کرنے کا ایک اور موقع کھو دیا ہے۔ پاکستان نے بھارت کی طرف سے خیر سگالی کا جب بھی ہاتھ بڑھایا بھارتی حکمرانوں نے منہ پھیر لیا۔ جس سے پاکستان میں اس سوچ کو تقویت مل رہی ہے کہ بھارت کی اب ایک ہی حکمت عملی ہے کہ پاکستان کو ہرصورت اور ہر قیمت پر سفارتی طور پر تنہائی کا شکار کیا جائے۔ تاکہ پاکستان نئے عالمی تناظر میں عالمی اور علاقائی اتحادیوں میں اپنا کردار ادا کرنے کے قابل نہ رہے۔

Read more

سکیورٹی اور معاشی بندوبست

وفاقی کابینہ میں حالیہ تبدیلیوں کی بہت سی توجیحات ہو سکتی ہیں مگر حکومت کی اس پریشانی کی بظاہر بنیادی وجہ معاشی چیلنجز ہی بنے ہیں۔ وفاقی کابینہ میں تبدیلی وزیر اعظم عمران خان کے ایران اور چین کے اہم ترین دوروں سے محض چند روز پہلے عمل میں لائی گئی ہے۔ بظاہر ایران اور…

Read more

درجہ بندی میں پاکستان کا شمار غیر مقبول ترین ممالک میں

ہر فرد میں نرگسیت کی کم یا زیادہ، ایک مقدار ضرور موجود ہوتی ہے لیکن بعض دفعہ یہ اس سطح کو چھونے لگتی ہے جہاں تصویر اور آئینے کا فرق ہی ختم ہونے لگتا ہے اور ہم یہ بھول جاتے ہیں کہ بھلا تصویر بھی کبھی آئینہ ہوتی ہے؟ یہ کوئی پیچیدہ یا بہت ہی فلسفیانہ بیانیہ نہیں ہے۔ اگر آپ میڈیا پر جاری بحثیں دیکھتے ہیں تو آپ کو اندازہ ہوگا کہ بات کیا ہورہی ہے۔ میڈیا، خواہ مرکزی دھارے کا ہو، متوازی یا سماجی، ہر جگہ خبطِ عظمت ہے یا ماتم کدے۔

بحث تصورِ نسواں پر ہو، غیر مسلموں یا ”کم مسلموں“ کے حقوق کی، سماجی اور مذہبی اقدار کی۔ بات صرف مثالوں (تصوراتی تصور، جن کا عکس نہیں بن سکتا) کے گرد گھومتی ہے ہمارے دلائل، انداز گفتگو اور زہر بھرے نشتر ہماری جو تصویر بناتے ہیں وہ ہم ماننے سے انکار کردیتے ہیں اور سمجھتے ہیں کہ قصور کیمرے کا ہے ورنہ آئینے میں تو ہم بہت خوب صورت نظر آتے ہیں۔ یہ عمل بڑے پیمانے پر سیاسی اور علاقائی سطح پر بھی ایسے ہی رونماہورہا ہے۔

Read more

چالو بیانیوں پر قائم حکومتیں

حکومتیں مقبول اپنے اقدامات کی وجہ سے ہوتی ہیں۔ لیکن وہ سیاسی قوتیں جو چالو بیانیوں یا عمومی رائے عامہ کو برانگیختہ کر کے اقتدار میں آتی ہیں ان کے لیے اپنے ہی بچھائے ہوئے جال سے نکلنا مشکل ہوتا ہے اور ان میں ایسے اقدامات لینے کی ہمت نہیں ہوتی جو دورس اثرات کے…

Read more

پاکستان کے سماجی اشاریے کمزور ہیں

سماجی اشارات ایسے  کلیدی متغیرات کی حیثیت اختیار کرچکے ہیں جنہیں سماجی و سیاسی استحکام اور  کسی بھی سماج یا گروہ کی خوشحالی کےجائزے کے لیے استعمال کیاجاتا ہے۔بالخصوص ترقی یافتہ اقوام میں جہاں تعلیمی و تحقیقی کوششوں میں سماجی رجحانات اورمتعلقہ مسائل کی تفہیم کے لیےسماجی اشارات  کا استعمال زیادہ ہوا ہے وہاں کارپوریٹ…

Read more